Bay dard musalamaan to khushiyan mana rahay hain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



بے درد مسلماں تو خوشیاں منارہے ہیں
عرب و عجم کے مولا دنےا سے جارہے ہیں


کچھ تو لحاظ کرتے دامادِ مصطفےٰ کا
سجدے میں جو علی پے ہائے ظلم ڈھارہے ہیں


احمد کے بعد زہرا اب چل پڑے علی بھی
آثار پنجتن کے ظالم مٹارہے ہیں


بالوں کو کھولے زینب کلثوم رو رہی ہے
گھر گھر چراغ کو فی شامی جلارہے ہیں


برسے گے تیر پیہم تابوت پر حسن کے
مولا یہ وقتِ آخر رو کے بتا رہے ہیں


نکلے ہیں آگ لے کر کچھ لوگ ثقیفہ سے
سادات کے گھروں کو ابتک جلارہے ہیں


تو سیکھ گھر میں چلنا وہ شام کا سفر ہے
تیری قید کے زمانے نزدیک آ رہے ہیں


مولا کے جنازے پر جبرئیل رو کے بولے
سردار انبیاءکے غمخوار جارہے ہیں

Bay dard musalamaan to khushiyan mana rahay hain
 
Arb-o-ajam kay Mola dunya say ja rahay hain
 
1)  Kuch to laihaaz kertai damaad-e-Mustafa ka
    Sajdai main jo Ali pai hy zulm dha rahai hain
 
2)  Ahmed kai baad Zahra ab chal perhai Ali bhi
    Asaar Panjatan ke zalim mita rahy hain
 
3)  Balon ko kholai Zainab Kulsoom ro rahi hain
    Ghar ghar charag Kufi shami jala rahai hain
 
4)  Barsai gain teer paiham taboot per Hassan kai
    Mola yeh waqat-e-aakhir ro kai bata rahai hain
 
5)  Niklai gain aag lai ker kuch log saqifa sai
    Sadaat kai gharon ko ab tak jala rahain hain
 
6)  Tu seekh ghar main chalna woh shaam ka safar hai
    Teri qaid kai zamanai nasdeeq aarahain hain
 
7)  Mola kai janazai per Jibreel ro kai bolai
    Sarkaar-e-Ambiya kai gham khaar ja rahain hain