Alwida ahle haram alwida alwida
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

1) Asr ka waqt qareeb aagaya lo jaate hain ham
alwida ahle harram alwida alwida
jane phir laut ke aayain ke na aayain ye qadam
alwida ahle haram alwida alwida

2) meray nana ki abaa aur amama lao
wo jo kurta meri amma ne siya tha lao
aur Zainab ko bula lao ke ab waqt hay kam
alwida ahle haram alwida alwida

3) bibiyo dekh lo jee bharke chalo rooye Hussain
gale Zainab se juda hoti khushbuye Aussain
jaane phir ho ke na ho lamha ye ziarat ka baham
alwida ahle haram alwida alwida

4) bole sheh ghar ki nigehban meri Zainab tum ho
may to jaata hoon magar meri jagah ab tum ho
janiyo isko ghanimat hay jo Sajjad ka dam
alwida ahle haram alwida alwida

5) bibiyan halqa kiye theen tane mazloom ke gird
baal khole huay aansu liye masoom ke gird
noha aey hazrate Zainab pe tha Sheh ka matam
alwida ahle haram alwida alwida

6) haat uthate hi nahi zulm se ye baniye shar
legaye kaat ke ye auno mohamed ke bhi sar
ab mere sar ke talabgaar hain ye ahle sitam
alwida ahle haram alwida alwida

7) ghash se abid ko uthakar kaha beta hoshiyar
lo hui sham hui sham ki manzil tayyar
tum ho ab aur hay be-pardagiye ahle harram
alwida ahle haram alwida alwida

8) hoke ruqsat hue Shabbir jo ghoray pa sawaar
ayrh dete thay to barhta na tha aage rahwaar
koi bachi thi jo rahwaar ke thaame thi khadam
alwida ahle haram alwida alwida

9) utre ghoray se Sakina ko uthaya ek baar
jhuk ke rukhsaar ko seene se lagaya ek baar
bole phir se ke pani ke liye jaate hain hum
alwida ahle haram alwida alwida

10) karke seenay se Sakina ko juda Sheh ne Naved
jao khaime may Sakina se kaha Sheh ne Naved
phir barhe suye faraz Shah ba-larzida qadam
alwida ahle haram alwida alwida

عصر کا وقت قریب آگیالو جاتے ہیں ہم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع
جانے پھر لوٹ کے آئے کہ نہ آئے یہ قدم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

میرے نانا کی عبا اور عمامہ لائو
وہ جو کُرتا میری اماں نے سیا تھا لائو
اور زینب کو بُلا لائو کہ اب وقت ہے کم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

بی بیو دیکھ لو جی بھر کے چلو روئے حسین
گُلِ زینب سے جُدا ہوتی ہے خوشبوئے حسین
جانے پھر ہو کہ نہ ہو لمحہ یہ زیارت کا بہم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

بولے شہہ گھرکی نگہباں میری زینب تم ہو
میں تو جاتا ہوں مگر میری جگہ اب تم ہو
جانیو اس کو غنیمت ہے جو سجاد کا دم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

بیبیاں حلقہ کیئے تھیں تنِ مظلوم کے گرد
بال کھولے ہوئے آنسو لیے معصوم کے گرد
نوحہِ حضرتِ زینب پہ تھا شہہ کا ماتم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

ہاتھ اُٹھاتے ہی نہیں ظُلم سے یہ بانیئے شر
لے گئے کاٹ کے یہ عون و محمد کے بھی سر
اب میرے سر کے طلبگار ہیں یہ اہلِ ستم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

غش سے عابد کو اُٹھا کر کہا بیٹا ہوشیار
لو ہوئی شام ہوئی شام کی منزل تیار
تم ہو اب اور ہے بے پردگیِ اہلِ حرم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

ہو کے رُخصت ہوئے شبیر جو گھوڑے پہ سوار
ایڑھ دیتے تھے جو بڑھتا نہ تھا آگے راہوار
کوئی بچی تھی جو راہوار کے تھامے تھی قدم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

اُترے گھوڑے سے سکینہ کو اُٹھایا اک بار
جھُک کے رُخسار کو سینے سے لگایا اک بار
بولے پھر سے کے پانی کے لیے جاتے ہیں ہم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع

کر کے سینے سے سکینہ کو جُدا شہہ نے نوید
جائو خیمے میں سکینہ سے کہا شہہ نے نوید
پھر بڑھے سوئے فراز شاہ با لرزیدہ قدم
الوداع اہلِ حرم الوداع الوداع