Chorta hoon may watan deen ko bachanay ke liye
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



جب سبطِ مصطفیؑ نے وطن سے سفر کیا
دشتِ بلا بسانے کو ویران گھر کیا
رخ پہلے سوئے مرقدِ خیرالبشر کیا
روضے کو دیکھ دیکھ کرآنکھوں کو تر کیا
        کہتے تھے غم بڑا یہ لئے جائے گا حسینؑ
        کاہے کو اس مزار پہ پھر آئے گا حسینؑ


یہ کہہ کے اترے گھوڑے سے با چشمِ اشکبار
تسلیم کی مزار کو اور یوں کیا پکار
نانا - نانا تمہاری قبرِ منؑور پہ میں نثار
ہونے کو رخصت آیا ہے زہراؑ کا یادگار
          ناچار اِس مزار سے منہ موڑے جاتا ہوں
          اعدا کی دشمنی سے وطن چھوڑے جاتا ہوں	

------------------------------------------------	
چھوڑتا ہوں میں وطن دیں کو بچانے کے لئے
جو کیا وعدہ ازل میں وہ نبھانے کے لئے

کر دیا مجبور مجھ کو کرنے آیا ہوں سلام
جا رہا ہوں کربلا واپس نہ آنے کے لئے
------------------------------------------------

یہ کہہ کے لپٹے قبر سے اور روئے زار زار
محبوبِ کبریا کا لگا کانپنے مزار
آئی صدا یہ روضہِ اقدس سے بار بار
اے جانِ فاطمہ تیری غربت پہ میں نثار
        جب تو چلا تو چین کب آئے گا رسول کو
        تربت میں ظالموں نے ستایا بتولؑ کو

نانا کے اِس کلام سے روئے بہت امام
رخصت کا پھر ادب سے کیا آخری سلام
پھر پھر کے گرد روضے کے اہلِ حرم تمام
یک بار مہملوں میں چڑھے بصد احترام
          خلقت یہ کہتی جاتی تھی ہمراہ ہیں اہلبیت
          جو آئے گا نہ پھر کے کبھی شہنشاہِ اہلبیت	
 
------------------------------------------------
آگیا وہ دن بھی شدّت سے تھا جس کا انتظار
بیٹھی ہے تیار زینب ساتھ جانے کیلئے

آسماں مثلِ کماں دشتِ بلا پر جھک گیا
جب جھکے شہہؑ لاشئہِ اکبرؑ اٹھانے کے لئے	

ہو گئیں نانا مکمل سب میری قربانیاں
آ گیا دنیا میں اصغر تیر کھانے کے لئے

ڈھل گیا عاشور کا دن چھا گئی تنویر رات
آگ لاتے ہیں شقی خیمے جلانے کے لئے
	
سُوکھے لب معصومہ کے دیکھے تو غازیؑ نے کہا
جا رہا ہوں میں سکینہؑ پانی لانے کے لئے

===========================================

چھوڑتا ہوں میں وطن دیں کو بچانے کیلئے
جو کیا وعدہ ازل میں وہ نبھانے کیلئے

آگیا وہ دن بھی شدّت سے تھا جس کا انتظار
بیٹھی ہے تیار زینب ساتھ جانے کیلئے

کر دیا مجبور مجھ کو کرنے آیا ہوں سلام
جا رہا ہوں کربلا واپس نہ آنے کیلئے

ہو گئی نانا مکمل سب میری قربانیاں
آ گیا دنیا میں اصغر  تیر کھانے کیلئے

آسماں مثلِ کماں دشتِ بلا پر جھک گیا
جب جھکے شہہؑ لاشئہِ اکبرؑ اٹھانے کے لئے	

تڑپی ہے زینب ابھی تک خوں روتا ہے سجاد
پھر کوئی اس کو نہ کہہ دے شام جانے کیلئے

کانپتے ہیں سارے انساں موت کی دھلیز پر
دل علی اصغر کا چاہےئے مسکرانے کیلئے

سوکھے لب معصومہ کے دیکھے تو غازی نے کہا
جارہا ہوں میں سکینہ پانی لانے کیلئے

ڈھل گیا عاشور کا دن چھاگئی تنویر رات
آگ لاتے ہیں شقی خیمے جلانے کیلئے

Chorrta hoon may watan deen to bachanay ke liye
Jo kiya wada azal may woh nibhanay ke liye

============================================

[Jab Sibt-e-Mustafa ne watan se safar kiya
Dasht-e-bala basanay ko veeran ghar kiya
Rukh pehlay sooey marqad-e-khairul bashar kiya
Rozay ko dekh dekh kar ankhon ko tar kiya
Kehtay thay gham bara yeh liye jaye ga Hussain
Kaahay ko is mazar pe phir aaye ga Hussain

Yeh keh ke utray ghoray se ba chashm-e-ashk bar
Tasleem ki mazar ko aur yun kiya pukar
Nana tumhari qabr-e-munawwar pe may nisar
Honay ko rukhsat aaya hay Zahra ka yadgar
Na char is mazar se muh moray jata hoon
Aada ki dushmani se watan choray jata hoon]

============================================

Kar diya majboor mujh ko karnay aaya hoon salam
Ja raha hoon Karbala wapas na aanay ke liye

============================================

Yeh keh ke liptay qabr se aur roey zar zar
Mehboob-e-Kibraya ka laga kampnay mazar
Aaye sada yeh roza-e-aqdas se bar bar
Aey jaan-e-Fatima teri ghurbat pe may nisar
Jab tu chala to chain kab aaye Rasool ko
Turbar may zalimoon ne sataya Batool ko

Nana ke is kalam se roey bohat Imam
Rukhsat ka phir adab se kiya aakhri salam
Phir phir ke gird rozay ke ahle haram tamam
Yak bar mehmalon may chahrhay basad ihtaram
Khalqat yeh kehti jati thi hamrah hain Ahlebait
Jo aaye ga na phir ke kabhi Shahanshah-e-Ahlebait
 
Yeh baat kartay jatay thay ro ro ke dil figar
Zahir hua jo dasht-e-museebat may qaza kar
Maqtal may apnay pohonchay jo Shabbir aik bar
Waan chaltay chaltay ruk gaya is Sheh ka rahwar
Kora bhi mara airri bhi mari Imam nay
Par ki na junbhish is fars-e-tez gam nay

Ghoray se tab yeh Sheh ne kaha tujh ko kiya hua
Kiya hay jo chaltay chaltay is ja khara hua
Ghoray ne arz ki may na samjha yeh kia hua
Laikin hoon yaan qaza ke rasn se bandha hua
Uthta na ho ga koi gira is zameen ka
Poocho kisi se naam hay kia is zameen ka

Mola ne poocha naam to ik shaks ne kaha
Hay ik zameen-e-Mariya aur aik Karbala

==============================================

Ho gaye Nana mukammal sab meri qurbaniyaan
Aa gaya dunya may Asghar teer khanay ke liye

Aasman misl-e-kamaa dasht-ebala par jhuk gaya
Jab jhukay Shah lash-e-Akbar uthanay ke liye