Wo Bas Karbala Hai
Efforts: Abbas



Wo bas Karbala hai, wo bas Karbala hai

Jahan behr-e-sajda falaq bhi jhuka hai
Jahan qasr-e-batil giraya gaya hai

Shariyat ka sajda baqa mangta hai
Ke Kabaa jahan se shifaa mangta hai
Jahan par Khuda bhi basaya gaya hai

Hai jannat jahan Fatima bant ti hai
Wahan maut bhi dekhiye kampti hai
Jahan har yazeedi mitaya gaya hai

Jo apnay Khuda se bhi larta raha hai
Ke Adam ka inkaar karta raha hai
Wo iblees jis jaa jhukaya gaya hai

Hui sajda gah jo zamanay ki khatir 
Muhammad ke betay ke sajday ki khatir 
Jahan arsh Rab ka bichaya gaya hai

Wafaon ki ghairat ke Rab sogaye hain 
Jo kartay thay unka adab sogaye hain
Taharat ka khaima jalaya gaya hai

Jahan dosti dushmani khul rahi hai
Jahan roshni har qadam tul rahi hai
Jahan Hurr ko alaa banaya gaya hai 

Ye Akbar pukaray ye Asghar pukaray
Sar-e-Karbala ye bahatar pukaray 
Jahan jaan dena sikhaya gaya hai

Kiya hai malaayik ne sajda jahan par
Jahan sirf Aah-o-buqa hai zuban par
Jahan khoon-e-Zahra bahaya gaya hai

Ye maqtal mein rutba hua kisko haasil
Jahan Behr-e-khidmat pohanchna tha mushkil
Wahan Bibi Fizza ka saya gaya hai

Jahan roshni ki bichi ek ridaa hai
Jahan sar ba sajda saf-e-ambiya hai
Jahan sar sinaa par uthaya gaya hai

Khuda dekhta hai jissay Mustafa mein
Jissay Bint-e-Khyber ne pala ridaa mein
Sinah pe wo Akbar uthaya gaya hai

Imam-e-Zaman ke sabhi muntazir hain
Khuda ki qasam sab nabi muntazir hain
Jahan un ka maskal banaya gaya hai

وہ بس کربلا ہے ، وہ بس کربلا ہے 

جہاں بہر سجدہ فلک بھی جھکا ہے 
جہاں قصرِ باطل گرایا گیا ہے 

شریعت کا سجدہ بقا مانگتا ہے 
كہ کعبہ جہاں سے شِفا مانگتا ہے 
جہاں پر خدا بھی بسایا گیا ہے 

ہے جنت جہاں فاطمہؑ بانٹتی ہے 
وہاں موت بھی دیکھیے کانپتی ہے 
جہاں ہر یزیدی مٹایا گیا ہے

جو اپنے خدا سے بھی لڑتا رہا ہے 
كہ آدَم کا انکار کرتا رہا ہے 
وہ ابلیس جس جا جھکایا گیا ہے 

ہوئی سجدہ گاہ جو زمانے کی خاطر 
محمدؐ كے بیٹے كے سجدے کی خاطر 
جہاں عرش رب کا بچھایا گیا ہے 

وفاؤں کی غیرت كے رب سو گئے ہیں 
جو کرتے تھے انکا ادب سو گئے ہیں 
طہارت کا خیمہ جلایا گیا ہے 

جہاں دوستی دشمنی کُھل رہی ہے 
جہاں روشنی ہر قدم جل رہی ہے 
جہاں حرؑ کو اعلیٰ بنایا گیا ہے 

یہ اکبرؑ پکارے یہ اصغرؑ پکارے 
سرِ کربلا یہ بہتّر پکارے 
جہاں جان دینا سکھایا گیا ہے 

کیا ہے ملائک نے سجدہ جہاں پر 
جہاں صرف آہ و بُکا ہے زُبان پر 
جہاں خونِ زہراؑ بہایا گیا ہے 

یہ مقتل میں رتبہ ہوا کس کو حاصل 
جہاں بہرِ خدمت پہنچنا تھا مشکل 
وہاں بی بی فضّہ کا سایہ گیا ہے 

جہاں روشنی کی بچھی اِک ردا ہے 
جہاں سر با سجدہ صفِ انبیاء ہے 
جہاں سَر سِنا پر اٹھایا گیا ہے 

خدا دیکھتا ہے جسے مصطفیٰؑ میں 
جسے بنتِ حیدرؑ نے پالا ردا میں 
سِنا پہ وہ اکبرؑ اٹھایا گیا ہے 

امامِ زمانؑ كے سبھی منتظر ہیں 
خدا کی قسم سب نبیؑ منتظر ہیں 
جہاں اُن کا مسکن بنایا گیا ہے