Abbas ka matam hay wafadar ka matam
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



Abbas ka matam hay wafadar ka matam
Hay foaj e Hussaini ke alamdar ka matam

Saqa e haram Syed o salar ka matam

Jis sher ne pani ko zara muh na lagaya
Jo nehr pe pyasa gaya pyasa palat aaya
Masoom Sakina ke wafadar ka alam

Shabbir ke lashkar ka alam jis ka alam tha
Ghurbat may jo Shabbir ki taqat ka bharam tha
Farzand e Muhammad ke madadgar ka matam

Jo ik naye andaz se maidan may aaya
Be tegh kiya Sham ke lashkar ka safaya
Us sher e Ali zaigham e jeedar ka matam

Shabbir ko bhi naz tha kirdar pe jis ke
Konain bhi hairan hay eesar pe jis ke
Matam hay ye us sahib e eesar ka matam

Har hukm e Sheh wala pe sar jis ne jhukaya
Wo jis ne itaet ke fareezay to nibhaya
Us Syed e Konain ke ghamkhawar ka matam

Jab tashna dahan bachon ne ro ro ke bulaya
Wo danton se mashkeeza uthaey huay aaya
Karta hua ashkon se dilafgar ka matam

Bhai ko samajhta tha jo aaqa ke barabar
Jo ho gaya qurban Hussain ibne Ali par
Hay shah ke us aashiq o hubdar ka matam

Jo rota raha mashk kalejay se lagaye
Jis sher ke bazo bhi qalam ho gaye aaye
Jo kar na saka Syed e Abrar ka matam

Sardar ka ye moajza dekhay zara dunya
Har mulk may har shahr may ab hota hay barpa
Ik dasht may ujrri hui sarkar ka matam

Majlis may jalooson may azakhno ke andar

==========================
Bhai ki itaet se kabhi sar na uthaya
Us ashiq e Shabbir dilafgar ka matam
Abbas ka matam hay wafadar ka matam

Pani na piya nehr pe shanay bhi kataye
Har rukh pe hua Jafer e Tayyar ka matam


Seenay pe sina kha ke hua Akbar e mehro
Karna na mila Bano ko dildar ka matam
Abbas ka matam hay wafadar ka matam

Jab lasha e Hur aaye to Zainab ye pukari
Lo aa ke karo Sheh ke tarafdar ka matam
Abbas ka matam hay wafadar ka matam

Aaye the madinay se rahay Karb e bala may
Shabbir gharibul watan be yar ka matam
Abbas ka matam hay wafadar ka matam

Wada kia ik sar ka bahattar diye fidye
Sardar e jinaa sadiq o dildar ka matam
Abbas ka matam hay wafadar ka matam

Khaima jala zewar luta dar dar phiri mari
Qatra na mila bano ke dildar ka matam
Abbas ka matam hay wafadar ka matam

Bazo pe rasan bal khulay Shaam ka darbar
Zainab ne kiya ahista raqam dar ka matam

Khaime se nikal aayi behan bhai ke gham may
Karti hui Abbas e alamdar ka mata
Abbas ka matam hay wafadar ka matam

عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم 
ہے فوجِ حسینی كے علمدار کا ماتم 

سقائے حرم سیّد و سالار کا ماتم 

جس شیر نے پانی کو ذرا منہ نہ لگایا 
جو نہر پہ پیاسا گیا پیاسا پلٹ آیا 
معصوم سكینہؑ كے وفادار کا ماتم 

شبیرؑ كے لشکر کا علم جس کا علم تھا 
غربت میں جو شبیرؑ کی طاقت کا بھرم تھا 
فرزندِ محمدؑ كے مددگار کا ماتم 

جو اِک نئے انداز سے میدان میں آیا 
بے تیغ کیا شام كے لشکر کا صفایا 
اس شیرِ علی ضیغمِ جی دار کا ماتم 

شبیرؑ کو بھی ناز تھا کردار پہ جس كے 
کونین بھی حیران ہے ایثار پہ جس كے 
ماتم ہے یہ اس صاحبِ ایثار کا ماتم 

ہر حکم شہہِ والاؑ پہ سر جس نے جھکایا 
وہ جس نے اطاعت كے فریضے کو نبھایا 
اس سیّدِ کونینؑ كے غمخار کا ماتم 

جب تشنہ دھن بچوں نے رو رو كے بلایا 
وہ دانتوں سے مشکیزہ اٹھائے ہوئے آیا 
کرتا ہوا اشکوں سے دل افگار کا ماتم 

بھائی کو سمجھتا تھا جو آقا كے برابر 
جو ہو گیا قربان حسین ابنِ علیؑ پر 
ہے شاہؑ كے اُس عاشق و حبدار کا ماتم 

جو روتا رہا مشک کلیجے سے لگائے 
جس شیر كے بازو بھی قلم ہو گئے ہائے 
جو کر نہ سکا سیّدِ ابرار کا ماتم 

سردار کا یہ معجزہ دیکھے ذرا دنیا 
ہر ملک میں ہر شہر میں اب ہوتا ہے برپا 
اِک دشت میں اجڑی ہوئی سرکار کا ماتم 

---------------------------
بھائی کی اطاعت سے کبھی سر نہ اٹھایا 
اُس عاشق شبیرؑ دل افگار کا ماتم 
عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم 

پانی نہ پیا نہر پہ شانے بھی کاتایی 
ہر رخ سے ہوا جعفرِ طیارؑ کا ماتم 

سینے پہ سِنا کھا كے ہوا اکبرِؑ مہرو 
کرنا نہ ملا بانو کو دلدار کا ماتم 
عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم 

جب لاشائے حُر آیا تو زینبؑ یہ پُکاری 
لو آ كے کرو شہہ كے طرفدار کا ماتم 
عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم 

آئے تھے مدینے سے رہے کرب بلا میں 
شبیرؑ غریب الوطن بے یار کا ماتم 
عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم 

وعدہ کیا اِک سر کا بہتر دیئے فدیہ 
سردار جناں صادق و دلدار کا ماتم 
عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم 

خیمہ جلا زیور لٹا دَر دَر پھری ماری 
قطرہ نہ ملا بانو كے دلدار کا ماتم 
عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم 

بازو پہ رسن بال کُھلے شام کا دربار 
زینبؑ نے کیا یوں رقم دلدار کا ماتم 

خیمے سے نکل آئی بہن بھائی كے غم میں
کرتی ہوئی عباسِؑ علمدار کا ماتم
عباسؑ کا ماتم ہے وفادار کا ماتم