Kaisi ye sham aayi aulad e Syeda par
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



کیسی یہ شام آئی اولادِ سیدہؑ پر
سجادؑ رو رہے ہیں ، زینبؑ سے منہ چُھپا کر

اک سمت بے کفن ہے بھائی کا اُسکے لاشہ
عباسؑ کی بہن کا باقی رہا نہ پردہ
اب سوچتی ہے زینبؑ مانگے کفن یا چادر

بازو کہیں پڑے ہیں لاشہ کہیں پڑا ہے
زینب کی بےکسی پر غازیؑ تڑپ رہا ہے
روتی ہے بے کسی بھی فرش عزا بچھا کر

جو گھر میں دو قدم بھی پیدل نہیں چلی ہے
اِک دن میں وہ ہی زینبؑ عباسؑ بن گئی ہے
پہرے پہ آگئی ہے تنہا علم اٹھا کر

سجادؑ سے لپٹ کر کہتی رہی سكینہؑ
احساس ہو رہا ہے میں ہوگئی یتییمہ
ظالم ڈرا رہا ہے نیزا دکھا دکھا کر

لاشوں كے درمیاں وہ بابا کو ڈھونڈتی ہے
منہ اپنا پیٹ کر یہ فریاد کر رہی ہے
قدموں میں ہی سُلا دو بابا مجھے بلا کر

جب آگئے نجف سے بیٹی کو ملنے بابا
زانو پہ رکھ کے سر یہ کہنے لگی وہ دُکھیا
زینبؑ اجڑ گئی ہے کرب و بلا بسا کر

خیموں كے ساتھ جھولا بستر بھی جل گیا ہے
ناموسِ مصطفیٰؐ کو باغی کہا گیا ہے
لے جائینگے صبح کو قیدی ہمیں بنا کر

گزرے گی کیسی یاور مقتل سے شاہزادی
عابدؑ نے رات مومن یہ سوچ کر گزاری
زینبؑ کا نام لے گا ظالم تو مسکرا کر

Kaisi Yeh Shaam Ayee Aulaade Sayyada Par
Sajjad Ro Rahe Hain, Zainab Se Moon Chupa Kar

Ek Samt Be Kafan Hai Bhai Ka Uske Laasha
Abbas Ki Behen Ka Baaqi Raha Na Parda
Ab Sochti Hai Zainab Mange Kafan Ya Chadar

Baazu Kahan Parey Hain Laasha Kahan Para Hai
Zainab Ki Bebasi Par Ghazi Tarap Raha Hai
Roti Hai Bekasi Bhi Farsh-E-Aza Bicha Kar

Jo Ghar Mein Do Qadam Bhi Paidal Nahi Chali Hai
Ek Din Mein Wo Hi Zainab Abbas Ban Gayi Hai
Pehre Pe Aagayi Hai Tanha Alam Utha Kar

Sajjad Se Lipat Kar Kehti Rahi Sakina
Ehsaas Ho Raha Hai Me Hogai Yateema
Zalim Dara Raha Hai Naiza Dikha Dikha Kar

Laashon Ke Darmiyan Wo Baba Ko Dhondhti Hai
Moon Apna Peet Kar Ye Faryad Kar Rahi Hai
Qadmon Mein Hi Sula Do Baba Mujhe Bulakar

Jab Agaye Najaf Se Bati Ko Milne Baba
Zaano Pay Rakh Kay Sar Ye Kehne Lagi Wo Dukhiya
Zainab Ujar Gai Hai Karbobala Basa Kar

Khaimon Ke Saath Jhula Bistar Bhi Jal Gaya Hai
Namoos-E-Mustafa Ko Baghi Kaha Gaya Hai
Le Jayenge Subha Ko Qaidi Hume Bana Kar

Guzregi Kaisi Yawar Maqtal Se Shahzaadi
Abid Ne Raat Momin Ye Soch Kar Guzari
Zainab Ka Naam Lega Zalim To Muskurakar