Bazaar e shaam aa gaya
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Bazar e shaam aa gaya

Akbar mere jawan kis ko bulaye Maa
Bazar e Shaam Aa gaya

1) Zainab ki lo khabar Abid a.s hai Natawan
Bazar Shaam aa gaya

2) Dasht e Bala ko chor kar khak e shifa ko orh kar
aye fakhr e kibriya suno kahti hoon haath jorh kar
kaisay chalay gi maa aye mere nojawan
Bazar e shaam aa gaya

3) Qismat ki pasban hai woh khair un nisan a.s ki jaan hai woh
Ghurbat ki inteha huee ghairon kay dermiyan hai woh
Shahzadi e Jinnah sahti hai sakhtiyan
Bazar e Shaam aa gaya

4) Qatil tera mere pisar Sajjad ka hai humsafar
Gham tou yehi hai yeh sitam sahta raha hai woh magar
kaisay sahay bhala beemar sarban
Bazar Shaam aa gaya

5) Mehnay suni hai yeh sada kahtay hain shaam mein sab hi
badla Ali ka lay gaye hum binte Ali say aaj hi
Pather say hain bhari logon ki jholiyan
Bazar Shaam aa gaya

6) Na Mahramon ki bheer mein uth ti nahi nazar meri
Abbas ki kasam nahi tashna labi ka gham koi
dukh hai yeh bay rida sahmi hain bibiyan
Bazar Shaam aa gaya

7) Pala hai jis nay umar bher Akbar tujhay hijab mein
Ghazi kay samnay bhi woh beta rahi niqab mein
Ghairon mein bay rida jati hai Al Amaan
Bazar Shaam aa gaya

8) Nok e sina ko dekh kar dawar yeh kah rahi thi maa
aa dekh tu bhi nojawan madar ka apni imtehan
aankhain na bandh kar ghairat say aasman
Bazar shaam aa gaya

بازار شام آگیا
اکبرؑ میرے جواں
کس کو بلاۓ ماں
بازار شام آگیا

زینب کی لو خبر عابدؑ ہیں ناتواں

دشت بلا کو چھوڑ کر خاک شفا کو اوڑھ کر
اے فخر کبریا سنو کہتی ہے ہاتھ جوڑ کر
کیسے چلے گی اے میرے نوجواں
بازار شام آگیا

قسمت کی پاسباں ہے وہ خیرالنساء کی جاں ہے وہ
غربت کی انتہا ہوئی غیروں کے درمیاں ہے وہ
شہزادی جناں سہتی ہیں سختیاں
بازار شام آگیا

قاتل تیرا میرے پسر سجاد کا ہے ہمسفر
کم تو نہیں ہے یہ ستم سہتا رہا ہے وہ مگر
کیسے سہے بھلا بیمار سارباں
بازار شام آگیا

میں نے سنی ہے یہ صدا کہتے ہیں شام میں سبھی
بدلہ علی کا لیں گے ہم بنت علیؑ سے آج ہی
پتھر سے ہے بھری لوگوں کی جھولیاں
بازار شام آگیا

نامحرموں کی بھیڑ میں اٹھتی نہیں نظر میری
عباسؑ کی قسم نہيں تشنہ لبی کا غم کوئی
دکھ ہے یہ میری جاں سہمی ہیں بیبیاں
بازار شام آگیا

پالا ہے جس نے عمر بھر اکبرؑ تجھے حجاب میں
غازیؑ کے سامنے بھی وہ بیٹا رہی نقاب میں
غیروں میں بے ردا آتی ہے المّـاں
بازار شام آگیا

نوک سناں کو دیکھ کر یاور یہ کہہ رہی تھی ماں
آ دیکھ تو بھی نوجواں مادر کا اپنی امتحاں
آنکھیں نہ بند کر غیرت کے آسماں
بازار شام آگیا

اکبرؑ میرے جواں
کس کو بلاۓ ماں
بازار شام آگیا