Yabnaz Zehra
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Yabnaz Zehra

Nehr e Alqama pe ik udasi hay
Dukhtar e Hussain bhooki pyasi hay
Bawafa ke ho gaye qalam shanay
Ghamzada Rasool ki nawasi hay
Yabnaz Zehra

Ya Hussain aakhri nishan e Panjtan
Tashnagi se hay nidhal teri anjuman
Taptay ban may aayi kaisi zulm ki khizaan
Asr ke qareeb lut gaya tera chaman
Yabnaz Zehra

Bezuban ki lash qabr se nikal kar
Zalimon ne kar diya juda badan se sar
Arsh kanpnay laga laraz gaye zameen
Gir parren Ruba aah bhar ke khaak par
Yabnaz Zehra

Asr ko tamam sar qalam kiye gaye
Sham ko khayam bhi jala diye gaye
Lut gaya hay mal o zar ridayain chin gayeen
Qaid Abid e hazeen bana diye gaye
Yabnaz Zehra

Ado ne ki hain Abid e hazeen pe sakhtian
Galay may toaq paoon may bhi dali berriyan
Jala diya jo bistar e mareez e Karbala
Hili zameen e dasht aayen surkh andhiyan
Yabnaz Zehra

Fikr io Mujeeb ke Taqi ki hay zubaan
Maqsad e aza jo ho raha hay yun bayan
Shah e Karbala ke zaer e saya e karam
Madha khawan aik hay to ik hay noha khawan
Yabnaz Zehra

یاابن الزہراؑ 

نہرِ علقمہ پہ اِک اُداسی ہے 
دختر حسینؑ بھوکی پیاسی ہے 
باوفا كے ہو گئے قلم شانے 
غمزدہ رسولؐ کی نواسی ہے 
یاابن الزہراؑ 

یا حسینؑ آخری نشانِ پنجتن 
تشنگی سے ہے نڈھال تیری انجمن 
تپتے بن میں آئی کیسی ظلم کی خِزاں 
عصر كے قریب لٹ گیا تیرا چمن 
یاابن الزہراؑ 

بے زبان کی لاش قبر سے نکال کر 
ظالمون نے کر دیا جدا بدن سے سر 
عرش کانپنے لگا لرز گئی زمین 
گر پڑیں رباب آہ بھر كے خاک پر
یاابن الزہراؑ 

عصر کو تمام سر قلم کیے گئے 
شام کو خیام بھی جلا دیئے گئے 
لٹ گیا ہے مال و ذر ردائیں چِھن گئیں 
قید عابدِؑ حزین بنا دیئے گئے 
یاابن الزہراؑ 

عدو نے کی ہیں عابد حزین پہ سختیاں
گلے میں طوق پاؤں میں بھی ڈالی بیڑیاں 
جلا دیا جو بسترِ مریضِ کربلا 
ہلی زمینِ دشت آئیں سرخ آندھیاں 
یاابن الزہراؑ 

فکر ہے مجیب كی تقی کی ہے زباں
مقصدِ عزا جو ہو رہا ہے یوں بیاں
شاہ کربلا كے زیر سایہءِ کرم 
مدح خوان ایک ہے تو اِک ہے نوحہ خواں
یاابن الزہراؑ