Barriyan pehne huay qafila salaar chala haey beemar chala
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Bariyan pehne huay qafla salaar chala haey beemar chala

Aarahi hay dar-o-deewar se ronay ki sada, haey beemar chala

1) Haey jalti hay zameen aag ugalti hay zameen
Koi saaya bhi nahi (x2)
Ablay parr gaye pairon may aur badan tapnay laga, haey beemar chala (x2)

2) Pair kia hathon pe gardan pe paray hain chalay
Koi paani dalay (x2)
Taptay hay tauq-o-salasil hay bohat garm hawa, haey beemar chala (x2)

3) Kantay chub jatay hain chalay kabhi chil jatay hain
Haey dukh patay hain (x2)
Pa barehna yeh aziyat ka safar aur yeh jafa, haey beemar chala (x2)

4) Aah kartay hain to durron ki saza patay hain
Yun tarap jatay hain (x2)
Haey kis haal may hain ibne shahay Karbobala, haey beemar chala (x2)

5) Cheekh uthati hay to zakhmoo se lahu behta hay
Har sitam sehta hay (x2)
Kis se faryad karay bhai na baba na chacha, haey beemar chala (x2)

6) Tazianay kabhi maray kabhi pathar maaray
Haey Sheh ke pyaray (x2)
Kis qadar zakhmi musafir pe hui joar o jafa

7) Dekh kar betay ki halat ko tarap uthti hay maa
Yeh bhi hota hay guman (x2)
Aa na jaye kahin beemar ko rastay may qaza, haey beemar chala (x2)

8) Sar khulay mayain hain behnain hain sitamgaron may
Haey bazaron may (x2)
Sir jhukaye huay rota hua khuddar chala, haey beemar chala (x2)

9) Haey kis haal mein sibt-e-Payambar safdar
Khaak urao gohar (x2)
Peet kar seena-o-sir bain karo ahl-e-aza, haey beemar chala (x2)

بیڑیاں پہنے ہوئے قافلہ سالار چلا
ہائے بیمار چلا

آ رہی ہے در و دیوار سے رونے کی صدا
ہائے بیمار چلا

ہائے جلتی ہے زمیں آگ اگلتی ہے زمین
کوئی سایہ بھی نہیں
آبلے پڑ گئے پیروں میں بدن جلنے لگا
ہائے بیمار چلا

پیر کیا ہاتھوں پہ گردن پہ پڑے ہیں چھالے
کوئی پانی ڈالے
تپتے ہے طوق و سلاسل ہے بہَت گرم ہوا
ہائے بیمار چلا

کانٹے چُبھ جاتے ہیں چھالے کبھی چِھل جاتے ہیں
ہائے دکھ پاتے ہیں
ہائے کس حال میں ہیں ابن شہہِ کرب و بلا
ہائے بیمار چلا

آہ کرتے ہیں تو درّوں کی سزا پاتے ہیں
یوں تڑپ جاتے ہیں
پا برہنا یہ اذیّت کا سفر اور یہ جفا
ہائے بیمار چلا

چیخ اُٹھتی ہے تو زخموں سے لہو بہتا ہے
ہر ستم سہتا ہے
کس سے فریاد کرے بھائی نہ بابا نہ چچا
ہائے بیمار چلا

تازیانے کبھی مارے کبھی پتھر مارے
ہائے شہہؑ کے پیارے
کس قدر زخمی مسافر پہ ہوئی جور و جفا
ہائے پیمار چلا

دیکھ کر بیٹے کی حالت کو تڑپ اٹھتی ہے ماں
یہ بھی ہوتا ہے گماں
آ نہ جائے کہیں بیمار کو رستے میں قضا
ہائے بیمار چلا

سَر کھلے مائیں ہیں بہنیں ہیں ستمگاروں
ہائے بازاروں میں
سر جھکائے ہوئے روتا ہوا خوددار چلا
ہائے بیمار چلا

ہائے کس حال میں ہے سبطِ پیمبرؐ صفدر
خاک اڑاؤ گوہر
پیٹ کر سینہ و سر بین کرو اھل عزا
ہائے بیمار چلا