Behti rahi Furaat
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Aey shaam-e-gharibaan (x5)
 
Behti rehi Furat (x4)
Khoon ho ker beh gaya Akbar kaa dil
Muskura kar khatam Asghar ho gaye
 
Behti rahi furat (x2)

1) Karbala ke dasht me kaisaa andhera cha gaya
   Aa gaye sham-e-gharibaa surkh hai khak-e-shifaa
   Jhal gaye khaime-sar-e-shamm-e-Aalam
   Kitne manzar khaakh ho ker reh gaye
 
   Behti rahi Furat (x2)

2) Dhal gaya dil shaam aayi shaam phir aisi ke baad
   Do paher ke baad chayi aisi tanhayi ki baad
   Kis terha Zehra ka ghar loota gaya
   Kis terha be sar bahatter ho gaye
 
   Behti rahi Furat (x2)

3) Aaj subhe tak ye ghar roshan bhi tha abaad bhi
   Sab ke waris the salamaat bhayi bhi awlaad bhi
   Ik hawaa aisi chali perdes me
   Be zabaan bache bhi be sar ho gaye
 
   Behti rahi Furat (x2)

4) Ye hai woh sham-e-gharibaa jo kayamaat bangayi
   Dukhtar-e-Zehra ke sar se jisne chadare chin li
   Ya Rasulallah qayamat ho gaye
   Dakhile khayma sitamgar hogaye
 
   Behti rahi Furat (x2)

5) Aik ik qatre ko tarse ban me ab faal-e-hussain
   Mashk zakhmi khali quze laash pamaal-e-hussain
   Reh gayaa maidaan me be kas kaa tan
   Jashan me masroof lashkar hogaye
 
   Behti rahi Furat (x2)

6) Marte dam pani pisar mange padar majboor hai
   Tu bataa sham-e-ghariba al qamaa kiya door hai
   Waye nehre al qamaa behti rahi
   Aur pyaase qatl Akbar ho gaye
 
   Behti rahi Furat (x2)

7) Hai wohi manzar wohi khaimay wohi tishna labi
   Aaye hai sham-e-gharibaa khu(n) rulaane aaj bhi
   Gham hame Rehan o-Sarwar kyu na ho
   Mahve mataam jab payambar hogaye

   Behti rahi Furat (x2)  

Khoon ho kar beh gaya Akbar kaa dil
Muskura kar khatam Asghar ho gaye
Behti rahi Furat (x2)

ائے شامِ غریباں
بہتی رہی فُرات

خون ہو کر بہہ گیا اکبر کا دل
مسکرا کر ختم اصغر ہوگئے
بہتی رہی فُرات۔۔۔

کربلا کے دشت میں کیسا اندھیرا چھا گیا
آگئی شامِ غریباں سرخ ہے خاکِ شفائ
جل گئے خیمے سرِ شامِ الم
کتنے منظر خاک ہو کر رہ گئے
بہتی رہی فُرات

ڈھل گیا دن شام آئی شام بھی ایسی کے بس
دوپہر کے بعد چھائی ایسی تنہائی کے بس
کس طرح زہرا کا گھر لُوٹا گیا
ہوگئے۲۷کس طرح بے سر بہتّر
بہتی رہی فُرات۔۔۔

آج صبحِ دم یہ گھر روشن بھی تھا آباد بھی
سب کے وارث تھے سلامت بھائی بھی اولاد بھی
اک ہوا ایسی چلی پردیس میں
بے زباں بچے بھی بے سر ہوگئے
بہتی رہی فُرات۔۔۔

یہ ہے وہ شامِ غریباں جو قیامت بن گئی
دُخترِ زہرا کے سر سے جس نے چادر چھین لی
یارسو ل اللہ قیامت ہوگئی
داخلِ خیمہ ستمگر ہو گئے
بہتی رہی فُرات۔۔۔

ایک اک قطرے کو ترسے بن میں اطفالِ حسین
مشک زخمی خالی کوزے لاش پامالِ حسین
رہ گیا میدان میں بے کس کا تن
جشن مین مصروف لشکر ہوگئے
بہتی رہی فُرات۔۔۔

مرتے دم پانی پسرمانگے پدر مجبور ہے
تُوبتا شامِ غریباں القمہ کیا دُور ہے
وائے نہرِ القمہ بہتی رہی
اور پیاسے قتل اکبر ہوگئے
بہتی رہی فُرات۔۔۔

ہے وہی منظر وہی خیمے وہی تشنہ لبی
آئی ہے شامِ غریباں خوں رُلانے آج بھی
غم ہمیں ریحان وسرسر کیوں نہ ہو
مہوے ماتم جب پیمبر ہوگئے
بہتی رہی فُرات۔۔