Panch imamo ka raha ban ke sahara Abbas
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Panch imamo ka raha ban ke sahara Abbas

Fatima Zehra ka beta banu Hashim ka qamar
Chowda masoomo ki hay ankh ka tara Abbas

Koyi kia samjhay usay jis ko kahay aale e Nabi
Ham hain ghamkhar zamanay ke hamara Abbas

Khud hi mashkeezay may Abbas ke aa jati furat
Us ko kar detay agar aik ishara Abbas

Teri turbat ke jo zawwar hain batlatay hain
Alqama par hay tera ab bhi ijara Abbas

Sheh ne Abbas ko sompi jo sipah salari
Har zamaa par hay faqat aik hi nara Abbas

Wo to kehye na mila izn e wigha Ghazi ko
Warna kis jang may afwaj se hara Abbas

De ke mashkeeza Sakina se kaha Sarwar ne
Loat ke ran se na aa ga tumhara Abbas

Hasrat o yas se taktay thay haram aur Hussain
Le ke mashkeezi may de maidan sidhara Abbas

Rakh ke sar bao pe Abbas ka kehtay thay Hussain
Sath ghurbat may na yun choro khudara Abbas

Sar barahna jo haram thay sar e nok e sina
Dekhta kaise bhala sharm ka mara Abbas

Chadrain chinnay pe yaad aaya har ik bibi ko
Har tamachay pe Sakina ne pukara Abbas

Sibt e Jafer ho azadari ko kyun harshr ki fikr
Ho ga waan pehlay se mojood hamara Abbas

پانچ اماموں کا رہا بن كے سہارا عباسؑ 

فاطمہ زہراؑ کا بیٹا بنو ہاشم کا قمر 
چودہ معصوموں کی ہے آنکھ کا تارا عباسؑ 

کوئی کیا سمجھے اسے جس کو کہے آلِ نبیؑ 
ہم ہیں غمخوار زمانے كے ہمارا عباسؑ 

خود ہی مشکییزے میں عباسؑ كے آ جاتی فرات 
اس کو کر دیتے اگر ایک اشارہ عباسؑ 

تیری تربت كے جو زوّار ہیں بتلاتے ہیں 
علقمہ پر ہے تیرا اب بھی اِجارا عباسؑ 

شہہؑ نے عباسؑ کو سونپی جو سپہ سالاری 
ہر زمانے میں فقط ایک ہی نعرہ عباسؑ 

وہ تو کہیے نہ ملا اذن وِغا غازیؑ کو 
ورنہ کس جنگ میں افواج سے ہارا عباسؑ 

دے كے مشکیزہ سكینہؑ سے کہا سرورؑ نے 
لوٹ كے رن سے نہ آئے گا تمہارا عباسؑ 

حسرت و یاس سے تکتے تھے حرم اور حسینؑ 
لے كے مشکییزہ جو میداں کو سِدھارا عباسؑ 

رکھ كے سر بازو پہ عباسؑ کا کہتے تھے حسینؑ 
ساتھ غربت میں نہ یوں چھوڑو خدارا عباسؑ 

سر برھنا جو حرم تھے سرِ نوک سینا 
دیکھتا کیسے بھلا شرم کا مارا عباسؑ 

چادریں چھننے پہ یاد آیا ہر اک بی بی کو 
ہر تمانچہ پہ سكینہؑ نے پکارا عباسؑ 

سبطِ جعفر ہو عزادار کو کیوں حشر کی فکر 
ہو گا واں پہلے سے موجود ہمارا عباسؑ