Ye kon gira raiti par
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

کعبہ ہے سیاہ پوش، فلک محو بکاء ہے
یہ گنبد افلاک سے کیوں شور اٹھا ہے
کہرام بقعیہ کی فضائوں میں بپا ہے
یہ کون گرا، ہائے حسینا، ریتی پر

تھا وقت عصر، عرش معلی پہ شور تھا
واہ حسرت، کہ زیں سے زمیں پر کوئی گرا
کانپی زمیں، چشم ملائک کو یوں لگا
قرآن رحل زیں سے سر فرش گر پڑا
دیوار کعبہ بیٹھ گئی، عرش گر پڑا

گرتے ہی اس کے کعبے کی دیوار گر گئی
سر آسماں کا جھک گیا، دستار گر گئی
انسانیت کی دہر میں سرکار گرگئی
زخموں سے چور چور ہے، جھک کر کمان ہے
حیراں ہے موت، خوف نہیں، اطمینان ہے

یہ ہوگیا معلوم، یہ خاصان خدا ہے
یہ کیسا بشر ہے، جو زمانے سے جدا ہے
کونین میں کیوں اس کیلئے حشر بپا ہے
کیوں اس کیلئے عرش معلی پہ ہے ماتم
روتے ہیں نبی، سارے سیاہ پوش ہیں آدم

یہ مرد خدا، شاہ عرب، اعلی نسب ہے
الحمد سے والناس تلک، اس کا ہی سب ہے
بابا کا نسب، ماں کا حسب، اس کا حسب ہے
تیروں کے مصلے پہ جو سجدے میں گرا ہے
اسلام اسی سر سے مدد مانگ رہا ہے

اے شاہ مشرقین، ہمارا سلام لے
حیدر کے زیب و زین، ہمارا سلام لے
زہرہ کے دل کا چین، ہمارا سلام ہے
انسانیت کے دین کا، ایمان کا سلام
کرلے قبول سرور و ریحان کا سلام

Hussain 
Kaba hai siyah posh falak mehv e buka hai
Ye gumbad e aflaak se kyun shor uthha hai
Kohram baqayya ki fizaoon main bapa hai 
Ye koun gira
Haaye hussaina  
Ye koun gira reyti per 

Tha waqt-e-asar arsh-e-mualla pe shor tha 
Wa hasrataa ke zeen se zamin pe koi gira
Kampi zamin chashm-e-malaik ko yun laga
Quran rehl-e-zeen se sar-e-farsh gir para 
Deewar-e-kaba beyth gai arsh gir para
Ye koun gira reyti per 
Ye koun gira 

Girtey hi iske kabey ki deewar gir gai
Sar aasman ka jhuk gaya dastaar gir gai
Insaniyat ki dehar main sarkar gir gai
Zakhmon se choor choor hai jhuk kar kamaan hai 
Heraan hai mout khouf nahi itmenaan hai
Ye koun gira reyti per 
Ye koun gira 

Ye ho gaya maloom ye khasaan-e-khuda hai
Ye kaisa bashar hai jo zamaney se juda hai
Kounain main kyun iss key liye hashar bapa hai
Kyun isskey liye arsh-e-mualla pe hai matam 
Rotey hain nabbi .w.w sarey siyah posh hain adam 
Ye koun gira reyti per 
Ye koun gira 

Ye mard-e-khuda shah-e-arab ala nasab hai
Alhamd se wannas tak iss ka hi sab hai
Baba  ka nasab maan  ka nasab iska hasab hai
Teeron ke mussally pe jo sajdey main gira hai 
Islam issi sar se madad maang raha hai
Ye koun gira reyti per 
Ye koun gira 

Aye shah-e-mashraqian hamara salam lain
Haider  key zaib o zain hamara salam lain
Zahra  ke dil ka chain hamara salam lain
Insaniyat ke deen ka imaan ka salam 
Kar lain qabool sarwar o rehan ka salam
Ye koun gira reyti per 
Ye koun gira