Haey Sajjad chalay Shaam Khuda khair karay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Haey Sajjad chalay Shaam Khuda khair karay
Galay may tauq hay aur bariyan hain pairon may
Diya hain Shaam kay logo nay ye inaam, Khuda khair karay

1) Woh jis kay saar say rida bhi kabhi sarak jaye
To maray sharam kay suraj waheen palat jaye
Sharabiyon say hui hay woh hum kalam
Khuda khair karay

2) Tamam shehron kay deevar o dar sajaye hain
Khari hain auratain haaton main sang uthaye hain
Kiya hay jashan-e-fatah ka ye ahtamam
Khuda khair karay

3) Bana kay qaidi aulad-e-Ali ko laye hain
Ye shor barpa aaye hain baghi aaye hain
Macha hay Shaam kay logon main kohram
Khuda khair karay

4) Bazaar-e-Shaam may Zainab to be rida hay kharri
Beema Syed-e-Abid pe kia kathin hay gharri
Kharra bazar may har soo hay majma aam
Khuda khair karay

5) Janab-e-Ghazi ka sar sang pe tarrapta tha
Beemar qaidi ki aankhon se khoon barasta tha
Laeen leta hay Zainab ka jab bhi naam
Khuda khair karay

ہائے سجادؑ چلے شام خدا خیر کرے
گلے میں طوق ہے اور بیڑیاں ہیں پیروں میں
دیا ہے شام کے لوگوں نے یہ انعام
خدا خیر کرے

وہ جس کے سر سے ردا بھی کبھی سرک جائے
تو مارے شرم کے سورج وہیں پلٹ جائے
شرابیوں سے ہوئی ہے وہ ہمکلام - خدا خیر کرے

تمام شہروں کے دیوار و در سجائے ہیں
کھڑی ہیں عورتیں ہاتھوں میں سنگ اٹھائے ہیں
کِیَا ہے جشنِ فتح کا یہ اہتمام - خدا خیر کرے

بنا کے قیدی اولادِ علیؑ کو لائے ہیں
یہ شور برپا ہے آئیں ہیں باغی آئے ہیں
مچا ہے شام کے لوگوں میں کہرام - خدا خیر کرے

بازارِ شام میں زینبؑ تو بے ردا ہے کھڑی
بیمار سیّدِ عابدؑ پہ کیا کٹھن ہے گھڑی
کھڑا بازار میں ہر سُو ہے مجمع عام - خدا خیر کرے

جنابِ غازیؑ کا سر سانگ پہ تڑپتا تھا
بیمار قیدی کی آنکھوں سے خوں برستا تھا
لعین لیتا تھا زینبؑ کا جب بھی نام - خدا خیر کرے