Alwida alwida aey Hussain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ

جس نے سر تیری چوکھٹ پہ خم کردیا
بندگی کا سلیقہ اسے آگیا
الماں زیر خنجر وہ سجدہ تیرا
رو کے احمدۖ نے جنت سے دی یہ صدا

مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ

جو تیرے نقش پا پر ہوا گامزن
اس کو ہو کیا بھلا خوف زار و رسن
وہ سکھایا ہے مرنے کا تو نے چلن
دے دیا موت کو زیست کا –

مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ

کیوں فرشتوں نے آدم کو سجدہ کیا
روز عاشور عالم سے روشن ہوا
کند خنجر تلے رکھ کے سوکھا گلا
تو نے انسانیت کا بھرم رکھ لیا

مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ

زندگی کو سپرد قضا کردیا
جو فنا تھی اسی کو بقا کردیا
اس طرح حق سے وعدہ وفا کردیا
ہر خوشی کو رضاۓ خدا کردیا

مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ

بک رہا تھا سر عام جب آدمی
حق و باطل کی پہچان بھی مٹ گئ
دے کے قربانی تو نے جواں لال کی
بخش دی دین کو ایک نئ زندگی

مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ

پھر رہا ہے نگاہوں میں منظر ابھی
لاشے کڑیل جواں عالم جاں کنیں
تیری ہمت پہ قربان ابن علی
قلب اکبر سے تو نے سناں کھینچ لی

مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ
مرحبا مرحبا مرحبا اے حسینؑ

الوداع الوداع الوداع اے حسینؑ
الوداع الوداع الوداع اے حسینؑ

یہ صدائيں فغاں اور یہ مجلسیں
ماتم و نوحہ اور غم کی یہ زینتیں
چاہتا ہے یہ دل یونہی قائم رہیں
آہ پھٹتا ہے دل کس طرح یہ کہیں

الوداع الوداع الوداع اے حسینؑ

بخش دے ہوگئ ہو جو کوئ خطا
حق خدمت نہ ہم سے ادا ہوسکا
غم یہی ہے نہ جی بھر کے ماتم کیا
تیری خاطر نہ کیوں اپنا گھر دے دیا

الوداع الوداع الوداع اے حسینؑ

گر جئیے سال بھر پھر کریں گے یہ غم
روئيں گے پھر تیرے غم ميں مل کر باہم
اور اگر مرگۓ تو یہ ہوگا علم
ہاۓ افسوس جی بھر کے روۓ نہ ہم

الوداع الوداع الوداع اے حسینؑ

میرے مہمان ہے آخری یہ سلام
تجھ پہ قربان ہے آخری یہ سلام
شاہ ذیشان ہے آخری یہ سلام
دل ہے ویران ہے آخری یہ سلام

الوداع الوداع الوداع اے حسینؑ

الوداع اے حسین اے حسین الوداع
الوداع اے شہہ مشرقین الوداع
بنت احمدۖ کے اے نور عین الوداع
ہے مجاہد کے لب پر یہ بین الوداع

الوداع الوداع الوداع اے حسینؑ

Alwida alwida alwida aey Hussain

1) Ye sadaye fughan aur ye majlisain
Matamo nowha aur gham ki ye zeenatin
Chahta hay ye dil yuhin qayam rahain
aah phat-ta hay dil kis tarha ye kahain
Alwida alwida alwida aey Hussain

2) Mere mehmaan hay aakhri ye salaam
Tujhpe qurban hay aakhri ye salaam
Shahe zeeshan hay aakhri ye salaam
Dil hay veeran hay aakhri ye salaam
Alwida alwida alwida aey Hussain

3) Baksh dain ho gayi ho jo koi khata
Haqqe khidmat na humse ada ho saka
Gham yehi hay na jee bhar ke matam kiya
Teri khaatir na kyun apna sar de diya
Alwida alwida alwida aey Hussain

4) Gar jiye saal bhar phir karenge ye gham
Royenge phir tere gham may milkar ba-ham
Aur agar mar gaye to ye hoga alam
Haey afsos jee bhar ke roye na hum
Alwida alwida alwida aey Hussain

5) Alwida aey Hussain aey Hussain alwida
Alwida aey Shahe mashraqain alwida
Binte Ahmed kay aey noore ain alwida
Hay mujahid ke lab par ye bain alwida
Alwida alwida alwida aey Hussain