Aik tehreer uthaaye boli darbar may aa kar Zehra
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Aik tehreer uthaaye boli darbar main aa kar Zehra, 
logo main bint-e-Nabi hoon
Aisa badla hay Medina 
apna haq mang rahi hoon ghasib say, 
kalma go kursi nasheen hain 
aur may kab say khari hoon
 
1) Poocha Haider nay bata kya kya masjid main howa
   Ro kay bus itna kaha, 
   kabhi deewaaro ko thaama, 
   Kabhi mai khakh pe bethi, hoon thak kaar
   Kabhi bayton nay sambhaala, 
   kabhi rastey main giri hoon
 
2) Woh toh kamsin hain abhi 
   door hai shaam say bhi 
   seh na paye gi kabhi
   Us say Zainab nay yeh pocha 
   kahan jaati ho batawo aey amma
   Mainay Zainab say chupaya 
   kay may darbaar chali hoon
 
3) Aisay khamosh ho kyu 
   aey na chaho jo kaho
   Amma kuch toh bolo, 
   Ro kay boli bayton say 
   saath behno ka nibhana Karbal main
   Nangay saar kaisay chalengi, 
   bas yehi soch rahi hoon

4. Jitne dukh maine sahe
   Gar woh din par bhi pade
   Woh siha raat bane
   Yehi dukh kam to nahi hay
   Iss qadar tanha Madine me hui
   koi sunta hi nhi hai
   ke main kya bol rhi hoon

ایک تحریر اٹھائے , بولی دربار میں آ کر زہراؑ
لوگوں میں بنت نبی ہوں 
ایسا بدلا ہے مدینہ
اپنا حق مانگ رہی ہوں غاصب سے
کلمہ گو کُرسی نشیں ہے ، اور میں کب سے کھڑی ہوں 

پوچھا حیدرؑ نے بتا ، کیا کیا مسجد میں ہوا 
رَو کے بس اتنا کہا
کبھی دیواروں کو تھاما
کبھی میں خاک پہ بیٹھی ہوں تھک کر 
کبھی بیٹوں نے سنبھالا ، کبھی رستے میں گری ہوں

جتنے دُکھ میں نے سہے ، گر وہ دن پر بھی پڑیں
وہ سیاہ رات بنیں
یہی دکھ کم تو نہیں ہے
اِس قدر تنہا مدینے میں ہوئی ہوں
کوئی سنتا ہی نہیں ہے ، كہ میں کیا بول رہی ہوں

وہ تو کمسن ہے ابھی ، دُور ہے شام سے بھی 
سہہ نہ پائے گی کبھی 
مجھ سے زینبؑ نے یہ پوچھا
کہاں جاتی ہو بتاؤ اے اماں 
مَیں نے زینبؑ سے چُھپایا ، کہ میں دربار چلی ہوں 

ایسے خاموش ہو کیوں ، کہنا چاہو جو کہو 
اماں کچھ تو بولو
رَو کے بولی بیٹوں سے
ساتھ بہنوں کا نبھانا کربل میں 
ننگے سر کیسے چلیں گی ، بس یہی سوچ رہی ہوں 

تُربتِ بنتِ نبیؐ ، دیکھے اکبر جو کبھی
مجھ کو لگتا ہے یہی
اُس کا مہدیؑ کہتا ہے
منتقم بن کے مدینے زہراؑ کا
جلد آؤں گا میں لوگو ، دورِ حاضر کا علیؑ ہوں