Sar e abbas ata hai
Efforts: Dua Batool



Sar e Abbas (a.s)

Abbas haye abbas haye abbas
Abbas haye abbas haye abbas
Abbas haye abbاس
Sar e abbas ata hai 
Sar e abbas ata hai
Sar e abbas ata hai

Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar	
Sambhalo bibion chadar
Sar e Abbas (a.s) ata hai            
Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar
Sambhalo bibion chadar	Sar e Abbas (a.s) ata hai            

Bula lain Sakina (a.s) ko	
bula lain Sakina (a.s) ko
Koi zindaan say jakar 	
sar e abbas ata hai

Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar	
Sambhalo bibion chadar
Sar e Abbas (a.s) ata hai            

1. Yeh ghairat ka khuda hai Iski ghairat 
Ka taqaza tha
Khula sar dekh kay naizay say jo yeh  
Sar girata tha	
Aray nahi hai pas gar chadar 
To rakh lo hath hi sar par
Sar e Abbas (a.s) ata hai
Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar 
Sambhalo bibion chadar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai

2. Bhara hoga laho ankhon may uski 
Khud hataon gi
May bachpan ki tarah say bhai ka 
Chehra dholaon gi
Agar mumkin hai to deday 
Koi pani mujhay la kar
Sar e Abbas (a.s) ata hai
Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar 
Sambhalo bibion chadar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai

3. Haye, mujhay uthna paray ga bibion 
Tazeem ko uski
May ma ummul baneen (a.s) ki simt say
Ghazi (a.s) ko chumo gi
Aray sambhaly sar 
Koi Aoun o Mohammad kay Yahan a kar
Sar e Abbas (a.s) ata hai
Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar 
Sambhalo bibion chadar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai

4.	Issi ehsas say usnay nazar 
Apni ghukai hai
Ussay maloom yeh kitna 
Ghairatmand bhai hai 
Chupaiy kis tarhan Zainab (a.s)
Paray hain neel shanon par
Sar e Abbas (a.s) ata hai
Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar 
Sambhalo bibion chadar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai

5. Mila pani ussay pocha to Kiya 
batlai gi Zainab (a.s)
bhala uski bhatiji ko kahan say 
laiay gi Zainab (a.s)
aray nigahain uski dohnday gi
Sakina (a.s) ko yahan akar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai
Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar 
Sambhalo bibion chadar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai

6. Kay sab ki jholion may apnay apnay
Ladlon kay sar
Rukkaiya, Umm e Laila, Umm e Farwa 
Madar e Asghar
Uthi kehtay huay har ma
Sar apnay lal ka rakh kar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai
Kaha Zainab (a.s) nay yeh ro kar 
Sambhalo bibion chadar 
Sar e Abbas (a.s) ata hai

7. Takkalum shamion ki aurtain bhi 
Roti jati hain 
Haye Ali (a.s) ki betian Jaldi say zakhmo
Ko chupati hain
Khari hai hath phailaiy huay khud
Zainab e Muztar (a.s)
Sar e Abbas (a.s) ata hai
Sar e Abbas (a.s) ata hai

بلا لائے سکینہؑ کو۔۔۔۲، کوئی زنداں سے جا کر
سرِ عباسؑ آتا ہے
کہا زینبؑ نے یہ رو کر، سنبھالو بیبیوں چادر
سرِ عباسؑ آتا ہے

بھرا ہو گا لہو آنکھوں میں اُ سکی خود ہٹاوں گی
میں بچپن کی طرح سے بھائی کا چہرہ دھلاوں گی
اگر ممکن ہے تو دے دے کوئی پانی مجھے لا کر
سرِ عباسؑ آتا ہے

یہ غیرت کا خدا ہے اُسکی غیرت کا تقاضا تھا
کھلا سر دیکھ کے نیزے سے جو یہ سر گراتا تھا
نہیں ہے پاس گر چادر تو رکھ لو ہاتھ ہی سر پر،
سرِ عباسؑ آتا ہے

اسی احساس سے اُ س نے نظر اپنی جھکائ ہے
اُسے معلوم ہے یہ کتنا غیرت مند بھائی ہے
چھپائے کس طرح زینبؑ پڑے ہیں نیل شانوں پر
سرِ عباسؑ آتا ہے

مجھے اُٹھنا پڑے گا بیبیوں تعظیم کو اُسکی
میں ماں امالبنینؑ کی سمت سے غازیؑ کو چومو گی
سنبھالے سر کوئی عونؑ و محمدؑ کے یہاں آکر
سرِ عباسؑ آتا ہے
 
تھے سب کی جھولیوں میں اپنے اپنے لاڈلوں کے سر
رقیہؑ، ام لیلیٰؑ،ام فرواؑ، مادرِ اصغرؑ
اُٹھی کہتے ہوءے ہر ماں  سر اپنے لعل کا رکھ کر
سرِ عباسؑ آتا ہے

ملا پانی اُسے پوچھا تو کیا بتلائے گی زینبؑ
بھلا اُسکی بھتیجی کو کہاں سے لائے گی زینبؑ
نگاہیں اُسکی ڈھونڈیں گی سکینہؑ کو یہاں آ کر
سرِ عباسؑ آتا ہے

تکلم شامیوں کی عورتیں بھی روتی جاتی ہیں
علیؑ کی بیٹیاں جلدی سے زخموں کو چھپاتی ہیں
کھڑی ہے ہاتھ پھیلائے ہوئے خود زینبِؑ مضطر
سرِ عباسؑ آتا ہے