Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay
 
Rokar Pukari Nana Aay Faryad Laaie Hoon, 
May Choor Kar Hussain Ku Jungal Main Aaie Hoon
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

1) Nana Ajeeb Saanahai Ham Par Guzar Gaya
   Ranj-o-Alam Ne Gher Liyaa Hum Jidhar Gaye
   Nana Khudaa Kai Ghar Mai Na Hum Ku Amaan Mili
   Bhaaie Ne Shahar Choor Ke Jangal Ki Raah Li
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

2) Nana Hamain Na Chain Mayassar Kahain Huwa
   Paani Bhi Bandh Hum Pai LayeNoon Nai Kardiya
   Nana Tumhari Aal Pai Kya Kya Sitam Huwai
   Bachai Tarap Kai Mar Gaye Paani Kai Waastai
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

3) Nana Shaheed Ho Gaye Bhayee Kai JaanNisar
   Ek Ek Kar Kai Mar Gaye Ashab-e-Zee waqar
   Nana Bala Kai Ban Main Qayamat Ka Run Para
   Bhayee Sai Bhayee Baap Sai Beta Bichar Gaya
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

4) Nana Zameene Karbobalaa Laa Hogayi
   Qasim Ki Laash Ghooron Se Paamaal Hogayi
   Nana Kataa Ke Shanon Ku Abbas Margaye
   Ghurbat Me Bhaaijaan Ko Be Aas Kargaye

Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

5) Nana Tumhari Shakl Ka Farzand Ek Jo Tha
   Khaa Kar Sina Jigar Mai Wo Mehru Bhi Chal Basa
   Nana Shaqi Ki Teer Se Asgar Huwa Shaheed
   Aisa Huwa Na Hoga Jahaan Main Sitam Shadeed

Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

6) Nana Hussain Bai Kas-o-Bai Yaar Hogaie
   Aamada Qatl Karnai Ku Kuffar Hogaie
   Tarpai Jo Zer Khanjare Bai Aab Shahai Deen
   Shimre Layeen Kai Zulm Sai Thar Ra Gaye Zameen
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

7) Nana Hamare Ghar Ka Sab Asbab Lut Gaya
   Nana Hamare Sar Pe Na Baqi Rahee Rida
   Nana Hazaar Tarha Jafa Ki Layeeno Ne
   Khaimo Mai Aag Lagaadi Laeeno Ne
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

8) Nana Huwi Aseer Tumhaari Nawasiyaan
   Kauno Makaan Main Chaa Gayi Gham Ki Udaasiyaan
   Nana Haram Hussain Kai Bazaar Main Gaye
   Hum Sar Barehna Kufe Ke Darbar Main Gaye
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

9) Nana Tumhaari Aal Gayi Mulke Shaam Mai
   Pohnchi Ali Ki Betiyaan Darbaare Aam Mai
   Nana Haqeer Sahebbe Tatheer Hogaye
   Ham Log Shehr Shaam Main Tash-Heer Hogaye
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

10) Nana Aseer Bara Thai Hum Ek Thi Rasan
    Baandhe Gaye Thai Misle Gunaahgaar-e-Khastatan
    Nana Hum Apne Haal Pe Rote Thai Zaar Zaar
    Nana Hamaare Roonai Pe Haste Thai Badshaiaar
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

11) Nana Ajeeb Haal Hamaaraa Tha Us Ghadi
    Ek Bibi Pichhe Dusri Bibi Kai Chupti Thi
    Us Wakt Thar Thari Si Merai Tan Main Par Gayi
    Sad Haif Hai Zammen Main Zainab Na Ghar Gayi
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

12) Itne Me Ek Shaami Nai Nana Ghzab Kiya
    Saidani Ku Kaneezi Main Apni Talab Kiya
    Hoti Thi Laakh Zillaten Hum Dekhte Rahe
    Hans Hans Ke Taaziyaane Sitam Jhelte Rahe
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

13) Nanaa Tabaah Hoke Ham Aaye Hain Shaam Se
    Ek Daaghe Nau Sakina Ka Laaye Hai Shaam Se
    Nana Hamare Tan Pe Nishaano Ko Dekh Lo
    Ab Tak Hai Neel Rassi Ke Shaanon Ko Dekh Lo
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

14) Zainab Dekha Kai Shanoon Ku Jab Karrahi Thi Bayaan
    Tharaa Rahaa Tha Rouzae Sultaane Mashraqain
    Bas Khatm Kar Nashar Ye Ghamnaak Daastaan
    Rotai Hain Is Alam Main Zameen Aur Aasmaan
 
Rozay pay Mustafa ke udasi si chaie hay, 
Kunbe ko khoke Zainabe nashaad aaie hay

روضے پہ مصطفیۖ  کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

رو کر پکاری نانا میں فریاد لائی ہوں
میں چھوڑ کر حسینؑ کو جنگل میں آئی ہوں
روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے نانا ہمارے گھر کا سب اسباب لٹ گيا
نانا ہمارے سر پہ نا باقی رہی ردا
نانا ہزار طرح جفا کی  لعینوں نے
خیموں میں ہائے آگ لگا دی لعینوں نے

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے نانا عجیب سانحے ہم پر گزر گئے
رنج و الم نے گھیر لیا ہم جدھر گئے
نانا خدا کے گھر میں نہ ہم کو اماں ملی
بھائی نے شہر چھوڑ کے جنگل کی راہ لی

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے نانا شہید ہوگئے بھائی کے جاں نسار
ایک ایک کرکے مرگئے اصحاب ذی وقار
نانا بلا کے بن میں قیامت کا رن پڑا
بھائی سے بھائی باپ سے بیٹا بچھڑ گیا

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

نانا تمہاری شکل کا فرزند جو ایک تھا
کھا کر سناں جگر پہ وہ مہرو بھی چل بسا
نانا شقی کے تیر سے اصغرؑ ہوئے شہید
ایسا ہوا نہ ہوگا جہاں میں ستم کبھی

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے نانا زمین کرب و بلا لال ہوگئی
قاسمؑ کی لاش گھوڑوں سے پامال ہوگئی
نانا کٹا کے شانوں کو عباسؑ مر گئے
غربت میں بھائی جان کو بے آس کرگئے

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے نانا ہوئیں اسیر تمہاری نواسیاں
کون و مکاں میں چھا گئی غم کی اداسیاں
نانا حرم حسینؑ کے بازار میں گئے
ہم سر برہنہ کوفہ کے دربار میں گئے

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے نانا تمہاری آل گئی لٹ کے شام میں
پہنچیں علیؑ کی بیٹیاں دربار عام میں
نانا حقیر صاحبِ تطہیر ہوگئے
ہم لوگ شہرِ شام میں تشہیر ہوگئے

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

۔۔۔۔۔۔ارے نانا اسیر بارہ تھے اور ایک تھی رسن
باندھے گئے تھے مثل گنہ گار خستہ تن
نانا ہم اپنے حال پہ روتے تھے زار زار
نانا ہمارے حال پہ ہستے تھے بد شعار

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

۔۔۔۔۔۔ارے ایک اک کا نام پوچھتا تھا بانی ستم
نانا بتاتا جاتا تھا شمر جفا ستم
یہ زینبؑ حزيں ہے وہ کلثوم دلفگار
انگلی اٹھا اٹھا کے دکھاتا تھا نابکار

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

۔۔۔۔۔۔ارے نانا عجیب حال ہمارا تھا اس گھڑی
اک بی بی پیچھے دوسری بی بی کے چھپتی تھی
اس وقت تھرتھری سی میرے تن میں پڑ گئی
صد ہیف ہے زمین میں زینبؑ نہ گڑ گئی

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے اتنے میں ایک شامی نے نانا غضب کیا
سیدانی کو کنیزی میں اس نے طلب کیا
ہوتی تھی لاکھ ذلتیں ہم دیکھتے رہے
ہنس ہنس کے تازیانے ستم جھیلتے رہے

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

ارے نانا تباہ ہو کے ہم آئے ہیں شام سے
اک داغ نو سکینہؑ کا لائے ہیں شام سے
اب تک ہیں نیل رسی کے شانوں کو دیکھ لو
نانا ہمارے تن پہ نشانوں کو دیکھ لو

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے

زینبؑ جو رو کے کرتی تھیں قبر نبیؐ پہ بین
تھرا رہا تھا روضہءِ سلطانِ مشرقین
سب ختم کرلی ساری یہ غم ناک داستاں
روئے ہیں اس الم میں زمیں اور آسماں

روضے پہ مصطفیۖ کے اداسی سی چھائی ہے
کنبے کو کھو کے زینبؑ ناشاد آئی ہے