Di Sakina ne sada dasht may baba baba
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



دی سكینہ نے صدا دشت میں بابا بابا 
جلد آؤ كہ جلا جاتا ہے خیمہ بابا 

میں وطن جاؤں گی ملنے كے لئے دادی سے 
اِن مظالم سے اگر بچ گئی زندہ بابا 

ویسے امید نہیں ہے كہ میں بچ پاؤں گی 
اِس قدر شمر کا پڑتا ہے طمانچہ بابا 

شمر نے باندھی تھی جس وقت کلائی میں رسن 
قبر میں تڑپا تھا بیشیر کا لاشہ بابا 

سوچتی ہوں كے اگر مر گئی میں زنداں میں 
کون دے گا میری اماں کو دلاسہ بابا 

ہڈیاں پیاس کی شدت سے میری سُوکھ گئیں 
جل رہا ہے میرے سینے میں کلیجہ بابا 

ہائے سجادؑ میرا جکڑا ہے زنجیروں میں 
کس طرح میرا اٹھائے گا جنازہ بابا 

کون غربت پر میری شب میں جلائے گا چراغ 
جب رِہا ہوں كے چلا جائے گا کنبہ بابا 

دستِ شفقت نہ کس نے میرے سر پر پھیرا 
تازیانوں سے دیا لوگوں نے پُرسہ بابا 

میرے عمو سے ترائی پہ یہ کہنا جا کر 
جل گئی آگ كے شعلوں سے سكینہؑ بابا 

اب تو باقی نہیں ہے کوئی سوائے بیمار 
کس طرح ہو گا میرا دفن جنازہ بابا 

بالیاں چھین لیں اعدا نے ہماری آ کر 
دیکھو کانوں سے لہو بہتا ہے تازہ بابا

Di Sakina ne sada dasht may baba baba
Jald aa ke jala jata may khaima baba

May watan jaoon gi milnay ke liye dadi se
In mazalim se agar bach gayi zinda baba

Waise umeed nahi hay ke may bach paoon gi
Is qadar Shimr ka parta hay tamacha baba

Shimr ne bandhi thi jis waqt kalayi may rasan
Qabr may tarpa tha besheer ka lasha baba

Sochti hoon ke agar mar gayi may zindan may
Kon de ga meri amma ho dilasa baba

Hadiyan pyas ki shiddat se meri sookh gayeen
Jal raha hay meray seenay may kalaija baba

Haey Sajjad mera jakra hay zanjeeron may
Kis tarha mera uthaey ga janaza baba

Kon ghurbat par meri shab may jalaey ga chiragh
Jab reha hoon ke chala jaye ga kunba baba

Dast e shafqat na kis ne meray sar par phaira
Taziyano se diya logon ne pursa baba

Meray amoo se tarai pe ye kehna ja kar
Chir gaye aag ke sholon se Sakina baba

Ab to baqi nahi hay koi siwaye beemar
Kis tarha ho ga mera dafn janaza baba

Baliyan cheen leen aada ne hamari aa kar
Dekho kano se lahoo behta hay taza baba