Ho Ali Akbar kahan ho Ali Asghar kahan
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Kehti thi rokar ye maa seene may dil hai daba
Aik hai kadyal jawan doosra hai bezuban
Dono sidhare jina dasht may tanha hai maa
Soona hai saara jahan ujdha pada hai makaan
Aankhon se khoon hai rawan
Ho Ali Akbar kahan
Ho Ali Asghar kahan

karti hoo kabse buka dete nahi tum sada
kyon hue mujhse khafa kya hui mujhse khata
jis tarha choote ho tum mujhse mai tum par fida
is tarha koi pisar maa se na hovay juda
dasht may tum meri jaan hogaye kisja niha
ho ali akbar kahan....

meri ummedein gaye mere sahaare gaye
jinko samajhti thi jaan haaye wo pyare gaye
pyaas se thay jan-balab pyaase hi maare gaye
karbobala may wo aaj zulm se maare gaye
haathon se khoon hai rawan tum ko mai paaun kahan
ho ali akbar kahan....

muft jawani teri raayega akbar hui
khaak may posheeda aaj surate asghar hui
sar se rida chin gayi qaid bhi maadar hui
ran may na ab tak ama mujko mayassar hui
tum ho sidhare jahan mujko bulalo wahan
ho ali akbar kahan....

qaima jala ghar luta baad-e-shahe do jahan
ab koi mumkin nahi poochne wala yahan
ay mere roohe rawan ay mere taabo tawan
waadiye ghurbat may aaj chut gayi dono se maa
ek ka gala chid gaya ek ne khayi sina
ho ali akbar kahan....

boli musawwir ye maa gham ki ghata cha gayi
ran may mere sher ko kiski nazar kha gayi
hasliyon wala jo tha usko bhi maut aagayi
ghar ko to veeran kiya karbobala bha gayi
dil may hai ek ke sina teer ne li ek ki jaan
ho ali akbar kahan....

کہتی تھی روکر یہ ماں سینے میں دِل ہے تپاں 
ایک ہے کڑیل جوان دوسرا ہے بے زبان 
دونوں سدھارے جناں دشت میں تنہا ہے ماں 
سونا ہے سارا جہاں اجڑا پڑا ہے مکاں 
آنكھوں سے خون ہے رواں 
ہو علی اکبرؑ کہاں ، ہو علی اصغرؑ کہاں 

کرتی ہوں کب سے بُکا دیتے نہیں تم صدا 
کیوں ہوئے مجھ سے خفا کیا ہوئی مجھ سے خطا 
جس طرح چُھوٹے ہو تم مجھ سے میں تم پر فدا 
اِس طرح کوئی پسر ماں سے نہ ہووے جُدا 
دشت میں تم میری جاں ہوگئے کس جا نہاں 
ہو علی اکبرؑ کہاں ، ہو علی اصغرؑ کہاں 

میری امیدیں گئیں میرے سہارے گئے
جن کو سمجھتی تھی جاں ہائے وہ پیارے گئے 
پیاس سے تھے جاں بہ لب پیاسے ہی مارے گئے 
کرب وبلا میں وہ آہ ظلم سے مارے گئے 
ہاتھوں سے خوں ہے رواں تم کو میں پاؤں کہاں 
ہو علی اکبرؑ کہاں ، ہو علی اصغرؑ کہاں 

مفت جوانی تیری رائگاں اکبرؑ ہوئی 
خاک میں پوشیدہ آج صورتِ اصغرؑ ہوئی 
سَر سے ردا چھن گئی قید بھی مادر ہوئی 
رن میں نہ اب تک اماں مجھ کو میسر ہوئی 
تم ہو سدھارے جہاں مجھ کو بلالو وہاں 
ہو علی اکبرؑ کہاں ، ہو علی اصغرؑ کہاں 

خہمہ جلا گھر لُٹا بعدِ شہہِؑ دو جہاں 
اب کوئی ممکن نہیں پوچھنے والا یہاں 
اے میرے روحِ رواں اے میرے تاب و تواں
وادیءِ غربت میں آج چھٹ گئی دونوں سے ماں 
اِک کا گلا چِھد گیا ایک نے کھائی سِناں 
ہو علی اکبرؑ کہاں ، ہو علی اصغرؑ کہاں 

بولی مصور یہ ماں غم کی گھٹا چھا گئی 
رن میں میرے شیر کو کس کی نظر کھا گئی 
ہنسلیوں والا جو تھا اُسکو بھی موت آگئی 
گھر کو تو ویراں کیا کرب وبلا بھا گئی 
دِل میں ہے اِک كے سناں تیر نے لی اِک کی جان 
ہو علی اکبرؑ کہاں ، ہو علی اصغرؑ کہاں