Sajjad may Zainab hun meray sar pay rida koi nae bazaare jafa
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Sajjad main Zainab hun, meray sar pay rida koi nae, bazaare jafa
 
Majma hay Kufiyon ka, meray chalnay ki ja koi nae, bazaare jafa
  
1) Sajjad meray sar say adaa nay cheeni chadaar
   Balvay main nabi zaadi phirwaye gaye dar dar
   Mil jaye rida mujh ko, aur meri dua koi nae, bazaare jafa
 
2) Sajjad chalun kaisay lakhoon hain tamashai
   Yaad ata hai reh reh kay Abbas mera bhai
   Faryaad karun kis say, ab teray siwa koi nae, bazaare jafa
 
3) Sajyad meray dil ko yeh dard satata hay
   Sar Ghazi ka naizay say jab khaak pay aata hay
   Sar mera khula dekhay, gham is say bara koyi nae, bazaare jafa
 
4) Maloom hay ada ko Ghazi ki behan hoon may
   Bay Dast hay woh Ghazi paband-e-rasan hoon may
   Yaad ayi wafa us ki, jab paas raha koyi nae, bazaare jafa
 
5) Majboor hun baikas hoon main ro bhi nahi sakti
   Durron ki aziyat say main so bhi nahi sakti
   Is darde museebat may, hamdard mera koyi nae, bazaare jafa
 
6) Sajjad teri halat dekhi nahi jaati hay
   Bay parda mujhay dekhay yeh baat rulati hay 
   Sajjad teri tarha, kanton pai chala koyi nae, bazaare jafa
 
7) Moat aayi gi zindaan main meri baali Sakina ko
   Kiya ja kay bataoon gi beemare Medina ko
   Gham dil pay uthanay ko, ab baaqi bacha koyi nae, bazaare jafa
 
8) Jataa hay su-e-zindaan ab kunba Muhammad ka
   Raasi main bandhay qaidi kantoon say bhara rasta
   Ummat nay sitam dhaye, kismat say gila koyi nae, bazaare jafa
 
9) Bazar-e-sitam mein tha Zainab(s.a.) ka ajab aalam,
   Mazhar mein likhoon kaisey zalim nay kaha jis dam,
   Hai kaun tera waris Zainab(s.a.) nay kaha koi nahi, bazaare jafa

سجادؑ میں زینبؑ ہوں میرے سر پہ ردا کوئی نئیں - بازار جفا     
مجمع ہے کوفیوں کا اورچلنے کی جا کوئی نئیں - بازار جفا 

سجادؑ میرے سر سے نو بار چھنی چادر
بلوے میں نبی زادی پھروائی گئی دردر
مل جائے ردا مجھکو اور میری دعا کوئی نئیں -  بازار جفا 

سجادؑ میرے دل کو یہ درد ستاتا ہے
سر غازیؑ کا نیزے سے جب خاک پہ آتا ہے
سر میرا کھلا دیکھے  غم اس سے بڑا کوئی نئیں - بازار جفا 

سجادؑ چلوں کیسے لاکھوں ہیں تماشائی
یاد آتا ہے رہ رہ کے    عباسؑ میرا بھائی
فریاد کروں تجھ سے    اب تیرے سوا کوئی نئیں - بازار جفا 

معلوم ہے اعدا کو غازیؑ کی بہن ہوں میں
بے دست وہ غازیؑ ہے  پابندِ رسن ہوں میں
یاد آئی وفا اس کی جب پاس رہا کوئی نئیں - بازار جفا 

سجادؑ تیری حالت دیکھی نہیں جاتی ہے
بے پردہ مجھے دیکھے  یہ بات رلاتی یے
سجادؑ تیری طرح   کانٹوں پہ چلا کوئی نئیں - بازار جفا 

موت آئے گی زنداں میں  میری بالی سکینہؑ کو
کیا جاکے بتاؤں   بیمار مدینہ کو
غم دل پہ اٹھانے کو اب باقی بچا کوئی نئیں - بازار جفا 

جاتا ہے سوئے زنداں  اب کنبہ محمدؐ کا
مظلوم تھا وہ قیدی  کانٹوں سے بھرا رستہ
امت نے ستم ڈھائےقسمت سے گلا کوئی نئیں - بازار جفا 

بازار ستم میں تھا   زینبؑ کا عجب عالم
مظہر میں لکھوں کیسے  ظالم نے کہا جس دم
ہے کون تیرا وارث زینبؑ نے کہا کوئی نئیں - بازار جفا