Meray Ghazi kahan ho
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Meray Ghazy kahaan ho

Teri jageer se, chaal para qaafla, meray Ghazi kahaan ho (x2)
Aey meray bawafa, hay behan bayrida, meray Ghazi kahaan ho
 
1) Tujhko dekhe bina, chain aata nahin
   Nokay naiza peh sar tera milta nahin
   May ziyarat karun, kis tarha yeh bataa, meray Ghazi kahaan ho
 
2) Laaj rakhlo behan ki biradar meray
   Khaak maqtal meray sar ka parda banay,
   Hukm daido zara, muntazir hay hawa, meray Ghazi kahaan ho
 
3) Teray bazu mujhe rastay may milay
   Menay chadaar samaj kaar woh saar paar rakhay
   Bazuwo seh tera, poochti hoon pata, meray Ghazi kahaan ho
 
4) Dekh kaar behan ko dasht main nangay saar
   Kya haya aa gaye, chup gaye ho kidhar,
   Khud chali awungi, tum bataado zara, meray Ghazi kahaan ho
 
5) May nay bachpan may lori sunaye tujhe
   May nay chalna sikhaya tha bhaye tujhe
   Raahe pur khaar paar, mujhko chalna sikha, meray Ghazi kahaan ho
 
6) Woh teri laadli woh Sakina teri
   Chalte naaqe seh jab khaak paar gir gaye
   Dekhti reh gaye, woh suway alqama, meray Ghazi kahaan ho
 
7) Jo banay Murtaza may wo ehsas hun
   Bay rida bibiyon ki main Abbas hun
   Tum meri aas thay, aey meray bawafa, meray Ghazi kahaan ho
 
8) Waris-e-Ambhiya ki main humsheer hun
   Aale Haider hun Quran ki tafseer hun
   Koyi Yawar nahi, kisko doon main sadaa, meray Ghazi kahaan ho

میرے  غازیؑ  کہاں  ہو 
تیری  جاگیر  سے چل  پڑا  قافلہ  میرے  غازیؑ  کہاں  ہو
اے میرے  باوفا ہے  بہن  بے ردا میرے  غازیؑ  کہاں   ہو
تیری  جاگیر  سے چل  پڑا  قافلہ میرے  غازیؑ  کہاں  ہو

تجھ کو  دیکھے  بنا چین  آتا  نہیں
نوکِ  نیزے  پہ  سر  تیرا  ملتا  نہیں
میں  زیارت  کروں کس طرح  یہ  بتا میرے غازیؑ  کہاں  ہو

لاج  رکھ لو  بہن  کی  بردار  میرے
خاکِ  مقتل  میرے  سر  کا  پردہ  بنے
حکم  دیدو  ذرا منتظر  ہے  ہوا میرے  غازیؑ  کہاں  ہو

تیرے  بازو  مجھے  راستے  میں ملے
میں نے  چادر  سمجھ  کر  وہ  سر  پر  رکھے
بازؤں سے  تیرا پوچھتی  ہو  پتا میرے  غازیؑ  کہاں  ہو

دیکھ  کر  بہن  کو  دشت  میں  ننگے  سر
کیا  حیا  آگئی چھپ  گئے  ہو  کدھر
خود  چلی  آئوںگی تم  بتادو  ذرا میرے  غازیؑ  کہاں  ہو

میں نے  بچپن  میں  لوری  سنائی تجھے
میں نے  چلنا  سکھایا  تھا  بھائی  تجھے
راہِ  پُر  خار  پر مجھ کو  چلنا سکھا میرے  غازیؑ  کہاں  ہو 

وہ  تیری  لاڈلی  وہ سکینہؑ  تیری
چلتے  ناقے  سے  جب  خاک   پر  گر  گئی
دیکھتی  رہ گئی وہ سوئے  علقمہ میرے  غازیؑ  کہاں  ہو

جو  بنے   مرتضیٰ   میں  وہ   احساس  ہوں
بے ردہ  بیبیوں  کی  میں  عباسؑ  ہوں
تم  میری  آس  تھے اے  میرے  باوفا میرے  غازیؑ  کہاں  ہو 

وارثِ انبیا  کی  میں  ہمشیر  ہوں
آلِ  حیدرؑ  ہوں  قرآں  کی  تفسیر  ہوں
کوئی  یاور  نہیں کس کو  دوں  میں  صدا میرے  غازیؑ  کہاں  ہو