Ghar se chala tha aik namazi khoon may wapas aaya hay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

گھر سے چلا تھا ایک نمازی 
خون میں واپس آیا ہے 
پِھر سے یتیمانِ زہراؑ پر 


وقت سحر مہراب اَذان سے 
آئی سدا پِھر نوحوں کی 
وارثِ قبلہ زخمی ہوا ہے 
کعبہ جبیں گھر آیا ہے 

زینبؑ سے كلثومؑ سے پوچھے 
پوچھے کوئی حسنینؑ سے یہ 
کوفہ میں اکّیس کا سورج 
کیسی قیامت لایا ہے 

کیسی شقاوت ہے امت کی 
تیغ چلی اُس كے سَر پر 
ہیں مس . . . تھا جس كے گھر کا 
سارے جہاں نے کھایا ہے 

صف میں کھڑے تھے جتنے نمازی 
صف کو بچھائے ماتم کی 
آگے بڑھا اک . . . 
فرشِ اذا بچھوایا ہے 

تھامے ہوا بابا کو گھر میں 
لائے ہیں جب فرزند علیؑ
ہائے کسے کہتے ہیں یتیمی
قسمت نے یہ سمجھایا ہے 

ٹکڑے جگر ہے چاک گریباں
خاک ہے بکھرے بالوں پہ 
بچپن میں عباسؑ كے سَر پر 
غم کا اندھیرا چھایا ہے 

فرشِ عزا سلمان بچھا کر 
کیوں نہ کریں نوحہ ماتم 
سارے عزادارنِ علیؑ کا 
ذکرِ علیؑ سرمایہ ہے