Shab e Ashoor tha Kulsoom ke lab par noha
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Shabe ashoor qaimaye kulsoom se aati thi sada
Haye haye haye mai bhi zainab ki tarha
Bhai ka deti sadqa kaash mera koi beta hota

Shabe ashoor tha Kulsoom ke lab par noha

saath pardes may bhai ka barabar deti
sheh ke baysheer pe qurbaan usay kar deti
dil may hasrat hi rahi aun o mohamed jaisa
kaash mera koi beta hota
shabe ashoor tha kulsoom....

daagh bete ki judai ka utha leti behen
apne bhai ki nishani ko bacha leti behen
sheh ke akbar ki jagah seene pe khata naiza
kaash mera koi beta hota
shabe ashoor tha kulsoom....

haath ho jaate qalam ran may mere bete ke
saare khoon apna baha deta wo pani ke liye
leke ghazi se reza usko banaati saqqa
kaash mera koi beta hota
shabe ashoor tha kulsoom....

saath shabbir ke jis tarha hai ghazi ki wafa
wo bhi aaqa ko kabhi apne na zehmat deta
saath sajjad ka har mod pe deta wo sada
kaash mera koi beta hota
shabe ashoor tha kulsoom....

kehti shabbir se zehmat na uthao bhai
ghar may sadaat ke sadqe ko na lao bhai
uska qhaimo my kabhi aane na deti laasha
kaash mera koi beta hota
shabe ashoor tha kulsoom....

jab sunay bain ye takallum to ye ghazi ne kaha
kal ye abbas fida teri taraf se hoga
tujhko baba ki qasam ab nahi dena ye sada
kaash mera koi beta hota
shabe ashoor tha kulsoom

شبِ عاشور خیمئہ کلثوم سے آتی تھی صدا
ہائے ہائے ہائے میں بھی زینب کی طرح
بھائی کا دیتی صدقہ کاش میرا کوئی بیٹا ہوتا

شبِ عاشور تھا کلثوم کے لب پر نوحہ

ساتھ پردیس میں بھائی کا برابر دیتی
شہہ کے بے شیر پہ قربان اُسے کر دیتی
دل میں حسرت ہی رہی عون ومحمد جیسا
کاش میرا کوئی بیٹا ہوتا
شبِ عاشور تھا کلثوم۔۔۔

داغ بیٹے کی جُدائی کا اُٹھا لیتی بہن
اپنے بھائی کی نشانی کو بچا لیتی بہن
شہہ کے اکبر کی جگہ سینے پہ کھاتا نیزہ
کاش میرا کوئی بیٹا ہوتا
شبِ عاشور تھا کلثوم۔۔۔

ہاتھ ہو جاتے قلم رَن میں میرے بیٹے کے
سرِ خوں اپنا بہا دیتا وہ پانی کے لیے
لے کے غازی سے رضا اُس کو بناتی سقہ
کاش میرا کوئی بیٹا ہوتا
شبِ عاشور تھا کلثوم۔۔۔

ساتھ شبیر کے جس طرح ہے غازی کی وفا
وہ بھی آقا کو کبھی اپنے نہ زحمت دیتا
ساتھ سجاد کا ہر موڑ پہ دیتاوہ صدا
کاش میرا کوئی بیٹا ہوتا
شبِ عاشور تھا کلثوم۔۔۔

کہتی شبیر سے زحمت نہ اُٹھائو بھائی
گھر میں سادات کے صدقے کو نہ لائو بھائی
اُس کا خیموں میں کبھی آنے نہ دیتی لاشہ
کاش میرا کوئی بیٹا ہوتا
شبِ عاشور تھا کلثوم۔۔۔

جب سُنے بین یہ تکلم تو یہ غازی نے کہا
کل یہ عباس فدا تیری طرف سے ہو گا
تجھ کو بابا کی قسم اب نہیں دینا یہ صدا
کاش میرا کوئی بیٹا ہوتا
شبِ عاشور تھا کلثوم۔