Afsos nabi zadiyoon ka Shaam may jana , Sajjad se poocho
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Afsoos nabi zadiyoon ka Shaam may jana - Sajjad se poocho
Sar nangay woh maa behnoon ka darbar may jana - Sajjad se poocho

1. Chupti thi nabi zadi nabi zadi ke peechay - kis sharm-o-haya say
Aur Shimr ka un bibiyoon kay naam batana - Sajjad se poocho

2. Baithay huay darbar may sab chootay baray thay - sadaat kharay thay
Sar tasht may rakkha hua Zainab ko dikhana - Sajjad se poocho

3. Jab dukhtaray Shabbir nay zindaan may qaza ki - aafat ki ghari thi
woh nanhi si mayyat bandhay hathon se uthana - Sajjad se poocho

4. Jab ghusl Sakina ko wahan day chuki ghassal - tha sab ka boora haal
Us nanhi si mayyat par nishaan rassi ke paana - Sajjad se poocho

5. Thi aik rasan bara aseeron kay galay thay - sab chupke kharay thay
Rassi may bandhay Zainb-e-Kulsoom ka aana - Sajjad se poocho

6. Sar Hazrat-e-Muslim ka latakta tha jahan par - waan sheh ka ruka sar
Dur Abid-e-beemar ko us waqt lagana - Sajjad se poocho

7. Jab bali Sakina ko ghusl datay thay Sajjad - faryad hay faryad
Us nanhi si gardan pe nishaan rassi ke paana - Sajjad se poocho

8. Ghash kha ke giray Syed-e-Sajjad zameen par - barpa hua mehshar
Naizay ki ani se unhain us waqt uthana - Sajjad se poocho

9. Jab qaid-e-sitamgar se chutey Aal-e-payambar ek shor tha ghar-ghar
Aththara azeezon ki lahad aakey banana Sajjad se pucho

10. Akbar jo girey ghodey se kahney lagey Shabbeer, beta teri taqdeer
Ek zalim-e-be deen ka yun naiza lagana Sajjad se pucho

افسوس نبی زادیوں کا شام میں جانا
سجادؑ سے پوچھو
سر کھولے وہ ماں بہنوں کا دربار میں جانا
سجادؑ سے پوچھو

چھپتی تھی نبی زادی نبی زادی کے پیچھے
کس شرم و حیا سے
اور شمر کا ان بیبیوں کے نام بتانا
سجادؑ سے پوچھو

جب دختر شبیرؑ نے زنداں میں قضا کی
آفت کی گھڑی تھی
وہ ننھی سی میت بندھے ہاتھوں سے اٹھانا
سجادؑ سے پوچھو

جب غسل سکینہؑ کو وہاں دے چکی غسال
تھا سب کا برا حال
اُس ننھی سی میت پہ نشاں رسی کے پانا
سجادؑ سے پوچھو

بیٹھے ہوئے دربار میں سب چھوٹے بڑے تھے
سادات کھڑے تھا
سر طشت میں رکھا ہوا زینبؑ کو دکھانا
سجادؑ سے پوچھو

تھی ایک رسن بارہ اسیروں کے گلے تھے
سب چپکے کھڑے تھے
رسی میں بندھے زینبؑ و کلثومؑ کا آنا
سجادؑ سے پوچھو

سر حضرت مسلمؑ کا لٹکتا تھا جہاں پر
واں شہہ کا رکا سر
دُر سید سجادؑ کو اسوقت لگانا
سجادؑ سے پوچھو

جب بالی سکینہؑ کو غسل دیتے تھے سجادؑ
فریاد ہے فریاد
اس ننھی سی گردن پہ نشاں رسی کے پانا
سجادؑ سے پوچھو

غش کھا کے گرے سید سجادؑ زمیں پر
برپا ہوا محشر
نیزے کی انی سے انہیں اُسوقت اٹھانا
سجادؑ سے پوچھو