Khoo se rangeen hui Karb o bala
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

وعدہ تفلی کا نبھانے کو چلے
امّتِ جد کو بچانے کو چلے
پیاس خنجر کی بجھانے کو چلے
ہو گا کچھ دیر میں سَر تن سے جدا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

نور آنکھوں کا جو تھا روٹھ گیا
سہرا قاسمؑ کا تیرے ٹوٹ گیا
تیرا عباسؑ تجھ سے چھوٹ گیا
تیر ششماہے مجاہد پہ چلا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

بعدِ شبیرؑ یہ کہتا تھا لعیں
گھر والو کرنا ہے آرام نہیں
جنگ میں فوجی بھی رکتے ہیں کہیں
لُوٹو سادات کو اور چھینو ردا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

پھٹتا تھا سینہ جو کہتی تھی بہن
اے غریب الوطن اے تشنہ دھن
قید میں جاتی ہوں بندھوا كے رسن
آؤں گی کرنے اب چہلم میں تیرا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

ایک رسی میں بندھے بارہ گلے
ہائے یہ ظلم اور نازوں كے پلے
کِس سے شکوہ کرے نصیب جلی
کوئی پردیس میں اپنا نہ رہا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

آگ خیموں میں لگی کنبہ لُٹا
کرتا نادان سكینہؑ کا جلا
جھولا ششماہے کا باقی نہ رہا
آگے تقدیر میں کیا کیا ہے لکھا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

کیسے بہلائے سكینہؑ کو بہن
رااات دن روتی ہے اسیرِ مہن
لاش اُس نے بھی تو دیکھی بے کفن
اور تیرے دفن کا ساماں نہ ہوا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

اپنوں میں آج کوئی بات نہیں
اکبرؑ و قاسمؑ و عباسؑ نہیں
مجھ کو اب بھوک نہیں پیاس نہیں
تو ہے بے گور و کفن میں بے ردا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

دیکھوں کن آنکھوں سے منظر یہ اخی
سر تیرا طشت میں ہے اور شقی
مــارتا ہے لب و دنداں پر چھڑی
کاش آ جاتی مجھے پہلے قضا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

ماؤن کی گود میں بچے نہ رہے
پشت سے اونٹوں کی گر گر كے مرے
ہم جو روئے تو عدو خوب ہنسے
مردہ بچوں کو اُٹھانے نہ دیا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

روتے ہیں جن و ملك اور بشر
آنکھیں ہر ایک کی اشکوں سے ہیں تر
سُن كے ہر ایک کا پھٹتا ہے جگر
نوحہ نوشاد نے کچھ ایسا لکھا ، کربلا آج بھی ہے
خوں سے رنگین ہوئی کرب و بلا
کربلا آج بھی ہے کرب و بلا

Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Wada tifli ka nibhanay ko chalay
Ummat e jad ko bachanay ko chalay
Pyas khanjar ki bujhanay ko chalay
Ho ga kuch dair may sar tan se juda
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Noor ankhon ka jo tha rooth gaya
Sehra Qasim ka teray toot gaya
Tera Abbas tujh se choot gaya
Teer shishmah e Mujahid pe chala
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Baad e Shabbir ye kehta tha laeen
Ghar walo karna hay aaram nahi
Jang may foji bhi taktay hain kaheen
Looto sadaat ko aur cheeno rida
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Phatta tha seena jo kehti thi behen
Aey ghareebul watan aey tashna dehan
Qaid may jaati hoon bandhwa ke rasan
Aaon gi karnay ab chehlum may tera
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Aik rassi may bandhay bara galay
Haey ye zulam aur nazaon ke palay
Kis se shikwa karay naseeb jali
Koi pardes may apna na raha
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Aag khaimo me lagi kunba luta
Kurta nadan Sakina ka jala
Jhoola shashmahay ka baqi na raha
Aagay taqdeer may kia kia hay likha
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Kaise behlaye Sakina ko behan
Raat din roti hay aseer e mehan
Lash us ne bhi to dekhi be kafan
Aur teray dafan ka saman na hua
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Khaimo may aaj koi baat nahi
Akbar o Qasim o Abbas nahi
Mujh ko ab bhook nahi pyas nahi
Tu hay be gor o kafan may berida
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Dekhon kin anhkon se manzar ye akhi
Sar tera tasht may hay aur shaqi
Marta hay lab o dandon par charri
Kash aa jati mujhe pehlay qaza
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Maoon ki goad may bachay na rahay
Pusht se oonton ki gir gir ke maray
Ham jo roey to adoo khoob hansay
Murda bachon ko uthanay na dia
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala

Rotay hain jinn o malak aur bashar
Ankhain har ik ki hain ashkon se tar
Sun ke har aik ka phatta hay jigar
Noha Noshad ne kuch aisa likha
Khoo se rangeen hui Karb o bala
Karbala aaj bhi hay karb o bala