Zainab ne kaha baap ke qadmon se lipat kar, ab aaye ho baba
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

وہ کربلا وہ شام غریباں وہ تیرگی
وہ زینبؑ حزیں وہ حفاظت خیام کی

آیا وہ ایک سوار قریب خیام شاہؑ
بیٹی علیؑ کی غیض میں سوۓ فرس بڑھی

الٹی نقاب چہرے سے اپنے سوار نے
پیش نگاہ زینبِؑ مظلوم تھے علیؑ

ہر چند صابرا تھی بہت بنت فاطمہ
بے ساختہ زبان پر یہ فریاد آگئ

زینبؑ نے کہا باپ کے قدموں سے لپٹ کر
اب آے ہو بابا
جب لٹ گیا پردیس میں اماں کا بھرا گھر
ہاۓ - جب لٹ گیا پردیس میں اماں کا بھرا گھر
اب آۓ ہو بابا

بابا اگر آنا ہی تھا خالق کی رضا سے
اس وقت نہ آۓ
جب خاک پر دم توڑ رہا تھا میرا اکبرؑ
ہاۓ  - جب خاک پر دم توڑ رہا تھا میرا اکبرؑ
اب آۓ ہو بابا

کٹ کٹ کے گرے نہر پہ جب بازو عباسؑ
تو کوئ نہ تھا پاس
اس وقت صدا آپ کو دیتا تھا دلاور
ہاۓ  - اس وقت صدا آپ کو دیتا تھا دلاور
اب آۓ ہو بابا

جب فرش زمین بامِ فلک لرزہ بجا تھا
اس وقت کہاں تھے
جب باپ کے چلو میں تھا خون علی اصغرؑ
ہاۓ  - جب باپ کے چلو میں تھا خون علی اصغرؑ
اب آۓ ہو بابا

جب بھائ کا سر کٹتا تھا میں دیکھ رہی تھی
حضرت کو صدا دی
سر کھولے ہوۓ روتی تھی میں خیمے کے در پر
ہاۓ  - سر کھولے ہوۓ روتی تھی میں خیمے کے در پر
اب آۓ ہو بابا

جب لوگ بچا لے گۓ لاشے شہداء کے
حق اپنا جتا کے
بس ایک تن شبیرؑ کا پامالی کی زد پر
ہاۓ  - بس ایک تن شبیرؑ کا پامالی کی زد پر
اب آۓ ہو بابا

جب بالی سکینہؑ کے گہر چھینے گۓ تھے
لگتے تھے طمانچے
حسرت سے مجھے دیکھتی تھی بانوئے مضطر
ہاۓ  - حسرت سے مجھے دیکھتی تھی بانوئے مضطر
اب آۓ ہو بابا

جب شام کے قزاق ہمیں لوٹ رہے تھے
خیموں کو جلا کے
آپ آگۓ ہوتے تو نہ چھنتی میری چادر
ہاۓ  - آپ آگۓ ہوتے تو نہ چھنتی میری چادر
اب آۓ ہو بابا

کیا آپ نے فردوس سے یہ دیکھا نہ ہوگا
کیا حشر بپا تھا
جب پشت سے بیمار کی کھینچا گيا بستر
ہاۓ  - جب پشت سے بیمار کی کھینچا گيا بستر
اب آۓ ہو بابا

ایک رات کے مہمان ہیں پھر قید سلاسل
اب آنے سے حاصل
بازار میں ہم صبح کو جائيں گے کھلے سر
ہاۓ  - بازار میں ہم صبح کو جائيں گے کھلے سر
اب آۓ ہو بابا

شاہد رخ حیدر پر بکھر جاتے تھے آنسو
جب کھول کے گیسو
چلاتی تھیں زینبؑ میرے بابا میری چادر
ہا‌ۓ  - چلاتی تھیں زینبؑ میرے بابا میری چادر
اب آۓ ہو بابا

جب لٹ گيا پردیس ميں اماں کا بھرا گھر
ہاۓ  - جب لٹ گيا پردیس ميں اماں کا بھرا گھر
اب آۓ ہو بابا

Ab aaye ho baba
Zainab ne kaha baap Ke khadmon say lipat kar
Ab aaye ho baba

Jab lut gaya pardes mein amma ka bhara ghar
Ab aaye ho baba
Zainab ne kaha baap ke khadmon say lipat kar
Ab Aaye Ho Baba
 
1) Baba agar aana hi tha khaliq ki reza say, us waqt na aaye
   Jab khaak pe dam torh raha tha mera Akbar
   Ab aaye ho baba.
 
2) Jab farsh-e-zameen baam-e-falak larza fishaan thay, Us waqt kaha thay 
   Jab baap ke chullu mein tha khoon-e-Ali Asghar
   Ab aaye ho baba.
 
3) Jab bhai ka saar kaat ta tha may dekh rahi thi, Hazrath ko sada di 
   Sar kholay hue roti thi mai khaimein ke dar par
   Ab aaye ho baba.
 
4) Jab log bacha le gaye lashay shohda kay, Haq apna jata kay
   Bas ek tan-e-Shabbir tha pamal ki zad par
   Ab aaye ho baba.
 
5) Jab Shaam ke qazaaq hamein loot rahay thay, Khaimon ko jala kay 
   Ab aagaye hotein to na chin ti meri chadar
   Ab aaye ho baba.
 
6) Kya aap nay firdous say ye dekha na hoga, Kya hashr bapa tha
   Jab pusht say beemar ki khaincha gaya bistar
   Ab aaye ho baba.
 
7) Shahid rukhe Haider pe bhi bikhar jaatay thay aason, Jab khol ke gesun 
   Chillati thi Zainab mere baba meri chadar
   Ab aaye ho baba.