Aey Sheh ke alamdar
Efforts: Syed-Rizwan Rizvi

Aey Sheh ke alamdar, ay sheh ke alamdar alamdar
Aey zay ghame hyder, ay hyderi talwar alamdar

roti hai behan teri aa dekh mere ghazi
hai dard bhara manzar chaadar bhi nahi sar par
hai majmae kuffaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

ye khoon bhara parcham karta hai tera matam
qaimo se dhuwa utha ay bhai mere aaja
faujo ki hai yalghaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

faryaad meri sunlo darya se chale aao
tum de chuke qurbani dar kaari nahi paani
jeena huwa dushwaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

tum baazue sarwar thay shabbir ka lashkar thay
zainab ka bharosa thay bachon ka sahara thay
hoti hoo dilafgaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

amma ka chaman ujda pardes may ay bhaiya
mai dasht may tanha hai char taraf aada
marjaaye na bemaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

masoom sakina hai garmi ka mahina hai
do boondh nahi pani hone ko hai zindani
mehshar ke hai aashaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

jhoole may nahi asghar lori de kise maadar
darwaza-e-qaima par kehti hai wo ro ro kar
mai kisko karoo pyar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

bachon ko hoo mai royi keh sakta nahi koi
wo bhaai ka sadkha thay bas isliye zinda thay
kya unse saropaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

jaati hoo sare zindaan ay bhaai sare uriyan
bazu hai rasan basta purkhaar bahot rasta
nazron may hai darbaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

akbar ne sina khaayi mujko na ajal aayi
seena hua do-paara naizo se usay maara
mai uski hoo ghamkhaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

mai laut ke aaungi markhad bhi banaungi
mai doongi kafan tujko mohlat de agar mujko
ay mere wafadaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar....

rehaan kalam roya jab lik chuka ye nowha
majlis may hua matam jab aaya tera parcham
rote thay azadaar, ei sheh ke alamdar alamdar
ay sheh ke alamdar

اے شِہہؑ کے علمدارؑ، اے شِہہؑ کے علمدارؑ، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے ضیغمِ حیدرؑ، اے ضیغمِ حیدرؑ، اے حیدری تلوار علمدارؑ

روتی ہے بہن تیری آ دیکھ میرے غازیؑ
ہے درد بھرا منظر چادر بھی نہیں سر پر
ہے مجمعِ کفار، ہے مجمعِ کفار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

یہ خون بھرا پرچم کرتا ہے تیرا ماتم
خیموں سے دھواں اُٹھا اے بھائی میرے آ جا
فوجوں کی ہے یلغار، فوجوں کی ہے یلغار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

فریاد میری سُن لو دریا سے چلے آؤ
تم دے چُکے قربانی درکار نہیں پانی
جینا ہوا دُشوار، جینا ہوا دُشوار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

تم بازوئے سرورؑ تھے شبیرؑ کا لشکر تھے
زینبؑ کا بھروسا تھے بچوں کا سہارا تھے
ہوتی ہوں دل افگار، ہوتی ہوں دل افگار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

اماں کا چمن اُجڑا پردیس میں اے بھیا
ہم دشت میں تنہا ہیں چاروں طرف اعدا ہیں
مر جائے نہ بیمار، مر جائے نہ بیمار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

معصوم سکینہؑ ہے گرمی کا مہینہ ہے
دو بوند نہیں پانی ہونے کو ہے زندانی
محشر کے ہیں آثار، محشر کے ہیں آثار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

جھولے میں نہیں اصغرؑ لوری دے کسے مادر
دروازہءِ خیمہ پر کہتی ہے وہ رو رو کر
میں کس کو کروں پیار، میں کس کو کروں پیار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

بچوں کو ہوں میں روئی کہہ سکتا نہیں کوئی
وہ بھائی کا صدقہ تھے بس اِس لیے زندہ تھے
کیا اُن سے سروکار، کیا اُن سے سروکار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

جاتی ہوں سرِ زنداں اے بھائی سرِ عُریاں
بازو ہیں رسن بستہ پُرخار بہت رستہ
نظروں میں ہے دربار، نظروں میں ہے دربار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

اکبرؑ نے سناں کھائی مجھ کو نہ اجل آئی
سینہ ہوا دو پارہ نیزوں سے اُسے مارا
میں اُس کی ہوں غمخوار، میں اُس کی ہوں غمخوار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

میں لوٹ کے آؤں گی مرقد بھی بناؤں گی
میں دوں گی کفن تجھ کو مہلت دے اگر مجھ کو
اے میرے وفادار، اے میرے وفادار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔

ریحان قلم رویا جب لکھ چُکا یہ نوحہ
مجلس میں ہوا ماتم جب آیا تیرا پرچم
روتے تھے عزادار، روتے تھے عزادار، اے شِہہؑ کے علمدارؑ علمدارؑ
اے شِہہؑ کے علمدارؑ۔۔۔۔۔