Aik nanhi si lehad ran may banatay hain Hussain
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

ایک ننھی سی لحد رَن میں بناتے ہیں حسینؑ
خاک میں دوسرے محسنؑ کو چھپاتے ہیں حسینؑ

ڈالتے جاتے ہیں اصغرؑ کے بدن پر مٹی
اور خیموں کی طرف دیکھتے جاتے ہیں حسینؑ
 
لاشِ حُرؑ نے کہا رومال یہ دے دو جا کر
زخم بے شیر کا ہاتھوں سے چُھپاتے ہیں حسینؑ
 
مرتے دم ننھے سے ہاتھوں نے جسے تھاما تھا
اب وہ دامن علی اصغرؑ سے چُھراتے ہیں حسینؑ
 
کہا صغریٰؑ نے کہ مرکر مِلوں گی شہہؑ سے
مجھ کو معلوم ہے ہر قبر میں آتے ہیں حسینؑ

ڈھونڈنے آئیں گے اِس لاش کو نیزہ بردار
چُھپ کے بانوؑ سے یہ زینبؑ کو بتاتے ہیں حسینؑ

لاشِ عباسؑ پَہ کہتی تھیں یہ زہرہؑ رو کے
اُٹھو عباسؑ تمہیں کب بُلاتے ہیں حسینؑ

کوئی زینبؑ کو بُلا لائے تکلمؔ جاکر
برچھی اکبرؑ کے کلیجے سے چُھراتے ہیں حسینؑ