Ajeeb qaidi hin saray Quran parhday hin
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



عـــجیب قـــــیدی ہیں، ســـــارے قـــــرآن پڑھــتے ہیں
ہر کــــوئی پانی رُوتا ہے، وہ خون بیٹھے روتے ہیں

محــــسوس ایسے ہوتا ہے ، یہ پردہ دار گھــــــر کے
کچھ بھی نہیں وہ مانگیں ، چند برقــعے صرف مانگتے ہیں

ہر گلے میں رســـــن ہے ، رَسیوں سے خون بہتا ہے
سچ پوچھے تُو جو ھندہ ، بے جرم سـارے لَگتے ہیں

ایک ھے صـغـــــیر قـــــیدن ، ناپ جس کا ہے سکــــــــینہؑ
دُر دیکھ دیکھ کہتی ، دُر میرے رَمـــــلہ لگـتے ہیں

تُوں کہتی ہے کہ میرا ، مُرشــــد حســــــــین سُوھنا
ناراض جے نہ تُو ہو ، اے سب حســــین کگتے ہیں

کئی گھنٹے تھی گئے ھــــــــــن، کوئی نئیں گلینــــدا
کَھل کَھل کے قـــــیدیاں دے، لگـــدا اے پیر دُکھدے ھن

رَمـــــــــــــــلہ کے بین سُـن کے ، دربار آئی ھندہ
سر پیٹ کے وہ بولی ، ســــــردار یوں نہ لُٹتے ہیں

نوشــــاد بنتِ زھـــــرہؑ ، ھنــــدہ کــــو دیکــــھ رو دی
پہـــــچان میں ہوں زیینبؑ ، نہ میرے بال چُھپتے ہیں

-----------------------------------------
عـــجیب قـــــیدی ہن، ســـــارے قـــــرآن پڑھــدے ھن
ہر کــــوئی پانی رُوندا، اَو خــــــــــون بیٹھے روندے ھن

محــــسوس ایویں تھیندائے، اِیناں پردہ دار گھــــــر دے
بیا کُج نئیں اُو منگدے، چند برقــعے بیٹھے منگدے ھن

ہر گل دے وچ رَســـــن اے، رَسیاں چُوں خُـــون وہندائے
سچ پُچھدی ایں جے ہنداں، بے جرم سـارے لَگدے ھن

اِک ھے صـغـــــیر قـــــیدن، جیندا اے ناں سکــــــــینہؑ
دُر مینڈے ویکھ آہندی، دُر مینڈے رَمـــــلہ لگــــدے ھن

تُوں آہندی ایں جے میرا، مُرشــــد حســــــــین سُوھنا
ناراض جے نہ تھیویں، اے قـُــــل حســــین ڈِسدے ھن

کئی گھنٹے تھی گئے ھــــــــــن، کوئی نئیں گلینــــدا
کَھل کَھل کے قـــــیدیاں دے، لگـــدا اے پیر دُکھدے ھن

رَمـــــــــــــــلہ دے وَین سُـــــــــن کے، دربار آئی ہنداں
چـــــــــادر لہا کے رو پئی، ســــــردار اینج نہ لُٹدے ھن

نوشــــاد بنتِ زھـــــرہ، ہنــــداں کُــــوں ویکــــھ رَو پئی
پہـــــچان میں ہاں زیینب، نہ مینــــڈے وال لُکـــدے ھن