Chal gayi tegh Haider ke sar par
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

روزہ داروں کرو برپا ماتم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر
خوں میں غلطاں ہے شاہِ دو عالم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر

ظلم کی آندھی ایسی چلی ہے
ضرب کاری لعیں کی لگی ہے
ہو گئی خون سے آنکھ پُر نم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر

خون بہتا ہے حیدرؑ کے سر سے
زرد چہرہ ہے سَم کے اثر سے
شہؑ کے سینے میں گھٹنے لگا دم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر

گھر میں حیدرؑ کے آفت ہے آئی
بیٹیاں دے رہی ہیں دُھائی
کیسے جھیلیں گی بابا کا یہ غم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر

روتے جاتے ہیں شبیرؑ و شبرؑ
گریہ پھر سے ہے زہراؑ کے گھر پر
غم ہوا تھا نہ ماں کا ابھی کم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر

سُن کے کلثومؑ و زینبؑ کے نالے
رو رہے ہیں سبھی کنبے والے
خاک سر پر اڑاتے ہیں باہم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر

برپا کون و مکاں میں فغاں ہے
غم میں ڈوبی نماز و اذاں ہے
دونوں عالم میں ہے شہؑ کا ماتم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر

لکھا رضوان نے ایسا نوحہ
خوں بہاتے ہیں سب اہلِ گریہ
اشک بہتے ہیں آنکھوں سے پیہم
چل گئی تیغ حیدرؑ کے سر پر