Khoon Barsa
Efforts: Syed Ali Mohammad Jafri



Khoon barsa

Khoon barsa

Khoon barsa na barasna tha na badal barsey
Ek ek qatrey ko pani ke shah-e-deen tarsey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey

Payaas jab had se barhi ro key sakina ne kaha
Door kitni hai chacha nehar batao ghar sey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey

Ab kahan khak pe bethi ho sakina uthho
Koun aaya hai palat kar jo gaya run ghar sey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey

Ghurkiyaan shimer l.a ki khaeen jo kiya baap ko yaad
Kaan ke dard sey roi to tamanchey barsey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey

Abhi Shabbir hai zinda waheen thehro Zainab
Tum ko Akber ki qasam tum na nikalna ghar sey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey

Merey nana ke madiney tujhey Zainab ka salam
Thokarain kha key palat aai hoon main dar dar sey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey

Haq o batil ka ho takraao to dil lartey hain
Jung ye jeeti nahi jaati kabhi lashkar sey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey
Ek ek qatrey ko pani ke shah-e-deen tarsey
Khoon barsa
Khoon barsa na barasna tha na badal barsey
Khoon barsa

خون برسا

خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے
ایک اک قطرے کو پانی كے شہہِ دیںؑ ترسے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے

پیاس جب حد سے بڑھی رو کے سكینہؑ نے کہا
دور کتنی ہے چچا نہر بتاؤ گھر سے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے

اب کہاں خاک پہ بیٹھی ہو سكینہؑ اٹھو
کون آیا ہے پلٹ کر جو گیا رن گھر سے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے

گُھڑکیاں شمر کی کھائیں جو کیا باپ کو یاد
کان كے درد سے روئی تو تمانچے برسے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے

ابھی شبیرؑ ہے زندہ وہیں ٹھہرو زینبؑ
تم کو اکبرؑ کی قسم تم نہ نکلنا گھر سے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے

میرے نانا كے مدینے تجھے زینبؑ کا سلام
ٹھوکریں کھا کے پلٹ آئی ہوں میں در در سے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے

حق و باطل کا ہو ٹکراؤ تو دل لڑتے ہیں
جنگ یہ جیتی نہیں جاتی کبھی لشکر سے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے

ایک اک قطرے کو پانی كے شہہِ دیںؑ ترسے
خون برسا
خون برسا نہ برسنا تھا نہ بادل برسے