Haey rukhshat huay dunya se jo Abid Mola
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Haey rukhshat huay dunya se jo Abid Mola
Ghusl denay ke liye baap ko beta aaya
Jism jab baap ka dekha to kaha wa waila
Baap ke samnay Baqir ne kaha heeay baba
Ghusl may aap ko kis tarha bhala doon baba
Jism zakhmo ke nishano se bhara hay sara

Yaad aata hay mujhe shaam barabar baba
Haey bazar may maoon ka khula sar baba
Nok par naize ki nanha Ali Asghar baba
Khoon rulatay thay tumhain Shaam ke manzar baba
Zulm ki andhiyan chalti theen laeen hanstay thay
Haey sab bibyan roti theen laeen hanstay thay

Jism par aap ke nazrain may tikaoon kaise
Ghusl ka haq jo mila hay wo nibhaoon kaise
Apnay hathon ko teri pusht pe laoon kaise
Apni ankhon se wo manzar may bhulaoon kaise
Shaam ki raah may jab moar koi aata tha
Pusht par durray laeen aap ki barsata tha

Ghusl detay huay gardan ki jo baari aayi
Haey ye dekh ke nam aankh hui Baqar ki
Towq aur gardan e beemar ki yaad aanay lagi
Ro ke Baqar ne kaha haey ghareebi teri
Haey gardan ke nishanat ye batlatay hain
Aray towq pehnay huay tum ne jo safar katay hain

Paaon dhonay ke liye hath barrhaya may ne
Yaad aaya hay mujhe Shaam ka manzar phir se
Haey tum kaise chalay raah may un kanton pe
Dekh kar aap ko sab log yehi kehtay thay
Bairian pehn ke kanton pe chala jata hay
Kitna sabir hay ke har zulm saha jata hay

Qatl sab Karbala may meray ajdad huay
Sham ke baad na phir aap kabhi shaad huay
Sham may aisy hain ujray ke na aabad huay
Hath rassi ke nishanon se na aazad huay
Waqt aisa na kisi ko bhi dikhaye Mola
Baap naize pe ho aur maa ho khulay sar baba

Aap ki ankhon ne maoon ko khulay sar dekha
Aap ki ankhon ne phupyon ko khulay sar dekha
Aap ki ankhon ne behno ko khulay sar dekha
Aap ki ankhon ne chachyon ko khulay sar dekha
Haey bazar may ye zulm o sitam hotay rahay
Aap chalees baras haey lahoo rotay rahay

Ghusl jab de chukay Sajjad ko Mola Baqar
Dafan phir baap ko kar aaye Baqaea Baqar
Haey Zeeshan magar koi ye dekhay ja kar
Haey mazloom ki ghurbat ka ajab hay manzar
Khud bhi mazloom tha turbat bhi hay mazloom us ki
Turbat e Fatima Zehra ki tarha tooti hui

ہائے رخصت ہوئے دنیا سے جو عابدؑ مولا 
غسل دینے كے لیے باپ کو بیٹا آیا 
جسم جب باپ کا دیکھا تو کہا وا ویلا 
باپ كے سامنے باقرؑ نے کہا ہئے بابا 
غسل میں آپ کو کس طرح بھلا دوں بابا 
جسم زخموں كے نشانوں سے بھرا ہے سارا 

یاد آتا ہے مجھے شام برابر بابا 
ہائے بازار میں ماؤن کا کُھلا سَر بابا 
نوک پر نیزے کی ننھا علی اصغرؑ بابا 
خوں رلاتے تھے تمہیں شام كے منظر بابا 
ظلم کی آندھیاں چلتی تھیں لعیں ہنستے تھے 
ہائے سب بیبیاں روتی تھیں لعیں ہنستے تھے 

جسم پر آپ كے نظریں میں ٹِکاؤں کیسے 
غسل کا حق جو ملا ہے وہ نبھاؤں کیسے 
اپنے ہاتھوں کو تیری پشت پہ لاؤں کیسے 
اپنی آنکھوں سے وہ منظر میں بُھلاؤں کیسے 
شام کی راہ میں جب موڑ کوئی آتا تھا 
پشت پر درّے لعیں آپ کی برساتا تھا 

غسل دیتے ہوئے گردن کی جو باری آئی 
ہائے یہ دیکھ كے نم آنکھ ہوئی باقرؑ کی 
طوق اور گردنِ بیمار کی یاد آنے لگی 
رو كے باقرؑ نے کہا ہائے غریبی تیری 
ہائے گردن كے نشانات یہ بتلاتے ہیں 
ارے طوق پہنے ہوئے تم نے جو سفر کاٹے ہیں 

پاؤں دھونے كے لیے ہاتھ بڑھایا میں نے 
یاد آیا ہے مجھے شام کا منظر پِھر سے 
ہائے تم کیسے چلے راہ میں اُن کانٹوں پہ 
دیکھ کر آپ کو سب لوگ یہی کہتے تھے 
بیڑیاں پہن كے کانٹوں پہ چلا جاتا ہے 
کتنا صابر ہے كے ہر ظلم سہا جاتا ہے 

قتل سب کربلا میں میرے اجداد ہوئے 
شام كے بعد نہ پِھر آپ کبھی شاد ہوئے 
شام میں ایسے ہیں اجڑے كے نہ آباد ہوئے 
ہاتھ رسی كے نشانوں سے نہ آزاد ہوئے 
وقت ایسا نہ کسی کو بھی دِکھائے مولا 
باپ نیزے پہ ہو اور ماں ہو کُھلے سر بابا 

آپ کی آنکھوں نے ماؤں کو کُھلے سر دیکھا 
آپ کی آنکھوں نے پھپیوں کو کُھلے سر دیکھا 
آپ کی آنکھوں نے بہنوں کو کُھلے سر دیکھا 
آپ کی آنکھوں نے چچیوں کو کُھلے سر دیکھا 
ہائے بازار میں یہ ظلم و ستم ہوتے رہے 
آپ چالیس برس ہائے لہو روتے رہے 

غسل جب دے چکے سجادؑ کو مولا باقرؑ
دفن پِھر باپ کو کر آئے بقیعہ باقرؑ
ہائے ذیشان مگر کوئی یہ دیکھے جا کر 
ہائے مظلوم کی غربت کا عجب ہے منظر 
خود بھی مظلوم تھا تُربت بھی ہے مظلوم اُس کی 
تربتِ فاطمہ زہراؑ کی طرح ٹوٹی ہوئی