Aa rahi hay yeh sada Zainab e dilgeer ki
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Aa rahi hay yeh sada Zainab-e-dilgeer ki
 
Lash bai gohro kafan hai dasht main Shabbir ki
 
1)  Ab nahi Abbas Ghazi Qasim-o-Akbar kahan
    Hai ab koi uthahai laash bai tasveer ki
 
2)  Kaar diya Quran zakhmi Hurmala kai teer nai
    Jantai na thai musalman azmatai baisheer ki
 
3)  Aagayi ummat Nabhi ki aag lai kaar haath main
    Laj rakh lai na khudaya chadar-e-Tatheer ki
 
4)  Saar diya Gulzar jab Islam paar Shabbir nai
    Khoon kay qatron nai phir khak-e-shafa tameer ki

آ رہی ہے یہ صدا زینبِ دلگیر کی
لاش بے گوروکفن ہے دشت میں شبیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔

اب نہیں عباسِ غازی قاسم و اکبر کہاں
ہائے اب کوئی اُٹھائے لاش بے تقسیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔

کر دیا قرآن زخمی حُرملا کے تیر نے
جانتے نہ تھے مسلماں عظمتیں بے شیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔

آ گئی اُمت نبی کی آگ لے کر ہاتھ میں
لاج رکھ لینا خُدایا چادرِ تطہیرکی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔  

سر دیا گُلزار جب اسلام پر شبیر نے
خون کے قطروں نے پھر خاکِ شفائ اکسیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔