Khaime may aa ke Shah ke jab alwida kaha - kohraam mach gaya
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Khaimay may aakay Shah nay jab alwida kaha
Kohraam mach gaya (x2)

1) Tha jiska intezaar woh saa-at qareeb hay
Din dhal raha hai saamnay musibat qareeb hay
Kuch dair ki hai baat qayamat qareeb hay
Zainab gareeb bhai ki ruksat qareeb hay
Ye kehkay maanga maa ka jo kurta sila hua
Kohraam mach gaya

2) Kuch dur hat kay khaime mein bolay Shahe Zaman
Zehmat na ho to baazu badhao zara behen
Main bosay loon wahaan kay bandhegi jahaan rasan
Baazu badha kay roti thi hamshir khastatan
Bhai behen kay bazu ko jab chum nay laga
Kohraam mach gaya

3) Ye sun kay binte Fatema Zehra tarap gayeen
Boli gala badhao bas ab jald ya akhi
Amma ki baat aaj mujhe yaad aa gayi
Main bosay loon wahaan ke chalegi jahaan churi
Zainab nay badh kay chuma beradar ka jab gala
Kohraam mach gaya

4) Beti say phir ye kehnay laga Fatema ka laal
Rehna phuphi kay paas rakhengi tera khayaal
Gurbat hai tum phuphi say na karna koyi sawaal
Warna teray pedar ko bohot hoyega malaal
Phir saar peh haath rakh kay jo daine lagay dua
Kohraam mach gaya

5) Beti ko jab supurde behen kar chuke Imam
Rokar behen say kehnay lagay aasma makaam
Jaana watan jo qaid say chutt kar ay tishnakaam
kehna lehed pay maa ki mera aakhri salaam
Aaya jo lab peh Fatema Zehra ka taskeraa
Kohraam mach gaya

6) Abid se phir ye kehne lage Shah e Karbala
Bewaon or yatimon ka abh tum ho aasra
Jo imtehaan mera ta sab maine day diya
Aage tera jihaad hai beemar-e-karbala
Beemar beta baap say jis dam juda howa
Kohraam mach gaya

7) Khaimay say bahar aaye jo sultan-e-karbala
Saar ko jhukaye rota tha khud asbay bawafa
Ab kis tarah sawaar ho Zehra ka laadla
Tanhaiyi kay siwa koi yaawar nahi bacha
Jab soway neher dekh kay Gaazi ko di sada
Kohraam mach gaya

8) Bhai ko tanha dekh kay Zainab tarap gayin
Roti howi Hussain kay nazdeek aa gayin
Or phir raqaab thaam kay boli ay Shah e Deen
Lo main sawaar karti hoon Abbas gaar nahi
Waariz hua sawaar jo Zehra ka laadla
Kohraam mach gaya

الوداع الوداع
خیمے میں آکے شاہ نے جب الوداع کہا
کہرام مچ گیا

تھا جس کا انتظار وہ ساعت قریب ہے
دن ڈھل رہا ہے شامِ مصیبت قریب ہے
کچھ دیر کی ہے بات قیامت قریب ہے
زینب غریب بھائی کی رخصت قریب ہے
یہ کہہ کے مانگا ماں کا جوکُرتہ سلا ہوا
کہرام مچ گیا۔۔۔

کچھ دور ہٹ کے خیمے میں بولے شہِ زمن
زہمت نہ ہو تو بازو بڑھائو زرا بہن
میں بوسے لوں وہاں کے بندھے گی جہاں رسن
بازو بڑھا کے روتی تھی ہمشیر خستہ تن
بھائی بہن کے بازئوں کو چومنے لگا
کہرام مچ گیا۔۔۔

یہ سن کے بنتِ فاطمہ زہرا تڑپ گئی
بولی گلہ بڑھائو بس اب جلد یا اخی
اماں کی بات آج مجھے یاد آگئی
میں بوسے لوں وہاں کے چلے گی جہاں چھری
زینب نے بڑھ کے چوما برادر کا جب گلہ
کہرام مچ گیا۔۔۔

بیٹی سے پھر یہ کہنے لگا فاطمہ کا لال
رہنا پھپی کے پاس رکھیں گی تیرا خیال
غربت ہے تم پھپی سے نہ کرنا کوئی سوال
ورنہ تیرے پدر کو بہت ہوئے گا ملال
پھر سر پہ ہاتھ رکھ کے جو دینے لگے دُعا
کہرام مچ گیا۔۔۔

بیٹی کو جب سپردِ بہن کرچکے امام
روکر بہن سے کہنے لگے آسماں مقام
جانا وطن جو قید سے چھٹ کر اے تِشنہ کام
کہنا لحد پہ ماں کی میراآخری سلام
آیا جو لب پہ فاطمہ زہرا کا تزکرہ
کہرام مچ گیا۔۔۔

عابد سے پھر یہ کہنے لگے شاہِ کربلا
بیوائوں کا اور یتیموں کا اب تم ہو آسرا
جو امتحان میرا تھا سب میں نے دے دیا
آگے تیرا جہاد ہے بیمارِ کربلا
بیمار بیٹا باپ سے جس دم جدا ہوا
کہرام مچ گیا۔۔۔

خیمے سے باہر آئے جو سلطانِ کربلا
سر کو جھکائے روتا تھا خود اسپِ باوفا
اب کس طرح سوار ہو زہرا کا لاڈلا
تنہائی کے سواکوئی یاور نہیں بچا
جب سوئے نہر دیکھ کے غازی کو دی صدا
کہرام مچ گیا۔۔۔

بھائی کو تنہا دیکھ کے زینب تڑپ گئی
روتی ہوئی حسین کے نزدیک آگئی
اور پھر رکاب تھام کے بولی اے شاہِ دیں
لو میں سوار کرتی ہوں عباس گر نہیں
واعظ ہوا سوار جو زہرا کا لاڈلا
کہرام مچ گیا۔۔۔