Sadaat e Karbala
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Sadaat-e-Karbala
Sadaat-e-Karbala, sadaat-e-Karbala

Chelum ko Karbala may jab aayi wo bibiyan

1) Kuch bibiyan yaaha hai kuch bibiyan wahan
   Karti hui fughan (x2)
   Arey bikhri hui thi maqtale Sarwar may jabaja

2) Ek bibi dashte khooni may jaati thi nehr par 
   Kehti ba chashme tar (x2)
   Abbas dene aaye hoon pursa Sakina ka

3) Ghut ghut ke ladli teri zindaan may mar gaye
   Turbat waheen bani (x2)
   Bhaiya woh qaid se na hui maar ke bhi juda

4) Akbar ki qabr par yoon hui Laila yo nauha gar
   Dekha na saal bhar (x2)
   Aayi hoo qaide Shaam se aab huke mei reha

5) Banu yeh ben karti thi aey mere bezubaan
   Maa dhoonde aab kaaha (x2)
   Batlade hay kaha mera Asghar aey Karbala

6) Qurbaan tere aey mere maa jaye bewatan
   Majboor thi behen (x2)
   Zindaan may mujh se teri amanat hui juda

7) Rote hain kas o aam tera sun ke ye kalaam
   Ey Shah ke ghulaam (x2)
   Nauha tera anees hay maqboole baregah

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

ہر بی بی کررہی تھی کچھ اس طرح سے گریہ

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

کچھ بیبیاں یہاں ہیں کچھ بیبیاں وہاں
کرتی ہوئ فغاں
ارے بکھری ہوئ تھیں مقتل سرور میں جا بجا

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

اک بی بی دشت خونی میں جاتی ہے نہر پر
کہتی با چشمہ تر
ارے عباس دینے آئ ہوں پرسہ سکینہ کا

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

گھٹ گھٹ کے لاڈلی تیری زنداں میں مرگئ
تربت نہیں بنی
ارے بھیا وہ قید سے نہ ہوئ مر کے بھی جدا

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

اکبرؑ کی قبر پر یوں ہوئیں لیلیؑ نوحہ گر
دیکھا نہ سال بھر
ارے آئی ہوں قید شام سے اب ہو کے میں رہا

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

بانوؑ یہ بین کرتی تھیں اے میرے بے زبان
ماں ڈھونڈے اب کہاں
ارے بتلا دے ہے کہاں میرا اصغرؑ اے کربلا

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

قربان تیرے اے میرے ماں جاۓ بے وطن
مجبور تھی بہن
ارے زنداں میں مجھ سے تیری امانت ہوئی جدا

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں

روتے ہيں خاص و عام تیرا سن کے یہ کلام
اے شاہ کے غلام
ارے نوحہ تیرا انیس ہے مقبول بارگاہ

سادات کربلا ‘ سادات کربلا
چہلم کو کربلا میں جب آئيں وہ بیبیاں