Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi



اے شہیدِ انسانی ، اے شہیدِ قرآنی
آج تک دلوں پر ہے تیری ہی حکمرانی
اِس طرح سے امّت نے ، کی تھی تیری مہمانی
ذبح کر دیا تجھ کو اور نہیں دیا پانی
اے شہیدِ انسانی ، اے شہیدِ قرآنی

جانِ مصطفیؐ تم ہو ، جانِ مرتضیؑ تم ہو
جانِ فاطمہؑ تم ہو ، روحِ انبیاء تم ہو
ناز ہے شریعت کو ، مرضیءِ خدا تم ہو
تم معمہءِ کُل ہو ، جز شریعِ قرآنی

بھائی كے کٹے شانے ، اُف نہیں کیا تو نے
چُھوٹے اقربا سارے ، اُف نہیں کیا تو نے
ہائے جل گئے خیمے ، اُف نہیں کیا تو نے
لب کھلے تو نیزے پر ، بولتے تھے قرآنی

مرقد نبیؐ چُھوٹا ، قبر فاطمہؑ چُھوٹی
روضہءِ حسنؑ چُھوٹا ، پیاری دلربا چُھوٹی
اِس طرح مدینے سے ، آلِ مصطفیؐ چُھوٹی
شہر سارا سُنساں تھا ، چھا گئی تھی ویرانی
اے شہیدِ انسانی ، اے شہیدِ قرآنی

چھہ مہینے والے نے ، تیر کھا كے دم توڑا
تیرہ سالہ قاسمؑ کا ، خوں میں بھر گیا جوڑا
جادہءِ حقیقت میں ، نہ کسی نے منہ موڑا
کیسی کیسی جانوں کی ، پیش کر دی قربانی
اے شہیدِ انسانی ، اے شہیدِ قرآنی

دھوپ میں قیامت کی ، تیرا آخری سجدہ
انتہا کی منزل تھی ، تیرا آخری سجدہ
فاطمہؑ نہ بھولے گی ، تیرا آخری سجدہ
پُشت پر ستم گر تھا ، خاک پہ تھی پیشانی
اے شہیدِ انسانی ، اے شہیدِ قرآنی

کربلا کی منزل بھی ، کیا عجیب منزل تھی
پیر اور جوانوں میں ، ننھی جاں بھی شامل تھی
بعدِ عصر زینبؑ کو ، سب سے سخت مشکل تھی
بھوک و پیاس کا سہنا ، قافلے کی نگرانی
اے شہیدِ انسانی ، اے شہیدِ قرآنی

ایک دو پہر ہی میں ، گھر اجڑ گیا تیرا
دین بچ گیا لیکن ، کچھ نہیں بچا تیرا
سر كے بل زیارت ہو ، ہے رضا کا یہ منشا
ہند میں پریشاں ہے ، خادمِ خُراسانی
اے شہیدِ انسانی ، اے شہیدِ قرآنی

Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani
Aaj tak dilon par hay teri hi hukumrani

Zibah kar diya tujh ko aur na diya pani
Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani

Marqad e Nabi choota, qabr e Fatimi chooti
Roza e Hasan choota, Pyari dilruba chooti
Is tarha madinay se, aal e Mustafa chooti
Shahr sara sunsaan tha, cha gayi thi veerani
Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani

Cheh mahinay walay ne, teer kha ke dam torra
Tera sala Qasim ka, khoon may bhar gaya jorra
Jadae e haqeeqat may, na kisi ne muh moora
Kaisi kaisi janon ki, pesh kar di qurbani
Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani

Dhoop may qayamat ki, tera aakhri sajda
Inteha ka manzil thi, tera aakhri sajda
Fatima na bhoolay gi, tera aakhri sajda
Pusht par sitamgar tha, khak par thi peshani
Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani

Karbala ki manzil bhi, kia ajeeb manzil thi
Peer aur jawani may, nanhi jaan bhi shamil thi
Baad e asr Zainab ko, sab se sakht mushkil thi
Bhook o pyas ka sehna, qafilay ki nigrani
Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani

Aik do pahar hi may, ghar ujarr gaya tera
Deen bach gaya laikin, kuch nahi bacha tera
Sar ke bal ziarat ho, hay Raza ka ye mansha
Hind may pareshan hay, khadim e Khurasani
Aey shaheed e insani, aey shaheed e Qurani