Ghar se jab behr safar Syed e alam niklay
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

1) Ghar Se Jab Bahre Safer Syeda Alam Nikle
Sar Jhukae Huve Badeedae Pur num Nikle
Quesho Farzand kamar baand kay baham Nikle
Rokay Farmaya kay is Shaher se ab hum Nikle
Raat Se Giryae Zehra ki sada aati hai
Dekhein Qismat Hamein kis dasht main lejati hai

2) Ruq Kiya Shah ne sue qabre Shahinshae anam
Bahr Tasleem jhuike Muttasile babe salam
Izn padkar jo gaye qabr ke nazdik Imam
Arz ki aaya hai aaj aakhri Ruksat kou Ghulam
Yea Makaan hum se ab ai shahe zaman choot tha hia
Aaj Hazrat kay Nawase say watan choot tha hai

3) Chaain Se Sub hai gharon main mujhe milta nahi chain
Saqt aafat main hai ab apkaa ye noorul aain
Tukde dil hota hai jab rokay haram karte hai bain
Nanhay Bachcho kou bhala lekay kidhar jayea Hussain
Shahr mein Chain na Jungle main amaan milti hai
Dekhiyea Qabr musafir kou kahan milti hai

4) Ab mere sar ke liye teiz hue hain khanjar
Ahle keen Shar pe kamar Bandhe Hain ya qaire bashar
Aapne di thi isi roze ki Amma ko Qabar
Waleda roye thee do roz talak peet ke sar
Is Nawase ko magar bhool n jana Hazrat
Zibha ke waqt madad karne ko aana Hazrat

5) Yea who din hai kay parinde bhi nahien chordte Ghar
Mujh ko dar pesh hain in rozon main aafat ka safar
Hai kaheen Qatl ka Samaan kabhi lut jaane ka dar
Saat hai bachon ka ay Badeshahhe Jinoo Bashar
Tang jeene se hoon paas apnay bulalo Naana Apani
Turbat main Nawase kou Chipalo Nana

6) Yea Bayan Karkay Jo Taveez Say Liptay Sarwar
Youn Hilli Qabr ke tharrai Zaree e anwar
Aayi turbat se ye awaazey habib –e dawar
Teri Gurbat kay main Sadqe Meray Mazloom pisar
Koyi samja na meri Gooud kaa Paala tujko
Hai aada nae Madinay say Nikala Tujko

7) Aai Mere Gaysuon o wale mere Sabir Shabbir
Mere bekas mere Mazloom Musafir Shabbir
Na Raha koye tera yawar o nasir Shabbir
Hai Ai gor –e-gareeba kay mujver shabbir
Tu jaahain Jayeaga Pyare wahin chalta Hoon main
Khaak Udataa huva Turbat say Nikalta Hoon Main

8) Kayee din Say Teri Maadar kou Nahi qabr main Chain
Aaye thi Shab kou mera paas yea Karti huvi Bain
Ghar mera Lut taa hai Faryaad Rasool us Saqlain
Subha kou apan watan Chord ke Jaata hai Hussain
Kahne aayi hoon ke muh Qabr se modun gi main
Apnay Bache ko akela thou na Chodon gi main

9) Sunkey Yea Shah Nay Kiya aakhri Ruksat ka Salam
Nikle rote huve jab roza –e Anwar say Imam
Sheh Se usdam Yeh Kiya ro ro ke Zainab nay Kalam
Qabr Par Maa ki Mujay Laychalo Ya Shahey anam
Log Hamrah hai mahmihein kyou kar Roowo
Maa ki turbat say phir ek baat lipat kar roowoh

10) Maa ki turbat pe gayea Shah ba chashme qoon baar
Utri Mahmil se basad ah o fugahaan Zainabe Zaar
Dourd Kar Qabr Se Lipte Jo Imame Abraar
Haat Zehra ke Lahad Se Nikal aayea Ek baar
Aayi Aawaz Na Ro Dil ko Qalaq Hota hai
Qabr Hilti hai Kaleja mera Shaq Hota Hai

11) Haan Bulawo Mera Abbas e-Dilawar hai Kidhar
Wo fida Hai mere Bache pe main sadqe Uspar
Shikam e-ghair se hai par who wera hai pisar
Yea Sad sun ke biradar ko pukare Sarwar
Abhi Rahwar ko aage na badhao Bhai
Yaad Farmati hai Amma idhar aawo bhai

12) Aake Abbas nay Sar Rakhdia Paeene Mazaar
Aayi Zehra Ki Sada Mein Teri Gurbat Ke Nisar
Apne Pyaron Ke Barabar Mein Tujhe Karti Hou Pyar
Dhayaan Bhai ki Hifaazat ka rahe aai Dildaar
Kohi Gurbat main Usay Maar na daale Baita
Mera Shabbir Hai ub Teray Hawley Baita

گھر سے جب بہرِ سفر سیدِ عالم نکلے
سَر جھکائے ہوے بادییدہءِ پُر نم نکلے
خیوش و فرزند کمر باندہ کے پیہم نکلے
روکے فرمایا کے اِس شہر سے اب ہم نکلے
رات سے گریائے زہراؑ کی صدا آتی ہے
دیکھیں قسمت ہمیں کس دشت میں لے جاتی ہے

رخ کیا شہہؑ نے سوئے قبرِ شہنشاہِ انام
بھر تسلیم جحویکی موتتاسیلی بیب سلام
اِذْن پڑھکر جو گئے قبر كے نزدیک امام
ارض کی آیا ہے آج آخری روکسات کو غلام
یہ مکان ہم سے اب آئی شاہی زمان چوت تھا حیا
آج حضرت کے ناواسی سے وطن چوت تھا ہے

چین سے سب ہے گھروں میں مجھے ملتا نہیں چین
ساقط آفت میں ہے اب اپکا یہ نورول آئیں
ٹکڑے دِل ہوتا ہے جب روکے حرام کرتے ہے بین
ننھے بچو کو بھلا لے کے کدھر جاییا حسین
شہر میں چین نا جنگل میں امان ملتی ہے
دیخییا قبر مسافر کو کاہان ملتی ہے

اب میرے سَر كے لیے تیز ہوئے ہیں خنجر
اہل کی شَر پہ کمر باندھے ہیں یا قایری بشر
آپ نے ڈی تھی اسی روزہ کی اماں کو قبر
والیدا روئے تھی دو روز تلک پیٹ كے سَر
اِس ناواسی کو مگر بھول ں جانا حضرت
ذبہ كے وقت مدد کرنے کو آنا حضرت

ہ ہو دن ہے کے پرندے بھی نہیں چوردتی گھر
مجھ کو دَر پیش ہیں ان روزوں میں آفت کا سفر
ہے کہیں قتل کا سامان کبھی لٹ جانے کا دَر
سات ہے بچوں کا اے بادیشاہی جینو بشر
تنگ جینے سے ہوں پاس اپنے بلالو نانا اپنی
تربت میں ناواسی کو چیپالو نانا

یہ بیان کرکے جو تعویذ سے لپٹے سرور
یوں حیلی قبر كے تھارای ضریع انور
آئی تربت سے یہ اوازیی حبیب –ی دوار
تیری غربت کے میں صدقے میرے مظلوم پسار
کوئی سمجھا نا میری جوود کا پالا تجھ کو
ہے ادا نئی مدینے سے نکالا تجھ کو

آئی میرے جایسوون و والے میرے صابر شبیر
میرے بیکاس میرے مظلوم مسافر شبیر
نا رہا کوئے تیرا یاور و ناصر شبیر
ہے آئی غور –ی-جاریبا کے موجور شبیر
تو جاحاین جاییاجا پیارے وہیں چلتا ہوں میں
خاک وداتا ہوا تربت سے نکلتا ہوں میں

کئی دن سے تیری مدار کو نہیں قبر میں چین
آئے تھی شب کو میرا پاس یہ کرتی ہوئی بین
گھر میرا لٹ تا ہے فریاد رسول اس ثقلین
صبحا کو اپن وطن چھوڑ كے جاتا ہے حسین
کہنے آئی ہوں كے منہ قبر سے مودون گی میں
اپنے بچے کو اکیلا تھو نا چودوں گی میں

سونکیی یہ شاہ نئے کیا آخری روکسات کا سلام
نکلے روٹ ہوے جب روزہ –ی انور سے امام
شہہ سے اُس دم یہ کیا رَو رَو كے زینب نئے كلام
قبر پر ماں کی مجھے لےچالو یا شاحیی انعم
لوگ ہمراہ ہے ماحمیحئین کیوں کر رووو
ماں کی تربت سے پِھر اک بات لپٹ کر روووح

ماں کی تربت پہ گئے شاہ با چشمی قون باڑ
اتری ماحمیل سے بسد آہ و فوجاحان زاینابی زار
دورد کر قبر سے لپٹے جو یمامی ابرار
ہات زہرہ كے لحد سے نکل آئی اک باڑ
آئی آواز نا رَو دِل کو قالاق ہوتا ہے
قبر ہلتی ہے کلیجہ میرا شاق ہوتا ہے

ہاں بولاوو میرا عباس ی-دیلاوار ہے کدھر
وہ فدا ہے میرے بچے پہ میں صدقے اس پر
شکم ی-گھایر سے ہے پر ہو ویرا ہے پسار
یہ سیڈ سن كے بیرادار کو پکارے سرور
ابھی راحوار کو آگے نا بڑھاؤ بھائی
یاد فرماتی ہے اماں ادھر آوو بھائی

آکے عباسؑ نے سَر راخدیا پاینی مزار
آئی زہرہ کی سدا میں تیری غربت كے نثار
اپنے پیاروں كے برابر میں تجھے کرتی ہو پیار
دھیان بھائی کی حفاظت کا رہے اے دلدار
کوئی غربت میں اسے مار نہ ڈالے بیٹا
میرا شبیرؑ ہے اب تیرے حوالے بیٹا