Ao Akbar Sehra Bandho
Efforts: Syed Ali Yahya



آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

کوئی  مسند لا کے بچھا وہ
کوئی آنچل سر پہ چھا  وہ
کوئی  کاجل  سرمہ  لا  وہ
کوئی مہندی رنگ رچا وہ

آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

میرا لال  سدا آباد رہے
دل ماں بہنو کا شاد رہے
سکھی دکھ جکھیو اولاد رہے 
میرے من کی پوری مراد رہے(2)
کوئی نادِ علیؑ دہرا وہ
پوشاک شہانی لا وہ


آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

کوئی چادر  اماں زہرا کی
کوئی پگڑی لاؤ نانا کی
چلو بہنو آؤ اکبر کی
اکبر کے لگاؤ اب مہندی(2)
پھولوں کی سیج سجا وہ
یہ دام و در مہکا وہ

آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

پھولوں کو آبِ کوثر سے
دھلوا کے بوزر و قمبر سے
یہ سحرا لگانا تب سر سے
جب ابر نجف سے آ برسے(2)
عباسؑ کا پرچم لا وہ
سائے میں اسکو بٹھا وہ 
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

کوئی صغرا کو پیغام یہ دو
اکبرؑ کی بہن تم شاد رہو
آنے کی سکت ھو تو آؤ 
اور نیگ تم اپنا لے جاؤ(2)
بھیا کے گلے لگ جا وہ
گونگھٹ دلہن کا اٹھا وہ

آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

کہتی ہے سکینہ خوش ھو کر
دولہا جو بنے بھیا اکبرؑ
میں نیگ میں مانگوں گی گوھر
سر رکھ کے ان کے سینے پر(2)
حق میرا مجھے دلوا وہ
مجھے بندے  نئے پہنا وہ
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

ناگاہ یہ دی حاطف نے سدا
یہ ظلم ہوا اُمِ لیلا
سینے میں لگا اسکے نیزا
ارمان تھا جسکی شادی کا
اکبر ؑکو کفن پہنا وہ
زخموں سے خاک چھڑا وہ(2)

آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

برچھی ھے کلیجے میں ٹوٹی
ہاتھوں میں لگی خوں کی مہندی 
سو ٹکڑے ھوئی سحرے کی لڑی
سرور پہ قیامت کی ھے گھڑی(2)
زینب ؑ کو ہوش میں لا وہ
لو فرشِ عزا  کا بچھا وہ
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

 دو قاصدِ صغرا کو یہ خبر
صغرا کو بتائے وہ جا کر
اکبرؑ تو گئے سو ئے کوثر
کیا تکتی ھے صغرا راہ گزر(2)
مت اُن سے آس لگا وہ
اب فاتحہ انکی  دلا وہ

آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو

ریحان تجھے اکبرؑ کی قسم
مت روک ابھی تو اپنا قلم
یہ بات تجھے کرنا ھے رقم
غم اہلِ عزا کا جس سے ھو کم(2)
اکبر ؑ کا سحرا سنا وہ
خود تڑپو اور تڑپا وہ

آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو
آؤ  اکبرؑ  سحرا  باندھو