Haey haey Ali Akbar
Efforts: Mrs. Nighat Rizwan



Haey haey Ali Akbar, haey haey Ali Akbar
Kehti thi yeh maa khoon bhari mayyat se lipat kar
Haey haey Ali Akbar

1) Arman tha pahnawoon gi poshak shahani
   Afsoos keh raas aaie na tujh ku yeh jawani
   Kaisa tha muqaddar, haey haey Ali Akbar

2) Aathara baras paal kay parwan charhaya
   Aur gaisuwoon wala haaye mera khoon main nahaya
   Khurban ho maadar, haey haey Ali Akbar

3) Itna to zara thehro tumhain dhulha bana loon
   Bas ek jhalak sahray ki Sughra ku dhika Loon
   Baichain thi khawahar, haey haey Ali Akbar

4) Maa teri judaie mein bhala kaisay jeeye gi
   Maar jaayaigi Sughra jo khabar teri sunay gi
   Ab kya karoon dilber, haey haey Ali Akbar

5) Tehro kay mein atharween mannat to badha loon
   Phir lay kay balayein tujhay jeenay ki dua doon
   Sadqay ho ay maadar, haey haey Ali Akbar

6) Pehlay to ek aawaz pay uth jatay thay beta
   Ab etni saada�oon pay bhi pehloo nahi badla
   Kya ho gaya dilber, haey haey Ali Akbar

7) Tum hichkiyaan lay lay kay jo dam taur rahay ho
   Moo maa say hamaisha kay liye mour rahay ho
   Kyon rootay ho dilber, haey haey Ali Akbar

8) Aaye jo hamein lootnay hhaimay mein sitamgar
   Maa day gi sadaayein Ali Akbar, Ali Akbar
   Chin jaayay gi chaadar, haey haey Ali Akbar

9) Jab koi jawan laash nazar aati hai mahshar
   Ek yaad suyay Karbobala jaati hai mahshar
   Dil rota hay kah kar, haey haey Ali Akbar

ہئے ہئے علی اکبرؑ
کہتی تھی یہ ماں خوں بھری میت سے لپٹ کر
ہئے ہئے علی اکبرؑ

ارمان تھا پہناؤں گی پوشاک شاہانی
افسوس کہ راس آئی نہ تجھ کو یہ جوانی
کیسا تھا مقدر

اتنا تو ذرا ٹھہرو تمہیں دولھا بنا لوں
بس ایک جھلک سہرے کی صغراؑ کو دکھا لوں
بے چین تھی خواہر

اٹھارہ برس پال کے پروان چڑھایا
وہ گیسوؤں والا ہے میرا خوں میں نہایا
یہ کیا ہوا دلبر

ماں تیری جدائی میں بھلا کیسے جئے گی
مر جائے گی صغراؑ جو خبر تیری سنے گی
اب کیا کروں جی کر

ٹھہرو کہ میں اٹھارویں منت تو بڑھالوں
پھر لے کے بلائیں تجھے جینے کی دعا دوں
صدقے ہو یہ مادر

پہلے تو اِک آواز پہ اٹھ جاتے تھے بیٹا
اب اتنی صداؤں پہ بھی پہلو نہیں بدلا
کیا ہو گیا دلبر

تم ہچکیاں لے لے کے جو دم توڑ رہے ہو
منہ ماں سے ہمیشہ کے لئے موڑ رہے ہو
کیوں روٹھے ہو دلبر

آئیں جو ہمیں لوٹنے خیمے میں ستمگر
ماں دے گی صدائیں علی اکبرؑ علی اکبرؑ
چِھن جائے گی چادر

جب کوئی جواں لاش نظر آتی ہے محشر
اک یاد سوئے کرب و بلا جاتی ہے محشر
دل روتا ہے کہہ کر
ہئے ہئے علی اکبرؑ