Salam aakhri tujh ko Hussain kar ke chali
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

سلام آخری تجھ کو ، حسین کر كے چلی
بہن تمہاری ہے
تو بے خطا گیا مارا ، میرے بھی سَر سے ردا
گئی اتاری ہے

اجر ایسا ملا ، نانا کی ہائے امت سے
ہیں کان زخمی سكینہ كے ، سجاد کی آنکھوں
سے خون جاری ہے

جیسے تیر چلے ، شبیرؑ پہ ہیں کربل میں
ہوئی ہے آل محمدؑ ، پہ شام میں ایسے ،
ہے سنگ باری ہے

تیری لاش حسینؑ ، ہے دھ___وپ میں بہن مجبور
اِس بات نے ماری بہت دِل زینب
پہ ضرب کاری ہے

قدم قدم پہ شہید ، ہونا ہے تیری زینبؑ نے
ہے اُس كے ساتھ سفر میں ، تھا جس نے اکبرؑ کو
ہئے برچھی ماری ہے

Salam akhri tujh ko, Hussain kar ke chali,
behan tumhari hay
Tu be khata gaya mara, meray bhi sar se rida,
gayi utari hay

Ajr aisa mila, Nana ki haey ummat se
Hain kan zakhmi Sakina ke, Sajjad ki ankhon
Se khoon jari hay

Jaise teer chalay, Shabbir pe hain Karbal may
Hui hay aal e Muhammad pe, Sham may aisay,
Haey sang bari hay

Teri lash Hussain hay dhoop may behan majboor
Is baat ne mari bohat dil e Zainab
Pe zarb kari hay

Qadam qadam pe shaheed hona hay teri Zainab ne
Hay us ke sath safar may, tha jis ne Akbar ko
Haey barchi mari hay