Abbas Abbas Abbas, ya Abbas
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



عباسؑ عباسؑ عباسؑ ، یا عباسؑ 

بیٹا ہے تو علیؑ کا زہراؑ کی تو دعا ہے 
شبیرؑ تیرا آقا امّ البنینؑ ماں ہے 
ہر صورت و چلن میں حیدرؑ سے نہ جدا ہے 
تا حشر تجھ سے قائم دُنیا میں بس وفا ہے 

برچھی جگر پہ کھائے اکبرؑ بھی سو رہے ہیں
تپتی زمیں پہ قاسمؑ کے ٹکڑے چن رہے ہیں
پکڑے کمر کو اپنی مقتل میں دیکھتے ہیں
تنہا میں رہ گیا ہوں رورو کے کہہ رہے ہیں

جلتے ہوئے ہیں خیمے لٹتی ہوئی ردائیں 
سہمے ہوئے ہیں بچے زینبؑ کسے بلائیں 
عباسؑ تم کہاں ہو عباسؑ تم کہاں ہو 
رورو کے دِل کو تھامے دیتی ہیں یہ صدائیں 

شام غریباں میں جس کا کرتا بھی جل گیا ہے 
کانوں سے بالیاں بھی ہائے شمر لے گیا ہے 
اِس بےبسی سے مولاؑ بچی کوئی نہ ترسے 
فرش عزا پہ روکر ہر دِل یہ کہہ رہا ہے 

اے فاطمہؑ کے پیارے حیدرؑ کے یہ دلارے 
زینبؑ کے ماہ پارے ہاشم کے گھر کے تارے 
اک بار ہم کو آقا کرب وبلا بلاؤ 
دِل کی مراد سب کی آ کر تجھے سنائیں 

تقدیر کے ستائے تیرے در پہ سر جھکائے 
اشکوں کی التجا ہم غازیؑ تجھے سنائے 
بیمار سارباں کے زخموں کا واسطہ ہے 
جتنے بھی خستہ دِل ہیں مولا شِفا وہ پائے

Abbas Abbas Abbas, ya Abbas
 
1) Beta hai tu Ali Ka Zahra ki tu dua hay
   Shabbir tera aaqa Ummul Baneen maa hay
   Haar surat-ochalan may Haider say na juda hay
   Ta hashar tuj say qayam duniya main bas wafa hay
 
2) Barchi jighar pay khaaye Akbar bhi sow rahay hay
   Tapati zameen pay Qasim kay tukaray chun rahay hay
   Pakaray qamar ko apani maqtal main dekha tay hay
   Tanha main rehay gaya hun roro kay keh rahay hay
 
3) Jaltay huway hai khaimay lutti huwi ridaaye
   Sehemeay huway hai baachay Zainab kisay bulaaye
   Abbas tum kahaan ho Abbas tum kahaan ho
   Roro kay dil ko thaamay dayti hai yah sadaaye
 
4) Shaam-e-ghariban main jis ka kurta jalgaya hay
   Kaano sai baaliya bi haaye Shimaar legaya hay
   Is bebasi seh Mola bacchi koyi na tarsay
   Farsh-e-Aza pay rokar har dil yeh kehraha hay
 
5) Ay Fatima kay pyaaray Haider kay yeh dulaaray
   Zainab kay maahaparay Hasshim kay ghaar kay taarey
   Ek baar humko aakaa Karbobala bulaawo
   Dil ki muraad sabh ki aakar tuhai sunaaye
 
6) Taqdeer kay sataye teray dhaar pay saar jhukaaye
   Ashko ki ilteja hum Ghazi tujhay sunaaye
   Beemar-e-saaribaan kay zakhmo ka waasta hai
   Jitnay bhi khasta dil hai Mola shifa woh paaye