Jangal may bharay ghaar ko luta aayi hai Zainab
Efforts: Kamberali J. Shamji

Jungal may bharay ghaar ko luta aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
Abid ko kisi tarha bacha laayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
1) Bandwakay rasan haaton may aur khutbay sunaakay, ghaar baar lutaakay (x4)
   Dewaar baray kufar say dha aayi hai Zainab, ay shehr-e Madina
 
2) Jis shehr may shehzaadiyo ki tarha rahi thi, naazon say paali ti (x2)
   Saar nangay ussi shehr may ho aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
3) Jo hijre padar may rahay har waqt parishan, sooyi nahin ek aan (x2)
   Us bachi ko zindaan may sulaa aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
4) Dhaaras thi bahot bhai ko jis bhai kay dam say, dil phat-ta hai ghum say (x2)
   Saahil peh akela usay choor aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
5) Chay maah kay Asghar ko bhi jhoolay kay bajaaye, dukh daard chipaaye (x2)
   Aaghosh may turbat kay sulaa aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
6) Tay Awn-o-Mohammad jo meri aankhon kay taaray, mamu kay dulaaray (x2)
   Qurbaan unhay bhayi par kar aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
7) Ta Akbar-e-nashaad jo is ghaar ka ujaala, wo gaysuon wala (x2)
   Marqad may akela usay choor aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
8) Naadim hai bahot laa saki Qasim ko na humra, wa hasrato darda (x2)
   Kubra ko magar saath liye aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
9) Pani jo piye ahle watan pyaas na bhulay, mou ashkon say dholay (x2)
   Kehne ko ye bhai ka payaam aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
10) Manzar wo bhula sakti nahi ta dame aakhir, hai kehne se qaasir (x2)
    Jo shaam kay darbaar may dekh aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
11) Kis waqt khuda jaane qadam nikle thay ghaar se, chaadar chini saar say (x2)
    Ab tak na masayab say nikal paayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
12) Shabbir peh ab royega ta hashr zamana, hai ghum ka fasana (x2)
    Majlis ki bina Shaam may daal aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina
 
13) Rehjaayega Akhtar ufaqay ghum peh tera naam,kya khoob inaam (x2)
    Noha tera sun-nay kay liye aayi hai Zainab, ay shehr-e-Madina

جنگل میں بھرے گھر کو لٹا آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ
عابد کو کسی طرح بچا لائی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

بندھوا کے رسن ہاتھ میں اور کوفے کو جاکے - گھربار لٹا کے
دیوار بڑے کفر کی ڈھا آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

جس شہر میں شہزادیوں کی طرح رہی تھی - نازوں سے پلی تھی
سر ننگے اسی شہر سے ہو آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

جو ہجر پدر میں رہی ہر وقت پریشاں - سوئی نہیں اک آں 
اس بچی کو زنداں میں سلا آئی ہے  زینبؑ اے شہر مدینہ

ڈھارس تھی بہت بھائی کو جس بھائی کے دم سے - دل پھٹتا ہے غم سے
ساحل پہ اکیلا اسے چھوڑ آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

چھ ماہ کے اصغر کو بھی جھولے کے بجائے - دکھ درد چھپائے
آغوش میں تربت کے سُلا آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

تھے عونؑ و محمدؑ جو میری آنکھوں کے تارے - ماموں کے دلارے
قربان انہیں بھائی پہ کر آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

تھا اکبرِؑ ناشاد جو اس گھر کا اجالا - وہ گیسووؑں والا
مرقد میں اکیلا اسے چھوڑ آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

پانی جو پئیں اہل وطن پیاس نہ بھولیں - منہ اشکوں سے دھولیں
کہنے کو یہ بھائی کا پیام لائی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

منظر وہ بھلا سکتی نہیں تا دم آخر - کہنے سے ہے قاصر
جو شام کے دربار میں دیکھ آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ

کس وقت خدا جانے قدم نکلے تھے گھر سے - چادر چھنی سر سے
اب تک نہ مصائب سے نکل پائی ہے  زینبؑ اے شہر مدینہ

شبیرؑ پہ اب روئے گا تاحشر زمانہ - ہے غم کا فسانہ
مجلس کی بنا شام میں ڈال آئی ہے زینبؑ اے شہر مدینہ