Ashoor ki shab karte thay ashab ye noha
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Ashoor ki shab karte thay ashab ye noha
Hum kaise chale jaye tumhe chor ke Maula

kooze liye haathon may hai masoom se bache
in pyason ko pani ki badi aas hai humse
mar jayenge ye gar hamay jaate hue dekha
hum kaise chale jaye....
ashoor ki shab karte....

maana ke zaroorat nahi hazrat ko hamari
abbas sa bha hai hifazat ko tumhari
zehra ko magar phir bhi hai moo humne dikhana
hum kaise chale jaye....
ashoor ki shab karte....

aankhon may nazar aati hai bachi ki ghareebi
darti hai ke tanhai na badh jaye padar ki
aa aa ke hamay takti hai hasrat se sakina
hum kaise chale jaye....
ashoor ki shab karte....

jis roz se abaad kiya tumne ye jangal
ek bibi yahan roti hai raaton ko musalsal
lagta hai lehad chor ke khud aayi hai zehra
hum kaise chale jaye....
ashoor ki shab karte....

kya aalam e ghurbat nabizadi pe pada hai
kehne ki nahi baat magar humne suna hai
hai aap ki zainab ko bahot hum pe bharosa
hum kaise chale jaye....
ashoor ki shab karte....

seena ali akbar ka bahot choom rahe ho
jo tumpe guzarti hai wo maloom hai humko
hum log bhi to sahibe aulaad hai aaqa
hum kaise chale jaye....
ashoor ki shab karte....

akbar jo diye qaime may ghazi ne jalaye
tha aisa samaa sheh ke bhi aansoo nikal aaye
talwaar galay par rakhe har shaks tha kehta
hum kaise chale jaye....
ashoor ki shab karte

عاشور کی شب کرتے تھے اصحاب یہ نوحہ
ہم کیسے چلے جائیں تمہیں چھوڑ کے مولا

کوزے لئے ہاتھوں میں ہیں معصوم سے بچے
ان پیاسوں کو پانی کی بڑی آس ہے ہم سے
مرجائیں گے یہ گر ہمیں جاتے ہوئے دیکھا
ہم کیسے چلے جائیں۔۔۔
عاشور کی شب کرتے ۔۔۔

مانا کہ ضرورت نہیں حضرت کو ہماری
عباس سے بھائی ہیں حفاظت کو تمہاری
زہرا کو مگر پھر بھی ہے منہ ہم نے دیکھانا
ہم کیسے چلے جائیں۔۔۔
عاشور کی شب کرتے ۔۔۔

آنکھوں میں نظر آتی ہے بچی کی غریبی
ڈرتی ہے کہ تنہائی نہ بڑھ جائے پدر کی
آ آ کے ہمیں تکتی ہے حسرت سے سکینہ
ہم کیسے چلے جائیں۔۔۔
عاشور کی شب کرتے ۔۔۔

جس روز سے آباد کیا تم نے یہ جنگل
اک بی بی یہاںروتی ہے راتوں کو مسلسل
لگتا ہے لحد چھوڑ کے خود آئی ہے زہرا
ہم کیسے چلے جائیں۔۔۔
عاشور کی شب کرتے ۔۔۔

کیا عالمِ غربت نبی زادی پہ پڑا ہے
کہنے کی نہیں بات مگر ہم نے سنا ہے
ہے آپ کی زینب کو بہت ہم پہ بھروسہ
ہم کیسے چلے جائیں۔۔۔
عاشور کی شب کرتے ۔۔۔

سینا علی اکبر کا بہت چوم رہے ہو
جو تم پہ گزرتی ہے وہ معلوم ہے ہم کو
ہم لوگ بھی تو صاحبِ اولاد ہیں آقا
ہم کیسے چلے جائیں۔۔۔
عاشور کی شب کرتے ۔۔۔

اکبر جو دیئے خیمے میں غازی نے جلائے
تھا ایسا سمائ شہ کے بھی آنسو نکل آئے
تلوار گلے پر رکھے ہر شخص تھا کہتا
ہم کیسے چلے جائیں۔۔۔
عاشور کی شب کرتے