Zahra jayain da aasra Ghazi - Urdu
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Zahra jayain da aasra Ghazi
Hoya Karbal Hoya Karbal
Hoya Karbal de wich juda Ghazi

Kiwain jawan gi Shaam te Koofa
Maikoon mehmal te aa bahaa Ghazi

Bhul gayan bibyan sitam saray
Zeen toon jis ghari latha Ghazi

Khaimay jalday rahay oo aandi rae
Shimr to aan ke bacha Ghazi

Meri chadar Khuda da parda aey
Meri chadar di tu baqa Ghazi

Lafz parda te aakhna ponda aey
Warna Zinab di hay rida Ghazi

Kyun may tursan Ali koon dhee aakhay
Shala jeeway mera bhira Ghazi

Teryan katyan bazoaan di qasam
Aawan gi Shaam kar fatah Ghazi

Sayan aakhay Abbas nae larna
Tayan hath eid te kata Ghazi

Cheh jagha toon Hussain chunya aey
Phir bhi poora na mil saka Ghazi

Qari Quran marainday rae
Saray bazaar hay gawah Ghazi

Ro ke hik wain keeta Masooma
Pyas Asghar di aa bujha Ghazi

Shimr raj raj Hussain koon maaray
Janda haey jo nae rea Ghazi

Charon pasay sharabi disde hin
Bibyan wan ch aa hata Ghazi

Jaidi turbat hay dhup te hun tayeen
Usay bibi di hay dua Ghazi

Zindagi bhar tu aaqa sadya hay
Maino hik waari sad bhira Ghazi

Maar ke barchi tur gaya zalim
Lasha Akbar da aa chawa Ghazi

Jairay babay paway san maikoon
Dur kitay Shimr ne laha Ghazi

May ridawan di hun nahi zaman
Bibyon jag toon tur gaya Ghazi

Tainday har zulm da jawab daindi
Kash honda maida bhira Ghazi

De ke bazoo alam bachaya aey
Tera mamnoon hay Khuda Ghazi

Nangay sar dar badar phiraiday rae
Kis na keta mera haya Ghazi

زہراؑ جائیاں دا آسرا غازیؑ
ہویا کربل ہویا کربل
ہویا کربل دے وِچ جُدا غازیؑ

کیسے جاؤں گی شام اور کوفہ
مجھ کو محمل پہ آ بٹھا غازیؑ

بھولی ہیں بیبیاں ستم سارے
زِین سے جس گھڑی گِرا غازیؑ

خیمے جلتے رہے وہ کہتی رہی
شمر سے آ كے تو بچا غازیؑ

میری چادر خدا کا پردہ ہے
میری چادر کی تو بقا غازیؑ

لفظ پردہ تو کہنا پڑتا ہے
ورنہ زینبؑ کی ہے رِدا غازیؑ

کیویں ٹر ساں علیؑ کوں دھی آکھے
شالا جییوے میرا بِھرا غازیؑ

تیرے بُــــریدہ بازؤں کی قسم
آؤں گی شام کر فتح غازیؑ

سین آکھے عباسؑ نئیں لڑنا
تایوں ھتھ کیتے ہِن کٹا غازیؑ

چھ جگہ سے حسینؑ چُنتے رہے
پِھر بھی پُورا نہ مل سکا غازیؑ

ظلم قاری قرآن کرتے رہے
سارا بازار ہے گواہ غازیؑ

رو كے یہ بین کرتی معصومہؑ
پیاس اصغرؑ کی آ بجھا غازیؑ

شمر مڑ مڑ حسینؑ کو مارے
جانتا ہے رہا نہیں غازیؑ

چاروں جانب شرابی بیٹھے ہیں
بیبیوں کو تو آ چُھڑا غازیؑ

جس کی تربت پہ دھوپ ہے اب تک
اُسی بی بی کی ہے دُعا غازیؑ

زندگی بھر تُو آقا کہتا رہا
بھائی کہہ کر تو اب بُلا غازیؑ

مار كے برچھی توڑی ظالم نے
لاشہ اکبرؑ کا آ اُٹھا غازیؑ

مجھ کو بابا نے جو تھے پہنائے
دُر کئے شمر نے جُدا غازی

میں رداؤں کی اب نہیں ضامن
بیبیوں اب چلا گیا غازیؑ

تیرے ہر ظلم کا جواب دیتی
کاش ہوتا اگر میرا غازیؑ

دے كے بازو علم بچایا ہے
تیرا ممنون ہے خدا غازیؑ

ننگے سَر دَر بدر پھراتے رہے
نہ کسی نے کیا حیا غازیؑ