Acha baba sulanay toh aaogay na
Efforts: Syed Nasir Abbas Rizvi



Kar raha hai mera dil bayan karbala (x2) 
Mujh Say ashur ki shab ka manzar kaha
Sina-e-Shah par bint-e- Shah-e-Huda
Aur Shabbir kehtay thay yeh baarha
Humko jana hai kal karnay wada wafa
Tum pa ajaiy ga sabr ka marhala
Baat saari Sakina ne Sheh ki suni 
Aur jawaaban bus itna hi kehti rahi

Acha baba sulanay toh aaogay na .. Roz chehra dikhanay toh aaogay na (x2)
Bolay Shabbir aey meri noor-e-nazar
Ttumko karna hai ab shaam tak ka safar
Tumko qaidi banaiy gain ab ahl-e-shar
Boli shahzadi mujhko nahi koi dar
tum kaho tum sulanay toh aaogay na
Roz chehra dikhanay toh aaogay na 
Shah kehnay lagay aey meri ladli
Tum pa aeygi ab sham-e-gham ki ghari
Aag daman me hogi tumharay lagi
Boli woh fiqr mujhko nahi hai koi 
mera daman bhujanay toh aao gey na
Roz chehra dikhanay toh aaogay na
Muztarib dil say kehnay lagay shah-e-deen
Teri qismat mein beti sukun ab nahin
Ab tamachay lagaega shimr-e-laeen
Sunke yeh baat kehnay lagi woh hazeen
Shimr se tum bachanay toh aaogey na
Roz chehra dikhanay toh aaogay na
Acha baba sulanay toh aaogay na .. Roz chehra dikhanay toh aaogay na (x2)
Phir kia Sheh nay beti say kuch yun sukhan
Sab haram hongay ab toh aseer-e-mehen
Tere hathon mein bhi phir bandhegi rasan
Boli yeh baaat sunkay woh tishna dahan
Tum galay say lagane toh aaogey na
Roz chehra dikhanay toh aaogay na
Rokay Shabbir nay uskay bosay liay
Bolay rukhsaar bhi hongay zakhmi teray
Teray ronay kay shahzadi din agaiy
Boli tum kaisay dekhogay rotay hoay
Haan mujhay chup karanay toh aaogay na
Roz chehra dikhanay toh aaogay na
Barhti jati thi bechaini Shabbir ki
Har sitam woh uthanay pa raazi hui
Zinda baba na hongay samajh na saki
Sunke sab mushkilain bas yeah kehti rahi
Gar main ruthi mananay toh aaogey na
Roz chehra dikhanay toh aaogay na

Likh kay Salman dil ro raha hai mera
Zain jab Shah-e-wala ne rokar kaha
Ab toh zindan marqad banega tera
Beti sabir ki thi boli woh sabira
Mera lasha uthanay toh aaogey naa
Roz chehra dikhanay toh aaogay na

Acha baba sulanay toh aaogay na .. Roz chehra dikhanay toh aaogay na (x2)

کر رہا ہے میرا دِل بیان کربلا
مجھ سے عاشور کی شب کا منظر کہا 
سینہءِ شاہؑ پر بنتِ شاہ ھدیٰ 
اور شبیرؑ کہتے تھے یہ بڑھا 
ہم کو جانا ہے کل کرنے وعدہ وفا 
تم پہ آجائے گا صبر کا مرحلہ 
بات ساری سكینہؑ نے شہہؑ کی سنی 
اور جواباَ بس اتنا ہی کہتی رہی 

اچھا بابا سُلانے تو آؤ گے نا
روز چہرہ دکھانے تو آؤ گے نا

بولے شبیرؑ اے میری نور نظر 
تم کو کرنا ہے اب شام تک کا سفر 
تم کو قیدی بنائیں گے اب اہلِ شر 
بولی شہزادی مجھکو نہیں کوئی ڈر 
تم کہو تم سلانے تو آؤگے نا 
روز چہرہ دکھانے تو آؤگے نا 

شاہ کہنے لگے اے میری لاڈلی 
تم پہ آئے گی اب شامِ غم کی گھڑی 
آگ دامن میں ہوگی تمہارے لگی 
بولی وہ فکر مجھکو نہیں ہے کوئی 
میرا دامن بُجھانے تو آؤ گے نا 
روز چہرہ دکھانے تو آؤگے نا 

مضطرب دِل سے کہنے لگے شاہِ دین 
تیری قسمت میں بیٹی سکوں اب نہیں 
اب تمانچے لگائے گا شمرِ لعیں
سُن کے یہ بات کہنے لگی وہ حزین 
شمر سے تم بچانے تو آئو گے نا 
روز چہرہ دکھانے تو آؤگے نا
 
اچھا بابا سُلانے تو آؤ گے نا
روز چہرہ دکھانے تو آؤ گے نا

پِھر کیا شہہ نے بیٹی سے کچھ یوں سخن 
سب حرم ھونگے اب تو اسیرِ مِہن 
تیرے ہاتھوں میں بھی پِھر بندھے گی رسن 
بولی یہ بات سن کے وہ تشنہ دھان 
تم گلے سے لگانے تو آئو گے نا 
روز چہرہ دکھانے تو آؤگے نا 

روکے شبیرؑ نے اُسکے بوسے لیے 
بولے رخسار بھی ھونگے زخمی تیرے 
تیرے رونے کے شہزادی دن آ گئے 
بولی تم کیسے دیکھو گے روتے ہوئے 
ہاں مجھے چُپ کرانے تو آؤ گے نا 
روز چہرہ دکھانے تو آؤ گے نا 

بڑھتی جاتی تھی بے چینی شبیرؑ کی 
ہر ستم وہ اُٹھانے پہ راضی ہوئی 
زندہ بابا نہ ھونگے سمجھ نا سکی 
سن کے سب مشکلیں بس یہ کہتی رہی 
گر میں روٹھی منانے تو آئو گے نا 
روز چہرہ دکھانے تو آؤگے نا 

لکھ کے سلمان دِل رو رہا ہے میرا 
زین جب شاہِ والا نے روکر کہا 
اب تو زندان مرقد بنے گا تیرا 
بیٹی صابر کی تھی بولی وہ صابرہ
میرا لاشا اُٹھانے تو آئو گے نا 
روز چہرہ دکھانے تو آؤ گے نا 

اچھا بابا سُلانے تو آؤ گے نا
روز چہرہ دکھانے تو آؤ گے نا