Ronay ke liye kafi hay Sajjad tera naam
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



رُونے کیلئے کافی ہے سجاد تیرا نام
تو شہنشاہِ درد ہے بتلا رہی ہے شام


چلا بِے کسوں کا کارواں
بیمار لوگوں سارباں
ہے سنگ سرِ عریاں
شہ لا فتح کی بیٹیاں
کرب و بلا کے دشت میں برپا ہوا کہرام


مُشکل تھی بڑی وہ گھڑی
دربار میں زینب کھڑی
شبیر کے لبِ پر چھڑی
سجاد نے پہنی کھڑی
دربارِ یزیدی کے لِرزے تھے در و بام


زینب پُکارے بِے وطن
بھائی میرا ہے بِے کفن
کر دے اُسے کوئی دفن
میرے ہاتھوں میں باندھی رسن
ہائے کیسے سُنا ہوگا بیمار نے پیغام


زندان سیاہ پوش ہے
تنہائی آغوش ہے
عابد کہے نہ ہوش ہے
دم ٹوٹا ہے خامُوش ہے
اُمّت نے سکینہ کو دیا مُوت کا اِنعام


مستوروں میں اک مرد ہے
غیرت سے چہرہ زرد ہے
کربل کی زمیں گرد ہے
زینب کا دل میں درد ہے
روتا ہے سر جھکا کے کرتا نہیں کلام


زندان کی سویا خاک پر
عادل لہو پُوشاک پر
چرچے ہوئے اِفلاک پر
سُلطانی لُولاک پر
ہیں جن و ملائک بھی سجاد کے خُدام

Ronay kay liye kaafi hay Sajjad tera naam
Tu shehanshahai dard hay batla rahi hay Shaam

1) Chala Baikason ka karawan
Beemar hai logo saraibaan
Hai sang sarain ooriyan
Hai la fatah ki baitiyon
Kerbobala kai dasht main berpa hay kohraam

2) Mushkil thi bari wo ghari
Derbar main Zainab khari
Shabbir kai lab per chari
Sajjad nay pehni kari
Derbar-e-Yazeedi kai larzai thai dar-o-Baam

3) Zainab pukarai bai watan
Bahi hai mera bai kafan
Dai Dai ussai koi kafan
Merai hathon main bandhi rasan
Hai kaisai suna hoga Beemar nai paigham