Ya Ali Ya Hussain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Ya Ali ya Hussain

Awaze Muhmmad ka asar khatam nah hoga
Thak jaye ga suraj ye safar khatam nah ho ga
Ya Ali ya Hussian

La rayb k Rasool ki donu hai zeyb o zen
Pehlu main ya Ali hai tu gudi main ya Hussain

Luhu kalam ka alm ka sadiq hai ya Ali
Jab tak Kudha ka mulk hai malik hai Ya Hussain

Yeh alm ka dar sabar ka ghar kahtam nah ho ga
Thak jaye ga suraj yeh safar khatam nah ho ga

Yeh sultane isahq hai kidhar milay gaye
Sulmany Abuzar se wafadar milay gay

Ishaq yanha Meesam se jigar daar milay gay
Jeenay k liye marnay pe tayar milay gay

Kat jaye zuban ishq magar khtam nah ho ga
Thak jaye ga suraj yeh safar khatam nah ho ga

Muslim bine Aqeel saferray Hussain hay
Hubay Ali hay dil main musheeray Hussain hain
Wo badshah or yeh waziry Aussain hain assa wazir hai k faqiray Aussain hai

Ta hashar sifarat ka safar khatam nah hoga
Thak jaye ga suraj yeh safar khatam nah ho ga
Ya Ali ya Hussain

Hur bu sahi husain ne aale bana dia
Assa k panjatan ka sawali bana dia

Nadey ali ne iss ko jalali bana dia
Romaly fatima ne misali bana dia

Yeh dar hai atauun ka ye dar khatam nah ho ga
Thak jaye ga suraj yeh safar
Khtam nah ho ga

Aye mery raby janha aye muhammad k kuhda
Yeh tera ishq hi tha jiss ki parwaz judha
Yeh tera ishq hi tha yeh tera ishaq hi tha
Panjtan se mila jo ishq ka tery safar
Ishq hadier main mila
Kabhi meesam kabhi miqdadu abu zar main mila
Kabhi salman k dil main kabhi kambal main mila
Or maqtal main jo deka to bahatar main mila

Laykay ishq hai tu tera jalwa ha suu

Aye maery raby janha
Aye muhammad k kudha ishq tunay b kia
O muhammad tera
Jiss ki chahat k liye yeh janha halk kia
Wo tera ishq hi tha wo tera ishq hi tha

Aye mery raby janha
Aye mery raby janha
Eka jab ishq howa wo sary karbubala tera ashiq hai khra
Kun main doba howa dey chuka laftey jigar dey chukaa noory nazar
Dey chuka sara wo ghar or kanjar k taly uska sajday main hai sar
Nah namzy sena ashaiq ka kalyja assa nukay neyza pe bhi karta hi raha zikr tera

Ya Ali ya Hussain

Ek zulfqar ghaq main do sath se chali
Dastay hussain panjaaye mushkil kusha ali
Yeh mustafa ki jan wo allah ka wali
Dono ka martaba bhi do alam pe hai jali
Dona ka istmal se sajda adda howa
Hadier se iftata howi ya hatema howa

Ya Ali ya Hussain

Jasi wo zulfqar the wessa tha zuljah
Bachpan se sath sath yeh rehta tha zuljlaha
Be mislu be nazir tha ala tha zuljalha
Kunkar nah ho rassol ne pala tha zuljalaha

Pehla sawar to nabi e dardegaar hai
Or dosra yeh dosh nabi ka sawar hai

Ya Ali ya Hussain

Chitay ki jast sher ki chitmal hiran ki ankh
Chalta tha dekh dekh k shahay zaman ki ankh
Parti thi yun harif pe uss shar sikan ki ankh
Larti hi jasi jang main sham sher zan ki ankh

Tegh ayi jispe uska b war uss pe chal gaya
Wo sar gira gaye tu yeh lasha kuchal gaya

Ya Ali ya Hussain

Kehta tha zulfqar se ab mera jang dekh
Chal mery sath sath zara mera rang dekh
Iss piyass main larai ka mera bhi dang dekh
Rahy hayat kitnu pe karta hoon tang dekh

Mana tu zulfqar hai marhab shikar hai
Lakin yeh dekh kon yeh mujpar sawar hai

Ya Ali ya Hussain

Simta jima urha idhar ayya udhar gaya
Chamka jira jamal dekya thar gaya
Tiruu se ur k banciyuun main behatar gaya
Barham kia saffun ko sarru se guzar gaya
Ayaa jo zad main iss ki ajal agyee ussy
Ek kamp pari jispe zammen kha gaye ussy

Ya Ali ya Hussain

اللہ اللہ اللہ
اللہ ہی اللہ ‘اللہ ہی اللہ
اللہ ہی اللہ ‘اللہ ہی اللہ
تو ہی تو اللہ
اللہ
تو ہی تو اللہ
تو ہی تو اللہ

جو محمدۖ کا وفادار ہے
اللہ اس کا
کربلا اس کی
نجف اس کا
مدینہ اس کا
زندگی ہے تو بس
علیؑ کی طرح
موت آۓ تو
یاحسینؑ حسینؑ

یاحسینؑ یاحسینؑ یاحسینؑ یاحسینؑ

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

آواز محمدۖ کا اثر ختم نہ ہوگا
تھک جاۓ گا سورج یہ سفر ختم نہ ہوگا

لاریب کہ رسولۖ کی دونوں ہیں زیب و زین
پہلو میں یاعلیؑ ہیں تو گودی میں یاحسینؑ
لوح و قلم کا علم کا ساحل ہے یاعلیؑ
جب جب خدا کا ملک ہے مالک ہے یاحسینؑ
یہ علم کا در صبر کا گھر ختم نہ ہوگا
تھک جاۓ گا سورج یہ سفر ختم نہ ہوگا

یہ سلطنت عشق ہے خود دار ملیں گے
سلمان و ابوذر سے وفادار ملیں گے
عاشق یہاں میثم سے جگر دار ملیں گے
جینے کے لیے مرنے پہ تیار ملیں گے
کٹ جاۓ زباں عشق مگر ختم نہ ہوگا
تھک جاۓ گا سورج یہ سفر ختم نہ ہوگا

مسلم بن عقیلؑ سفیر حسینؑ ہے
حب علیؑ ہے دل میں مشیر حسینؑ ہے
وہ بادشاہ اور یہ وزیر حسینؑ ہے
ایسا وزیر ہے کہ فقیر حسینؑ ہے
تاحشر سفارت کا سفر ختم نہ ہوگا
تھک جاۓ گا سورج یہ سفر ختم نہ ہوگا

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

حرؑ کو سخی حسینؑ نے عالی بنادیا
ایسا کہ پنجتنؑ کا سوالی بنادیا
نادعلیؑ نے اس کو جلالی بنادیا
رومال فاطمہؑ نے مثالی بنادیا
یہ در ہے عطاؤں کا یہ در ختم نہ ہوگا
تھک جاۓ گا سورج یہ سفر ختم نہ ہوگا

اے میرے رب جہاں
اے محمدۖ کے خدا
یہ تیرا عشق ہی تھا
جس کی پرواز جدا

پنجتنؑ سے جو ملا
عشق کا تیرے سفر
عشق حیدر میں ملا
کبھی میثم کبھی مقداد و ابوذر میں ملا
کبھی سلمان کے دل میں کبھی قنبر ميں ملا
اور مقتل میں جو دیکھا تو بہتّر میں ملا
لائق عشق ہے تو تیرا جلوہ ہر سو

اے میرے رب جہاں
اے محمدۖ کے خدا
عشق تو نے بھی کیا
تو محمدۖ تیرا
جس کی چاہت کے لیے
یہ جہاں خلق کیا
وہ تیرا عشق ہی تھا
وہ تیرا عشق ہی تھا
وہ تیرا عشق ہی تھا

اے میرے رب جہاں
اک عجب عشق ہوا
وہ سر کرب و بلا
تیرا عاشق ہے کھڑا
خون میں ڈوبا ہوا
دے چکا لخت جگر
دے چکا نور نظر
دے چکا سارا وہ گھر
اور خنجر کے تلے
اس کا سجدے میں سر
نہ نماز ایسی نا نہ کلیجہ ایسا
نوک نیزہ پہ بھی کرتا ہی رہا ذکر تیرا

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

ایک ذوالفقار خلق میں دو ہاتھ سے چلی
دست حسینؑ و پنجئہ مشکل کشا علیؑ
یہ مصطفیۖ کی جان وہ اللہ کا ولی
دونوں کا مرتبہ بھی دو عالم پہ ہے جلی
دونوں کا اس کمال سے سجدہ ادا ہوا
حیدر سے ابتداء ہوئی یاں خاتمہ ہوا

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

ہے وقت عصر مرضی پروردگار ہے
اب پشت ذوالجناح پہ مولا سوار ہے
پہلو میں خون روتی ہوئ ذوالفقار ہے
ہمراہ ذوالجناح بھی بہت دلفگار ہے
قربان ذوالجناح پہ اور ذوالفقار پر
چلتے تھے دونوں مرضی پروردگار پر

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

جیسی وہ ذوالفقار تھی ویسا تھا ذوالجناح
بچپن سے ساتھ ساتھ یہ رہتا تھا ذوالجناح
بے مثل و بے نظیر تھا اعلیؑ تھا ذوالجناح
کیوں کر نہ ہو رسولۖ نے پالا تھا ذوالجناح
پہلا سوار وہ نبیۖ کردگار ہے
اور دوسرا یہ دوش نبیۖ کا سوار ہے

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

چیتے کی جست شیر کی چتون ہرن کی آنکھ
چلتا تھا دیکھ دیکھ کے شاہ زمان کی آنکھ
پڑھتی تھی یوں ہر اک پہ اس سخت شکن کی آنکھ
لڑتی ہو جیسے جنگ میں شمشیر زن کی آنکھ
تیغ آئ جس پہ اس کا بھی وار اس پہ چل گیا
وہ سر گرا گئ تو یہ لاشہ کچل گیا

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

کہتا تھا ذوالفقار سے اب میری جنگ دیکھ
چل میرے ساتھ ساتھ ذرا میرا رنگ دیکھ
اس پیاس میں لڑائ کا میرا بھی ڈھنگ دیکھ
راہ حیات کتنوں پہ کرتا ہوں تنگ دیکھ
مانا تو ذوالفقار ہے مرحب شکار ہے
لیکن یہ دیکھ کون یہ مجھ پر سوار ہے

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

سمٹا جما اڑا ادھر آیا ادھر گیا
چمکا پھرا جمال دکھایا ٹہر گیا
تیروں سے اڑ کے پرچھیوں میں بے خطر گیا
درہم کیا صفوں کو سروں سے ادھر گیا
آیا جو زد میں اس کی اجل آگئ اسے
اک کانپ پڑی جس پہ زمین کھا گئ اسے

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

اللہ رے لڑا ئ میں شوکت حسینؑ کی
کیجیے وہ ذوالجناح میں سرعت حسینؑ کی
قدرت بغور کرتی تھی صورت حسینؑ کی
قہر خدا سے کم نہ تھی ہیبت حسینؑ کی
بولے علیؑ حسینؑ ہو اب بھی حواس میں
ایسی تو جنگ ہم نہ لڑے بھوک و پیاس میں

یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ
یاعلیؑ یاحسینؑ یا علیؑ یا حسینؑ

آئ صداۓ غیب کہ بس بس حسینؑ بس
دم لے ہوا میں جنگ نہ بس کر حسینؑ بس
گرمی سے ہانپتا ہے فرس اے حسینؑ بس
وقت نماز عصر ہے بس بس حسینؑ بس

حسینؑ یاحسینؑ ‘حسینؑ یاحسینؑ ‘حسینؑ یاحسینؑ

یہ سنتے تھے حضرت جو لگا پشت پہ بھالا
قرموس پہ تھّرا کے گرے حضرت والا
جبرئیل نے قدموں سے رکابوں کو نکالا
اور ہاتھوں کو گردن میں یداللہ نے ڈالا
دیکھا جو ذوالجناح نے غش کھاکے زین پر
پس بیٹھ گیا ٹیک کے گھٹنوں کو زمین پر
قرآن رحل زیں سے سر فرش گر پڑا
دیوار کعبہ بیٹھ گئ عرش گر پڑا

یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ

چلائیں فاطمہ میرا بچہ ہے بے گناہ
اے عرض نینوا میرا بچہ ہے بے گناہ
اے نہر علقمہ میرا بچہ ہے بے گناہ
اے ذوالفقار تو ہی بچا لے حسینؑ کو
اے ذوالجناح تجھ سے میں لوں گی حسینؑ کو

یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ

ڈوبا لہو میں لوٹ کہ آیا ہے ذوالجناح
سمجھی سکینہ بابا کو لایا ہے ذوالجناح
سر خاک پر پٹخ کے پکارا وہ رہوار
سیدانیوں بچھڑ گیا مجھ سے میرا سوار
جلدی اتار لو یہ تبرک یہ ذوالفقار
ارے کٹتا ہے واں گلو شہنشاہ نامدار
زہرا قریب لاش پسر خاک اڑاتی ہیں
ارے خیموں میں جاؤں لوٹنے کو فوج آتی ہے

یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ
یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ’ یاحسینؑ