Sakina utho meri jaan utho rehai mila chalo ghar chalain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Sakina utho, Meri jaan utho, 
Rehayi mili, Chalo ghar chalain (x2)

Ye karti thi maa, lahad par buka, 
Meri ladli, Chalo ghar chalain
 
1. Yahan sey chalo, Chalain karbala,
   Wahi par tumhey milen gey chacha, 
   Sitam jo huwey batana unhain,
   Dikhana unhain yeh kurta jala,
   Chacha jaan ko, dikhana zara, 
   Ridah khoon bhari, Chalo ghar chalain
 
2. Pidar sey milo, to dil joyi ho,
   Batana unhain, bohot royi ho, 
   Qasam lo agar, tumharey bina,
   Sakina kabhi kaheen soyi ho,
   Lahad jab milay, tujhe baap ki
   To kehna yahi, Chalo ghar chalain

3. Lahad jab mile tuje bhaiyi ki
   Tu kehna usay meri ladli, 
   Rehayi mili hamay qaid sey,
   Hamey ab nahi aziyaat koi, 
   Meray bezubaan utho ghar chalain,
   Shabih e Nabi, Chalo ghar chalain

4. Mazar e Nabi laraz jaye ga, 
   Behan jab teri karay gi buka
   Kahan hain chacha kahan hain padar, 
   Kahan hay bata baradar mera
   Sunanay isay ye rodad e gham, 
   Yehi bebasi chalo ghar chalain

5. Batana unhai sabhi sakhtiyan, 
   Mileen kis qadar tujey ghurkiya
   Hamari ridha luti kis tarha, 
   Chini kis tarha teri baaliya, 
   Bata na unhai bujhi kis tarha
   Teri tashnaghi, Chalo ghar chalain
 
6. Labe alqama tu karna fughaan,
   Teri mauj hay abhi tak rawaan, 
   Meri pyaas par huwe jo fida,
   Chacha ke merey hain baazu kahan, 
   Kahan mashk hay kahan hay alam, 
   Kahan hay jarii, Chalo ghar chalain

7. Sar e qaid gham teri har gharii,
   Labo par bhuka faqat thi yahi, 
   Sitamgar ka dar, Mere dil mei hay, 
   Yahan neendh kya mujey aayeghi
   Buka karti thi yahi raat din, 
   Yahan sey puphi, Chalo ghar chalain

8. Behen ke liye teri ladli, 
   Rahi ghamzada bani mattami
   Yahan nawha khwaan, Agar tum raheen,
   Wahan meheve gham hain Sughra teri,
   Behen se aghar tuje pyaar hay, 
   Fughaan sun meri, Chalo ghar chalain

9. Gaya marqade Sakina pe gar,
   Karega wahan ye Mazhar bayaan,
   Ata umra kar ise daayini, 
   Hain yeh Fatima teri nawha khwaan
   Wahan jaake phir, Kahegha nahi, 
   Mera dil kabhi, Chalo ghar chalain
 
 

سکینہؑ اٹھو میری جاں اٹھو رہائی ملی چلو گھر چلیں
یہ کرتی تھی ماں لحد پر بکا میری لاڈلی چلو گھر چلیں

یہاں سے چلو چلیں کربلا وہیں پر تمہیں ملیں گے چچا
ستم جو ہوۓ بتانا انہيں دکھانا انہیں یہ کُرتا جلا
چچا جان کو دکھانا ذرا ردا خوں بھری
چلو گھر چلیں

پدر سے ملو تو دل جوئی ہو بتانا انہیں بہت روئی ہو
قسم لو اگر تمہارے بنا سکینہؑ کبھی کہیں سوئی ہو
لحد جب ملے تجھے باپ کی تو کہنا یہی
چلو گھر چلیں

لحد جب ملے تجھے بھائی کی تو کہنا اسے میری لاڈلی
رہائی ملی ہمیں قید سے ہمیں اب نہیں اذیت کوئی
میرے بے زباں اٹھو گھر چلیں شبیہہ نبی
چلو گھر چلیں

مزارِ نبیۖ لرز جاۓ گا بہن جب تیری کرے گی بُکا
کہاں ہیں چچا کہاں ہیں پدر کہاں ہیں بتا برادر میرا
سنانے اُسے یہ روداد غم یہی بے بسی
چلو گھر چلیں

بتانا اُنہیں سبھی سختیاں ملی کس قدر تجھے جھڑکیاں
ہماری ردا لٹی کس طرح چھنی کس طرح تیری بالیاں
بتانا انہیں بجھی کس طرح تیری تشنگی
چلو گھر چلیں

لب علقمہ تو کرنا فغاں تیری موج ہے ابھی تک رواں
میری پیاس پر ہوۓ جو فدا چچا کے میرے ہیں بازو کہاں
کہاں مشک ہے کہاں ہے علم کہاں ہے جری
چلو گھر چلیں

سرِ قیدِ غم تیری ہو گھڑی، لبوں پر کھا فقط تھی یہی
ستمگر کا ڈر میرے دل میں ہے، یہاں نیند کیا مجھے آئے گی
بُکا کرتی یہی رات دن' یہاں سے پھپھی
چلو گھر چلیں

نہ اب غم کوئ نہ افتاد ہے وہ زنجیر سے اب آزاد ہے
پھوپھی بھی تیری تیرے ساتھ ہے تیرے ساتھ ہی وہ سجادؑ ہے
میری غم زدہ شبِ غم کٹی سحر ہو چکی
چلو گھر چلیں

بہن کے لئے تیری لاڈلی، رہی غم زدہ رہی ماتمی
یہاں نوحہ خواں اگر تم رہیں، وہاں مہوِغم ہے صغراؑ تیری
بہن سے اگر تجھے پیار ہے، فغاں سُن میری
چلو گھر چلیں

لبوں پر تیرے یہی بات تھی وطن جائيں گے کبھی ہم پھپھی
تجھے شمر کا نہیں خوف اب ستائیں گے نہ تجھے اب شقی
نکل قید سے شروع ہم کریں نئی زندگی
چلو گھر چلیں

غریبوں کا یہ لٹا قافلہ وداع ہوکے پھر وطن جاۓ گا
تجھے پاۓ گی جو صغراؑ تیری تو بیمار کو ملے گی دوا
گلے مل کے پھر بہت روۓ گی وہ بہنا تیری
چلو گھر چلیں

گيا مرقدِ سکینہؑ پہ گر کرے کا وہاں یہ مظہر بیاں
عطا عمر کر اسے دائمی یہ عرفان ہے تیرا نوحہ خواں
وہاں جاکے پھر کہے گا نہیں میرا دل کبھی
چلو گھر چلیں

سکینہؑ اٹھو میری جاں اٹھو رہائ ملی چلو گھر چلیں
سکینہؑ اٹھو میری جاں اٹھو رہائ ملی چلو گھر چلیں