Dekh bazaar aa gaya Ghazi
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

دیکھ بازار آ گیا غازیؑ
میرا پردہ نہ بچ سَکا غازیؑ

تیرے آقا کا تیرہ ضربوں سے
دشت میں کٹ گیا گَلا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

بعد تیرے سکینہؑ روتی رہی
گھونٹ پانی نہ مِل سَکا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

نیزوں سے جب ردائیں چھینتے تھے
دیتی تھی میں تجھے صدا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

تُو جو ہوتا تو میرے شانوں پر
کوئی رسّی نہ باندھتا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

ایک نیزے پہ سر ہے بھائی کا
دوسرے پر مِری رِدا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

سامنے بد قماش لوگوں کے
دیکھ زینبؑ کا حوصلہ غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

پُشت پر تازیانے لگتے رہے
تھک کے عابدؑ اگر رُکا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

لال رخسار ہیں تمانچوں سے
اب سکینہؑ کو آ بچا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

ہر گلی ہر نگر پھراتے ہیں
جیسے وارث نہیں رہا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

باغی کہہ کر ہمیں رُلاتے ہیں
زخمی دل ہو گیا مِرا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

دیکھ کیا حال ہے اسیروں کا
آنکھوں کو کھول کے ذرا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

قید ، بے پردگی کو دُرّوں کو
میں نے ہر ظُلم کو سَہَا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

سب کے بازو بندھے ہیں رسّی میں
اور سکینہؑ کا ہے گَلا غازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ

لکھ کے رضوانؔ دیر تک رویا
اور سکینہؑ کا ہے گَلاغازیؑ
دیکھ بازار آ گیا غازیؑ