Ashoor ka suraj jalta hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



1) Ashoor ka suraj jalta hay 
   har khaak ka zarra jalta hay
   jalti hai zameene karbobala
   ya arshe moalla jalta hay

2) ansar ke khaime jalte hain
   Shabbir ka khaima jalta hay
   Islam ki dunya jalti hay
   Kaabe ka musalla jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

3) Quran ke parhne walon nay
   Quran ko jala kar khaak kiya
   Yaseen ka sura jalta hay
   Quran ka paara jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

4) Itrat pe nabi ke jor-o-sitam
   kya khoob musalmano ne kiya
   Zainab ki rida kya jalti hay
   slam ka parda jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

5) naiza jo jaga di hay dil may
   aisay ke jigar ka kya kehna
   Akbar ko sukoone qalb mila
   Laila ka kaleja jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

6) ghar baar jalaya ummat nay
   kya khoob ye ajre risalat hay
   jalti hay Mohamed ki masnad
   baysheer ka jhula jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

7) rakhi jo fidak may chingari
   ye sholay usi ke nikaltay hain
   kya aag baghawat ki phaili
   ran Karbobala ka jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

8) baysheer ki tashna dahani nay
   ik aag laga di pani may
   Asghar ke tabassum par ab tak
   darya ka kinara jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

9) khaimay may Sakina dekhti hay
   jab yaas se khaali sagar ko
   saahil pe tarapta hay laasha
   saqqa ka kaleja jalta hay
   Ashoor ka suraj jalta hay

10) sad-haif ke misle range hina
    Kubra ka suhaag ab jal hi gaya
    is dashte bala may aey Mirza
    kya kya may kahoon kya jalta hay
    Ashoor ka suraj jalta hay

عاشور کا سورج جلتا ہے
ہر خاک کا ذرا جلتا ہے
جلتی ہے زمینِ کرب و بلا
یا عرشِ معلیٰ جلتا ہے

انصار کے خیمے جلتے ہیں
شبیرؑ کا خیمہ جلتا ہے
اسلام کی دنیا جلتی ہے
کعبے کا مصلےٰ جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

قرآن کے پڑھنے والوں نے
قرآں کو جلا کر خاک کیا
یٰس کا سورہ جلتا ہے
قرآن کا پارہ جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

عترت پہ نبیؐ کے جور و ستم
کیا خوب مسلمانوں نے کیا
زینبؑ کی ردا کیا جلتی ہے
اسلام کا پردہ جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

نیزے جو جگہ دی ہے دل میں
ایسے کہ جگر کا کیا کہنا
اکبرؑ کو سکونِ قلب ملا
لیلیٰؑ کا کلیجہ جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

گھر بار جلایا اُمت نے
کیا خوب یہ اجرِ رسالت ہے
جلتی ہے محمدؐ کی مسند
بے شیر کا جھولا جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

رکھی جو فدک میں چنگاری
یہ شعلے اُسی کے نکلتے ہیں
کیا آگ بغاوت کی پھیلی
رن کرب و بلا کا جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

بے شیر کی تشنہ دہانی نے
اک آگ لگا دی پانی میں
اصغرؑ کے تبسم پر اب تک
دریا کا کنارا جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

خیمے میں سکینہؑ دیکھتی ہے
جب یاس سے خالی ساغر کو
ساحل پہ تڑپتا ہے لاشہ
سقّہ کا کلیجہ جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔۔

صد ہیف کے مثلِ رنگِ حنا
کبریٰ کا سہاگ اب جل ہی گیا
اس دشتِ بلا میں اے مرزا
کیا کیا میں کہوں کیا جلتا ہے
عاشور کا سورج ۔۔